Saturday , December 15 2018

مکہ مسجد دھماکہ کیس کی اہم دستاویز غائب

حیدرآباد ۔ /13 مارچ (سیاست نیوز) مکہ مسجد بم دھماکے کیس کی سماعت کے دوران آج این آئی اے کی خصوصی عدالت میں اُس وقت الجھن پیدا ہوگئی جب کیس کی تحقیقات سے متعلق اہم دستاویزات لاپتہ پائے گئے۔ اس کیس کے تحقیقاتی عہدیدار ٹی راجا بالاجی نے حاضر عدالت ہوکر اپنا بیان قلمبند کروانا شروع کیا اور شواہد کے طور پر کیس کے کلیدی ملزم سوامی اسیمانند کے انکشافات کا ایک دستاویز عدالت میں پیش کرنا چاہا لیکن دستاویز غائب ہونے کا علم ہوا۔ اس کیس کی سماعت میں سی بی آئی کے سپرنٹنڈٹ پولیس راجابالاجی نے دستاویزات کے بغیر اپنی مزید گواہی ریکارڈ نہ کروانے کے موقف پر ڈٹے رہنے کے نتیجہ میں جج نے عدالت کی تحقیقات کو دو گھنٹے کیلئے روک دیا ۔ ذرائع نے بتایا کہ جج نے اجلاس پر دستاویزات بروقت پیش نہ کرنے پر برہمی ظاہر کی اور عدالت کے ملازمین نے کچھ وقفہ کے بعد بعض دستاویزات عدالت میں پیش کئے ۔ ذرائع نے بتایا کہ ایک اہم دستاویز کو جسے تحقیقاتی عہدیداروں نے سوامی اسیمانند کی نشاندہی پر گجرات سے برآمد کیا تھا، اچانک غائب ہوگیا۔ یہ دستاویز انتہائی اہمیت کی حامل ہے اور اس کی بنیاد پر سوامی اسیمانند کو سزا بھی ہوسکتی ہے۔ سی بی آئی کے تحقیقاتی عہدیدار نے اپنا بیان قلمبند کروایا جس پر وکلائے دفاع نے جرح کا آغاز کیا ۔ تحقیقاتی عہدیدار نے عدالت کو مزید بتایا کہ مکہ مسجد بم دھماکے کے بعد موقع واردات سے برآمد کئے گئے موبائیل فون اور سم کارڈ انتہائی اہمیت کے حامل ہیں اور اس کی بنیاد پر ہی ملزمین کی نشاندہی کی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ تحقیقات کے دوران 60 سے زائد گواہوں کے بیانات قلمبند کئے تھے لیکن 54 گواہ اپنے بیان سے منحرف ہوچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT