Thursday , November 23 2017
Home / شہر کی خبریں / میناریٹی ریزیڈنشیل اسکولس کا آج سے آغاز ناممکن

میناریٹی ریزیڈنشیل اسکولس کا آج سے آغاز ناممکن

انفراسٹرکچر ، پرنسپلس اور اساتذہ کے انتظامات نہیں ہوسکے
حیدرآباد۔ 13۔ جون ( سیاست نیوز) اقلیتوںکیلئے قائم کئے جارہے 71 اقامتی اسکولس کے آغاز میں تاخیرہوسکتی ہے کیونکہ متعلقہ ایجنسیوں کی جانب سے اقامتی اسکولوں میں ابھی تک درکار انفراسٹرکچر سربراہ نہیںکیا گیا۔ حکومت نے 14 جون سے تمام 71 اسکولوں میں تعلیم کے آ غاز کا فیصلہ کیا تھا لیکن بتایا جاتا ہے کہ اساتذہ اور پرنسپلس کے تقررات کا عمل ابھی تک مکمل نہیںہوا، اس کے علاوہ کئی عمارتیں طلبہ کے قیام اور تعلیم کے آ غاز کیلئے مکمل طور پر تیار نہیں ہے۔ لہذا اسکولوں کے آغاز میں مزید 10 دن کی تاخیر ہوسکتی ہے۔ بتایا جاتاہے کہ پروگرام کے مطابق کل تمام اسکولوں میں طلبہ اور ان کے سرپرستوں کے ساتھ مشاورت کا اہتمام کیا جائے گا اور لنچ کے انتظام کے بعد انہیں رخصت کردیا جائے گا۔ بعد میں اسکولوں کے آ غاز کی تاریخ کے بارے میں والدین کو اطلاع دی جائے گی ۔ اسکولوں کی سوسائٹی کے نائب صدرنشین اے کے خاں نے انفراسٹرکچر فراہم کرنے والی کمپنی کی جانب سے تاخیر پر برہمی کا اظہار کیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ کمپنی نے 25 مئی تک تمام اسکولوں میں درکار انفراسٹرکچر جیسے بیڈ ، بنچیس ، فرنیچر، یونیفارم اور دیگر سہولتوں کی فراہمی سے اتفاق کیا تھا۔ بعد میں اس نے 5 جون تک سربراہ کرنے کا وعدہ کیا لیکن اب مزید 8 تا 10 دن کی مہلت دینے کی خواہش کر رہا ہے۔ جن اداروں کو انفراسٹرکچر کی فراہمی کی ذمہ داری دی گئی تھی ، وہ ناکام ہوگئے ، اس کے علاوہ بیشتر عمارتوں میں تعمیر و مرمت کا کام ابھی تک مکمل نہیں ہوا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ ہر ضلع میں متعلقہ اگزیکیٹیو ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن اور نوڈل آفیسرس کو بجٹ جاری نہیں کیا گیا جس کے باعث وہ پکوان سے متعلق اشیاء کی خریدی ، گیاس کنکشن ، چاول اور دیگر غذائی اجناس کے حصول اور درکاری کیلئے کنٹراکٹ دینے میں ناکام رہے جس کے نتیجہ میں ایک بھی اسکول کی عمارت مکمل طورپر تیار نہیں کہی جاسکی۔ سوسائٹی کے عہدیدار اگرچہ 61 عمارتوں کے مکمل ہوجانے کا دعویٰ کر رہے ہیں، لیکن بنیادی حقائق کچھ اور ہی ہیں۔ اسکولوں میں آغاز میں تاخیر کی ایک اہم وجہ اساتذہ اور پرنسپلس کے تقررات کی عدم تکمیل ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ جن پرنسپلس کا تقرر کیا گیا تھا ، ان میں سے کئی الاٹ کردہ اسکولوں میں کام کرنے سے انکار کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ اساتذہ کے تقررات میں بھی مختلف محکمہ جات کے سفارش کردہ اساتذہ کی خدمات حاصل کرنا ابھی باقی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ ہر ضلع میں اسکول کی افتتاحی تقریب میں متعلق وزیر کو مدعو کیا جائے گا ۔ 71 اسکولوں میں 37 لڑکوں کے اور 32 لڑکیوںکیلئے ہوںگے۔ اسکولوں کے آغاز میں تاخیر کی صورت میں طلبہ اور ان کے سرپرستوں میں مایوسی دیکھی جارہی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ سوسائٹی میں غیر تجربہ کار افراد کی سرگرمیوں اور آپسی تال میل کی کمی کے نتیجہ میں یہ صورتحال پیدا ہوئی ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT