Thursday , November 23 2017
Home / ہندوستان / مہاراشٹرا کا داخلی سلامتی قانون، جمہوریت کیلئے دھکہ : شیوسینا

مہاراشٹرا کا داخلی سلامتی قانون، جمہوریت کیلئے دھکہ : شیوسینا

ممبئی ۔ 26 اگست (سیاست ڈاٹ کام) شیوسینا نے آج کہا کہ حکومت مہاراشٹرا کا مجوزہ قانون برائے داخلی سلامتی، جمہوریت کیلئے ایک دھکہ ثابت ہوگا۔ اگر اس قانون کو روبہ عمل لایا گیا تھا۔ ریاست کو ایمرجنسی کے دور سے زیادہ نقصانات کاسامنا کرنا پڑے گا کیونکہ یہ قانون ایمرجنسی کی یاد دلائے گا۔ شیوسینا نے اپنے اخبار ترجمان ’’سامنا‘‘ میں مہاراشٹرا حکومت کے داخلی سلامتی قانون پر تنقید کرتے ہوئے اداریہ لکھا ہے۔ اس کا کہنا ہیکہ اگر حکومت نے داخلی سلامتی کے نام پر ریاست میں ایمرجنسی نافذ کرنے کی کوشش کی تو اس کی اس کوشش کی مخالفت کی جائے گی۔ یہ قانون 1975ء کی ایمرجنسی سے زیادہ تباہ کن ہے۔ ایمرجنسی کو اس وقت کی وزیراعظم اندرا گاندھی نے نافذ کیا تھا۔ آج جو لوگ اقتدار میں ہیں (بی جے پی) اس وقت کی حکومت کے خلاف مختلف الزامات عائد کئے تھے اگرچیکہ ان کی شکایات کو ثابت کرنے میں ناکامی ہوئی تھی اور حکمراں اتحاد سے کسی بھی عام آدمی کو کوئی بڑی مشکل درپیش نہیں تھی۔ شیوسینا نے الزام عائد کیا کہ اب کی فرنویس حکومت عوام کے بھروسہ کا گلہ گھونٹ کر ان سے غداری کرنے لگی ہے۔ مہاراشٹرا کے مجوزہ قانون تحفظ داخلی سلامتی قانون سراسر ریاست کیلئے تباہ کن ہوگا۔ یہ عوام کی آزادی کو کچلنے کی کوشش ہے۔ یہ قانونی جمہوریت کی دھجیاں اڑا دے گا۔ آخر ریاست میں اچانک ایسا کیا ہوا ہیکہ حکومت کو سخت داخلی قانون بنانے کی ضرورت پڑی ہے۔

TOPPOPULARRECENT