Monday , December 18 2017
Home / ہندوستان / مہاراشٹرا میں قاتل ڈاکٹر گرفتار 5افراد کے قتل کے بعد جرم کا انکشاف

مہاراشٹرا میں قاتل ڈاکٹر گرفتار 5افراد کے قتل کے بعد جرم کا انکشاف

پونے۔/16اگسٹ، ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک حیرتناک واقعہ میں مہاراشٹرا کے ضلع ستارا سے وابستہ 42سالہ ڈاکٹر جسے گذشتہ برس ایک آنگن واڑی ورکر کے قتل کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا تھا یہ اقبال جرم کیا ہے کہ سال 2003 اور 2016کے دوران مزید 5افراد بشمول 4خواتین کو ہلاک کردیا تھا اوراپنے فارم ہاوز میں دفن کردیا تھا۔ایک 47سالہ آنگن واڑی ورکر منگلا جیڈے قتل کیس میں گرفتار ڈاکٹر سنتوش پل نے پوچھ تاچھ کے دوران تقریباً 5افراد کو موت کے گھاٹ اُتار دینے کا انکشاف کیا ہے جس کے بعد پولیس نے کل شب اس کے فارم ہاوز سے 4نعشوں بشمول جیڈے کی نعش کو کھود کر باہر نکالا، پولیس سپرنٹنڈنٹ ضلع ستارا مسٹر سندیپ پاٹل نے یہ اطلاع دی۔ سنتوش پل کو موت کا ڈاکٹر ( ڈاکٹر ڈیتھ ) بھی کہا جاتا ہے انہیں صدر مہاراشٹرا پرواپارتھائیک شکشا سیویکا سنگھ منگلا جیڈے کے اغوا اور قتل کے الزام میں 11اگسٹ کو گرفتار کیا اور  19اگسٹ تک پولیس تحویل میں دے دیا گیا۔5 خواتین اور ایک مرد کے قتل کے پس پردہ محرکات پر پولیس سپرنٹنڈنٹ نے کہاکہ ناجائز تعلقات اور زیورات اور رقم کے لالچ کی خاطر پل نے یہ گھناؤنا جرم کیا ہوگا۔ پولیس کے مطابق پل (Pol) اور اس کی مددگار جیوتی مندرے جو کہ ایک نرس ہے اور ملزم کے ساتھ ناجائزتعلقات میں جیڈے کا اغوا کرنے کے بعد زہریلا انجکشن دے کر ہلاک کردیا اور پل کے فارم ہاوز میں نعش کو دفن کردیا تھا جیڈے کی گمشدگی کے کیس کی تحقیقات کے دوران پولیس کو پتہ چلا کہ وہ آخری مرتبہ ڈاکٹر پل کے ساتھ دیکھی گئی تھی جس نے ڈاکٹر کی مجرمانہ سرگرمیوں کو بے نقاب کرنے کی دھمکی دی تھی۔ پولیس نے مفرور ڈآکٹر کو بالآخر 11اگسٹ کے دن پکڑ لیا اور پوچھ تاچھ کے دوران مزید 5افراد کے قتل کا اعتراف کیا ہے جس میں سلمہ شیخ، جگا بائی پل، سریکھا چکانے، وونیتا گائیکواڈ اور نتھو مل بھنڈاری شامل ہیں۔ ملزم کی شناخت پر 5نعشیں کھود کر باہر نکالی گئی ہیں جبکہ گائیکواڈ کی نعش بازیاب نہیں ہوسکی اسے قتل کے بعد ایک تالاب میں پھینک دیا گیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT