Saturday , April 21 2018
Home / شہر کی خبریں / مولانا آزاد یونیورسٹی میں طلباء کا شدید احتجاج، کلاسیس کا بائیکاٹ

مولانا آزاد یونیورسٹی میں طلباء کا شدید احتجاج، کلاسیس کا بائیکاٹ

حیدرآباد۔/20 جنوری، ( سیاست نیوز) مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی میں فیس میں اضافہ کے خلاف طلباء نے احتجاج کا آغاز کرتے ہوئے کلاسیس کا بائیکاٹ کیا ہے۔ کالج کے احاطہ میں طلباء نے کالج انتظامیہ کے فیصلہ کے خلاف زبردست مظاہرہ کیا اور اعلان کیا کہ فیس میں اضافہ سے دستبرداری تک احتجاج جاری رہے گا۔300 سے زائد طلباء نے گچی باؤلی میں واقع یونیورسٹی کے کیمپس میں احتجاج منظم کرتے ہوئے تمام کورسیس کی فیس میں اضافہ کی مخالفت کی۔ بتایا جاتا ہے کہ یونیورسٹی نے ڈپلوما کے تمام کورسیس انڈر گریجویٹ، پوسٹ گریجویٹ اور ریسرچ کورسیس کی فیس میں اضافہ کردیا ہے۔ طلباء کا کہنا ہے کہ یونیورسٹی کا یہ فیصلہ جانبدارانہ اور مخالف طلباء ہے۔ اسی دوران یونیورسٹی کی اسٹوڈنٹ یونین نے احتجاج میں شدت پیدا کرتے ہوئے 12 طلباء کے بھوک ہڑتال کے آغاز کا اعلان کیا۔ انتظامیہ نے مطالبہ کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا جس کے بعد یہ فیصلہ کیا گیا۔ طلباء یونین کے صدر عطاء اللہ نیازی نے کہا کہ بھوک ہڑتال کے علاوہ کلاسیس کا بائیکاٹ اس وقت تک جاری رہے گا جب تک کہ اڈمنسٹریشن اضافی فیس سے دستبرداری اختیار نہ کرلے۔ انہوں نے کہاکہ کئی طلباء معاشی طور پر پسماندہ بیاک گراؤنڈ کے حامل ہیں اور وہ اضافی فیس ادا کرنے کے متحمل نہیں ہوسکتے۔ فیس میں اضافہ سے ایسے طلباء پر بوجھ پڑے گا۔ خاص طور پر طالبات کیلئے یہ فیصلہ معاشی بوجھ بن سکتا ہے۔ طالبات کی کثیر تعداد نے احتجاج میں شرکت کی۔ طلباء نے شکایت کی کہ انتظامیہ نے احتجاج کی خبروں کو پھیلنے سے روکنے کیلئے برقی سربراہی اور وائی فائی کنکشن منقطع کردیا ہے۔ طلباء نے کہا کہ یونیورسٹی کو جان لینا چاہیئے کہ طلباء کی آواز یونیورسٹی حکام کی توقع سے زیادہ تیز اور مضبوط ہے اور وہ اپنا احتجاج جاری رکھیں گے۔

TOPPOPULARRECENT