Saturday , January 20 2018
Home / سیاسیات / مودی کے مخالفین کیلئے ہندوستان میں جگہ نہیں‘ریمارک پر بی جے پی ناراض

مودی کے مخالفین کیلئے ہندوستان میں جگہ نہیں‘ریمارک پر بی جے پی ناراض

نئی دہلی۔20اپریل(سیاست ڈاٹ کام ) بی جے پی نے آج اپنے بہار کے لیڈر گری راج سنگھ کے ریمارک سے اظہار لاتعلقی کرتے ہوئے شدید ناراضگی ظاہر کی اور کہا کہ انہیں آئندہ اس طرح کے ریمارکس سے باز آجانا چاہیئے ۔ گری راج سنگھ نے کل کہا تھا کہ ’’ہندوستانی عوام نریندر مودی کی حمایت کریں یا پھر پاکستان چلے جائیں ‘‘ ۔بی جے پی کی اعلیٰ قیادت کی ’’ نا

نئی دہلی۔20اپریل(سیاست ڈاٹ کام ) بی جے پی نے آج اپنے بہار کے لیڈر گری راج سنگھ کے ریمارک سے اظہار لاتعلقی کرتے ہوئے شدید ناراضگی ظاہر کی اور کہا کہ انہیں آئندہ اس طرح کے ریمارکس سے باز آجانا چاہیئے ۔ گری راج سنگھ نے کل کہا تھا کہ ’’ہندوستانی عوام نریندر مودی کی حمایت کریں یا پھر پاکستان چلے جائیں ‘‘ ۔بی جے پی کی اعلیٰ قیادت کی ’’ ناراضگی و برہمی ‘‘ سے انہیں واقف کروایا گیا ہے ۔ انہوں نے جھارکھنڈ میں ایک جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ جو لوگ مودی کی مخالفت کررہے ہیں انہیں انتخابات کے بعد پاکستان جانا ہوگا ۔ اس بیان سے بی جے پی چراغ پا ہوگئی ‘ کیونکہ حریف پارٹیوں نے شدید تنقید کی ہے جن کا کہنا ہے کہ اس تبصرے کا مقصد مسلمانوں کو نشانہ بنانا تھا ۔ بی جے پی کی ترجمان نرملا سیتارامن نے کاہ کہ پارٹی کا گری راج سنگھ کے بیان سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔

بہار کے بی جے پی سینئر لیڈر سشیل کمار مودی نے اس بیان کو ’’ غیر ذمہ دارانہ‘‘ کہا اور کہا کہ ان کی پارٹی اس طرح کے بیانات کو ہرگز اجازت نہیں دیتی ۔ انہوں نے ٹوئیٹر پر بیان جاری کیا ہے اور کہا کہ بی جے پی نے گری راج سنگھ کے غیر ذمہ دارانہ بیان کا سخت نوٹ لیا ہے ۔ پارٹی ذرائع نے کاہ کہ گری راج سنگھ کو ان کے ریماک پر سرزنش کی گئی ہے ۔ اس طرح کے بیانات سے دیگر حریف پارٹیوں کو بی جے پی کے خلاف مہم چلانے کا بہانہ مل جائے گا جبکہ بی جے پی نے ترقیاتی ایجنڈہ کے ساتھ اپنی مہم کا آغاز کیا ہے ۔ بی جے پی پر شدید تنقید کرتے ہوئے کانگریس ترجمان ایم افضل نے حیرت کا اظہار کیا کہ آیا غیر این ڈی اے قائدین جیسے لالو پرساد ‘نتیش کمار ‘ ملائم سنگھ یادو اور مایاوتی کو پاکستان جانا ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ اقلیتی کمیشن کو اس بیان کا سخت نوٹ لینا چاہیئے ۔ گری راج سنگھ کی شرانگیزی ناقابل برداشت ہے ‘ انہیں جیل میں ڈال دیا جانا چاہیئے ۔ کانگریس لیگل سیل کے رکن کے سی میتل نے کہا کہ گری راج سنگھ عوام کو مشتعل کررہے ہیں اور قوم میں پھوڈ ڈالنے کی بنیاد ڈال رہے ہیں ۔

یہ ایک سنگین مسئلہ ہے ۔ انہوں نے جس طرح کی زبان استعمال کی ہے وہ خطرناک اور ملک کے ٹکڑے کرنے کی کوشش ہے ۔ گری راج سنگھ نے کہا تھا کہ جو لوگ نریندر مودی کی مخالفت کررہے ہیں انہیں پاکستان جانا چاہیئے اور اس طرح کے لوگوں کیلئے ہندوستان میں کوئی جگہ نہیں ہوگی بلکہ انہیں پاکستان میں ٹھکانہ تلاش کرنا ہوگا ۔ اس دوران این سی پی نے آج اس بیان کی شدید مذمت کی اور کہا کہ یہ بیان دستور کے مغائر ہے ۔ بہار کے بی جے پی لیڈر نے مودی کی حمایت نہیں انہوں نے انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے ۔ دستور کے خلاف دیئے گئیاس بات پر انہیں سزا دی جانی چاہیئے ۔ اس بیان سے ملک میں بدامنی پیدا ہوگی ۔ راجیہ سبھا رکن اور این سی پی کے سکریٹری مجید میمن نے کاہ ہ گری راج پر تعزیرات ہند کی دفعہ کے تحت فوجداری مقدمہ دائر کیا جائے ۔ اس طرح کا خطرناک بیان ناقابل قبول ہے ‘اس بیان کو ملک کے تمام سرکردہ اخبارات نے اپنی اہم خبر بنائی ہے۔

TOPPOPULARRECENT