Wednesday , December 13 2017
Home / ہندوستان / میسور کے حکمران ٹیپو سلطان ، مذہبی تنگ نظری اور تعصب کا شکار

میسور کے حکمران ٹیپو سلطان ، مذہبی تنگ نظری اور تعصب کا شکار

اگر وہ ہندو ہوتے تو شیواجی کی طرح بلند مقام و مرتبہ پاتے۔ گریش کرناڈ کا تاثر
بنگلور۔/10نومبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) گیان پیتھ ایوارڈ یافتہ گریش کرناڈ نے آج کہا کہ 18ویں صدی کے حکمران میسور ٹیپو سلطان اگر مسلم کی بجائے ہندو ہوتے تو انہیں بھی مراہٹا کنگ چھترا پتی شیواجی کی طرح عظیم مرتبہ و مقام حاصل ہوتا تھا۔ ایک اور ریمارک میں جس پر تنازعہ اُٹھ سکتا ہے کرناڈ نے کہا کہ دیوان پلی کے قریب واقع بنگلور انٹرنیشنل ایر پورٹ کو کمپسے گوڑا کی بجائے ٹیپو سلطان کے نام سے موسوم کیا جائے۔ واضح رہے کہ کمپسے گوڈا سابق ریاست وجئے نگرم کے راجہ تھے جنہوں نے 1537 میں شہر بنگلور کی بنیاد رکھی تھی۔کنڑا زبان کے ممتاز پلے رائٹر و اداکار کا یہ ریمارک ایسے وقت آیا ہے جبکہ ریاستی حکومت نے سخت حفاظتی انتظامات میں ٹیپو سلطان کی یوم پیدائش تقریب منائی گئی جو کہ ریاستی سکریٹریٹ میں چیف منسٹر سدا رامیا کی زیر صدارت منعقد ہوئی تھی۔

ریاست بھر میں منعقدہ ان تقاریب کا اپوزیشن جماعت بی جے پی نے بائیکاٹ کیا اور کئی ایک ہندو تنظیموں نے احتجاجی مظاہرے کئے جن کا الزام ہے کہ سابق ریاست میسور کے حکمراں متعصب اور مخالف کنڈیگا تھے۔ ضلع کوڈاگو میں میڈیکری کے مقام پر آج پرتشدد احتجاج میں ایک شخص ہلاک ہوگیا۔ روشن خیال ادیب گریش کرناڈ نے کہا کہ میرا یہ تاثر ہے کہ اگر ٹیپو سلطان مسلمان کے بجائے ہندو ہوتے تو کرناٹک میں بلند و بالا مقام اور مرتبہ پاتے جس طرح مہاراشٹرا میں شیواجی مہاراج کو حاصل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیپو سلطان کو محض ان کے مذہب کی بنیاد پر اس مقام اور مرتبہ سے محروم کردیا گیا اور دور حاضر کا المیہ یہ ہے کہ اسکالرس اور سیاستداں اپنے مذہب اور ذات پات کو اولین ترجیح دے رہے ہیں۔

اس طرح کی تنگ نظری سے ٹیپو سلطان کے ساتھ شدید ناانصافی ہورہی ہے۔ ٹیپو سلطان کو مخالف کنڑا اور مخالف ہندو قرار دینے والوں پر تنقید کرتے ہوئے گریش کرناڈ نے کہا کہ آج ہم دیوالی تہوار  اوریوم ٹیپو سلطان منارہے ہیں۔ آج ہمیں یوم بہار ( اسمبلی انتخابات میں سیکولر جماعتوں کی کامیابی ) بھی منانا چاہیئے۔یوم بہار سے متعلق ان کا یہ ریمارک بظاہر بی جے پی کی طرف اشارہ ہے جہاں پر اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کا صفایا ہوگیا ہے۔ گریش کرناڈ ہمیشہ بی جے پی کے نظریاتی مخالف رہے ہیں، چیف منسٹر سدا رامیا نے بھی گریش کرناڈ کے نقطہ نظر کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میسور کے عوام کیلئے ٹیپو سلطان کی خدمات کو فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ اگروہ ہندو خاندان میں پیدا ہوتے تو کرناٹک اور ملک بھر میں وہی عزت و احترام پاتے جیسا کہ شیواجی کو حاصل ہے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ کسی بھی شخص کو اس کے مذہب یا ذات پات کے نقطہ نظر سے نہیں دیکھنا چاہیئے اور عوام کیلئے اس کی گرانقدر خدمات اور کارناموں کو پیش نظر رکھنا چاہیئے یہی وجہ ہے کہ آج ہم ( حکومت ) ٹیپو جینتی منارہے ہیں۔ گریش کرناڈ نے کہا کہ بنگلور و بین الاقوامی طیرانگاہ کو کمپسے گوڈا کی بجائے ٹیپو سلطان سے موسوم کیا جانا چاہیئے کیونکہ آخر الذکر مجاہد آزادی نہیں تھے۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ دیوان پلی ٹیپو سلطان کا جائے مقام تھا جس کے باعث ایرپورٹ کو ان کے نام سے موسوم کرنا ہر اعتبار سے مناسب رہے گا۔

TOPPOPULARRECENT