Friday , November 17 2017
Home / شہر کی خبریں / مکہ مسجد کی چھت کی مرمت اندرون دس ماہ مکمل کرنے کی خواہش

مکہ مسجد کی چھت کی مرمت اندرون دس ماہ مکمل کرنے کی خواہش

صدر نشین وقف بورڈ محمد سلیم کی آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا کے عہدیداروں کو ہدایت
حیدرآباد۔24 اگست (سیاست نیوز) صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم نے آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا کے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ تاریخی مکہ مسجد کی چھت کی مرمت کے کام کی 10 ماہ میں جنگی خطوط پر تکمیل کردی جائے اور رمضان المبارک سے قبل پہلے مرحلہ کا کام مکمل ہوجانا چاہئے۔ محمد سلیم نے کہا کہ تاریخی مکہ مسجد کے تحفظ کے لیے فنڈس کی کوئی کمی نہیں ہے۔ محمد سلیم نے آج مختلف محکمہ جات کے عہدیداروں کے ساتھ تاریخی مکہ مسجد کا دورہ کیا اور تعمیری و مرمتی کاموں کے بارے میں معلومات حاصل کیں۔ انہوں نے نماز ظہر مکہ مسجد میں ادا کی جس کے بعد مسجد کی چھت سے پانی کے اخراج کا جائزہ لیا اور اس کی وجوہات کے بارے میں معلومات حاصل کی۔ عہدیداروں نے بتایا کہ چھت سے بارش کا پانی دیواروں میں اتر رہا ہے جس کے نتیجہ میں چھت متاثر ہوئی ہے۔ چھت کے اس حصہ میں مصلیوں کو نماز سے منع کیا گیا۔ محمد سلیم نے کہا کہ ابتدائی مرحلہ میں یہ کام شروع کیا جانا چاہئے تھا اب جبکہ حکومت نے 8 کروڑ 40 لاکھ روپئے منظور کئے ہیں لہٰذا عہدیداروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ جنگی خطوط پر اس کام کی تکمیل کریں۔ انہوں نے آصف جاہی خاندان کی قبروں پر مشتمل مقبرے کا دورہ کیا اور اس کی مخدوش چھت کو دیکھا جو بارش کے بعد انتہائی کمزور ہوچکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے مرحلہ میں مسجد کی چھت کے کام پر توجہ دی جائے جبکہ دوسرے مرحلہ میں مقبرے کی چھت کا کام انجام دیا جائے گا۔ صدرنشین وقف بورڈ کے دورے کے موقع پر ڈپٹی ڈائرکٹر آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا ڈی نارائنا، چیف ایگزیکٹیو آفیسر وقف بورڈ ایم اے منان فاروقی، سپرنٹنڈینٹ مکہ مسجد عبدالقدیر صدیقی کے علاوہ مقامی عوامی نمائندے ، پولیس عہدیدار اور تعمیری کام انجام دینے والے کنٹراکٹر کے نمائندے موجود تھے۔ سرپرنٹنڈنٹ مکہ مسجد نے تفصیلات سے واقف کرایا اور کہا کہ مرمتی کاموں کے آغاز کے سلسلہ میں حکمت عملی تیار کی جارہی ہے جس کے تحت انجینئرس اور ملازمین کو مسجد کے احاطہ میں جگہ فراہم کی جائے گی اس کے علاوہ نماز کے اوقات میں کام کے سبب کوئی خلل نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ تعمیری مٹیریل کی اندرونی حصہ میں سربراہی کے لیے مسجد کے قدیم راستے کی کشادگی زیر غور ہے۔ مرمت کے کام کے لیے گچی اور چونا مسجد کے احاطہ میں تیار کیا جائے گا۔ بعد میں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم نے کہا کہ اگرچہ 18 ماہ کا کنٹراکٹ دیا گیا ہے، لیکن وہ چاہتے ہیں کہ آئندہ رمضان سے قبل مرمت کا کام مکمل کرلیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ مسجد کا مکمل احترام ہونا چاہئے۔ نہ صرف ہندوستان بلکہ دنیا کے مختلف حصوں سے سیاح اور اہم شخصیتیں مکہ مسجد کے مشاہدے کے لیے پہنچتے ہیں۔ حکومت نے مسجد کے لیے 8 کروڑ کی جو رقم مختص کی ہے اس میں سے ایک کروڑ روپئے جاری کئے جاچکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چھت کی مرمت کا کام کچھ اس طرح انجام دیا جائے کہ آئندہ کئی برسوں تک دوبارہ مرمت کی ضرورت پیش نہ آئے۔ مکہ مسجد سے وقف بورڈ کے تعلق کے بارے میں پوچھے جانے پر صدرنشین وقف بورڈ نے کہا کہ جہاں مسجد، درگاہ اور قبرستان ہوں گے اس میں وقف بورڈ کی مداخلت ضروری ہے۔ انہوں نے مسجد کے ملازمین کی تنخواہوں کی بروقت ادائیگی کے سلسلہ میں چیف منسٹر کے دفتر سے فون پر نمائندگی کی۔ انہوں نے مسجد کے احاطہ میں امام اور موذن کے لیے کمرہ فراہم کرنے کی ہدایت دی۔ محمد سلیم اور دورے میں شامل دیگر افراد نے مقبرہ نواب میر محبوب علی خان کی مزار پر فاتحہ خوانی کی۔ امام مکہ مسجد محمد عثمان نے فاتحہ پڑھی۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT