Saturday , April 21 2018
Home / ہندوستان / مکہ مسجد مقدمہ کے فیصلہ سے کانگریس کی خوشامد بے نقاب

مکہ مسجد مقدمہ کے فیصلہ سے کانگریس کی خوشامد بے نقاب

بی جے پی کا الزام ’’بھگوا دہشت گردی ‘‘ لفظ استعمال کرنے کی راہول گاندھی کی تردید

نئی دہلی ۔ 16 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی نے آج کانگریس پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ مکہ مسجد مقدمہ کے فیصلہ سے کانگریس کی اقلیتوں کی خوشامد کی پالیسی بے نقاب ہوگئی ہے۔ فیصلہ میں 2007ء کے مکہ مسجد دھماکہ مقدمہ کے دائیں بازو کے انتہاء پسند کارکنوں سوامی اسیمانند اور دیگر چار کو اپوزیشن پارٹی کی خوشامد کی پالیسی کا شکار قرار دیتے ہوئے باعزت بری کردیا۔ بی جے پی نے کہا کہ کانگریس ہندوؤں کو بدنام کرنے کی کوشش کررہی ہے اور اس کا عسکریت دشمن سہرا اس مقدمہ کے فیصلہ سے بے نقاب ہوگیا ہے۔ بی جے پی کے ترجمان سمبت پترا نے کانگریس پر الزام عائد کیا کہ وہ ووٹوں کی خاطر ہندوؤں کو بدنام کرنے کی کوشش کررہی ہے اور مطالبہ کیا کہ صدر پارٹی راہول گاندھی اور ان کی پیشرو سونیا گاندھی کو کھلے الفاظ میں ’’بھگوا دہشت گردی اور ہندو دہشت گردی‘‘ جیسے الفاظ استعمال کرنے پر پوری قوم سے معذرت خواہی کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کانگریس کو کرناٹک اسمبلی انتخابات میں اس کی پالیسی کا مزا چکھائیں گے۔ کانگریس قائدین نے بی جے پی حکومت پر جوابی وار کرتے ہوئے کہا کہ ملزمین کی باعزت برأت بی جے پی حکومت کی ایماء پر ہوئی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی دوہرے معیار استعمال کررہی ہے کیونکہ اس نے 2G اسکام مقدمہ کے ملزمین کی تائید میں عدالت کے فیصلہ کا خیرمقدم کیا تھا۔ پترا نے کانگریس قائدین کے کئی تبصروں کا حوالہ دیا۔ انہوں نے ایک امریکی سفارتی کیبل میں کہا گیا ہیکہ صدر کانگریس راہول گاندھی نے کہا تھا کہ بنیاد پرستی ملک کیلئے ایک اعلیٰ تر طبقہ ہے۔ سابق وزرائے داخلہ پی چدمبرم، شیوراج پاٹل اور سشیل کمار شنڈے ’’بھگوا دہشت گردی اور ہندو دہشت گردی‘‘ کے بارے میں کہہ چکے ہیں۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ چیف منسٹر کرناٹک سدارامیا بھی خوشامد کی سیاست پر عمل پیرا ہیں۔ بی جے پی بعض پارٹیوں کی مسلم حامی پالیسیوں سے متفق نہیں ہیں۔ پترا نے سدارامیا پر الزام عائد کیا کہ وہ مسلم تنظیموں پاپولر فرنٹ آف انڈیا کے ساتھ دوستی میں اضافہ کررہے ہیں جبکہ اس تنظیم کے خلاف قومی تحقیقاتی ادارہ (این آئی اے) تحقیقات میں مصروف ہیں۔ دریں اثناء صدرکانگریس راہول گاندھی نے اپنے بیان میں کہا کہ ’’بھگوا دہشت گردی‘‘ جیسی کوئی چیز موجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کا یہ پختہ یقین ہیکہ دہشت گردی کو کسی بھی مذہب یا برادری سے مربوط نہیں کیا جاسکتا۔ کانگریس نے اس بات کو واضح کردیا کہ نہ تو راہول گاندھی اور نہ کانگریس نے کبھی بھی اس فقرے کا استعمال نہیں کیا تھا۔ پارٹی کا ردعمل بی جے پی کی جانب سے کانگریس پر تنقید کے بعد منظرعام پر آیا جبکہ مکہ مسجد دھماکہ مقدمہ میں انتہاء پسند دائیں بازو کے کارکن اسیمانند اور دیگر چار افراد کو باعزت بری کردیا گیا اور بی جے پی نے الزام عائد کیا کہ کانگریس ہندوؤں کو ’’بھگوا دہشت گردی‘‘ کی اصطلاح استعمال کرتے ہوئے بدنام کررہی ہے۔ بی جے پی نے صدر کانگریس راہول گاندھی اور ان کی پیشرو سونیا گاندھی سے پوری قوم سے معذرت خواہی کا مطالبہ کیا۔ راہول گاندھی نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے کبھی بھی بھگوا دہشت گردی کے الفاظ استعمال نہیں کئے۔ وہ بی جے پی کے الزامات کے بارے میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ یہ بیہودہ بکواس ہے ۔ بھگوا دہشت گردی جیسی کسی چیز کا وجود نہیں ہے۔ یہ ہمارا پختہ عقیدہ ہیکہ دہشت گردی کسی مذہب یا برادری سے تعلق نہیں رکھتی۔

TOPPOPULARRECENT