Thursday , December 14 2017
Home / سیاسیات / مودی کی خود نمائی اور فریبی نعروں سے بی جے پی کو عبوری اقتدار نصیب

مودی کی خود نمائی اور فریبی نعروں سے بی جے پی کو عبوری اقتدار نصیب

آئندہ حکومت کانگریس کی ہوگی۔ پارٹی لیڈر اے کے انتونی کا دعویٰ

تروننتھا پورم ۔/27اکٹوبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) کیرالا کے سابق چیف منسٹر اے کے انتونی نے آج کہا ہے کہ نریندر مودی (وزیر اعظم ) کی شخصیت پرستی اور مارکٹنگ تکنیک ( حربے ) کی بدولت این ڈی اے کی زیر قیادت مرکزی حکومت عبوری نوعیت کی ہے اور یہ ادعا کیا کہ آئندہ حکومت کانگریس کی ہوگی۔بی جے پی اور بحیثیت وزیر اعظم نریندر مودی کے عروج پر انہوں نے کہا کہ گزشتہ لوک سبھا انتخابات میں شمال سے ایک سورج طلوع نہیں ہوا بلکہ ایک دُمدار ستارہ نمودار ہوا ہے جس کا ظہور کبھی کبھی ہوتا ہے۔ یہ اعتماد ظاہر کرتے ہوئے کہ سونیا گاندھی اور راہول گاندھی کی زیر قیادت کانگریس دوبارہ برسر اقتدار آجائے گی ۔

سابق وزیر دفاع نے کہا کہ مرکز میں برسر اقتدار بی جے پی حکومت عارضی اور عبوری نوعیت کی ہے جو کہ نریندر مودی کی شخصیت پرستی اور پُر فریب نعروں کی مرہون منت ہے۔ بی جے پی کی زیر قیادت این ڈی اے حکومت کی فرقہ پرست پالیسیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے مسٹر انتونی نے کہا کہ حکومت صرف بیانات جاری کررہی ہے لیکن بنیادی سطح پر ٹھوس اقدامات اور نہ ہی مذہبی تعصب اور منافرت پھیلانے کی مذمت کررہی ہے۔ انہوں نے حالیہ دادری میں ایک مسلم شخص کی ہلاکت اور  ہریانہ میں 2دلت بچوں کو زندہ جلادینے کے واقعات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ آر ایس ایس زیر کنٹرول بی جے پی کی حکمرانی میں تکثیریت اور سیکولرازم کے بنیادی ڈھانچہ کو خطرہ لاحق ہوگیا جس کے نتیجہ میں قوم پر خوف و دہشت کا سایہ منڈلا رہا ہے۔

کانگریس لیڈر نے کہا کہ این ڈی اے کے دور حکومت میں ترقیاتی اور تعمیراتی سرگرمیاں مفلوج ہوگئی ہیں اور میک اِن انڈیا پروگرام کو مضحکہ خیز قراردیتے ہوئے بتایاکہ دفاعی شعبہ میں کچھ بھی نہیں کیا گیا۔ کیرالا میں سی پی ایم کی زیر قیادت اپوزیشن ایل ڈی ایف کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انہوں نے یہ دعویٰ کیا کہ بی جے پی ۔ آر ایس ایس کے فرقہ پرست ایجنڈہ کا صرف کانگریس ہی مقابلہ کرسکتی ہے کیونکہ شمالی ہند میں سی پی ایم اور بائیں بازو کی جماعتیں طاقتور نہیں ہیں اور بی جے پی کی پیشقدمی کو روکنا ان کے بس کی بات نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پی ایم فرسودہ نعروں اور نظریات پر عمل پیرا ہے اور نوشتہ دیوار پڑھنے سے قاصر ہے۔واضح رہے کہ کیرالا میں باری باری سے کانگریس اور بائیں بازو کا اتحاد اقتدار میںآتے ہیں اور یہاں پر کانگریس کی اصل حریف جماعت سی پی ایم ہے لیکن اب بی جے پی بھی طاقتور بن کر ابھر رہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT