Thursday , December 14 2017
Home / جرائم و حادثات / میٹرو ریل کے لیے جل منڈل کی جانب سے پانی کی سربراہی

میٹرو ریل کے لیے جل منڈل کی جانب سے پانی کی سربراہی

میٹرو اسٹیشنوں پر بارش کے پانی کو محفوظ کرنے کے بھی اقدامات
حیدرآباد ۔ 19 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : ماہ نومبر میں شروع ہونے والے میٹرو ریل نظام کے لیے درکار پانی جل منڈل کی جانب سے سربراہ کیا جائے گا ۔ جملہ 68 مقامات پر روزانہ 0.5 ایم جی ڈی پانی فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ 28 ۔ 30 نومبر منعقد ہونے والے عالمی کمپنی مالکین کے اجلاس میں وزیراعظم نریندر مودی شریک ہونے والے ہیں اور اسی مناسبت سے وزیراعظم کے ہاتھوں میٹرو ریل کا افتتاح انجام دینے کی غرض سے حکومت تیز رفتار سے کاموں کو انجام دے رہی ہیں ۔ اور حصہ اول کے طور پر 30 کیلو میٹر کا افتتاح کیا جائے گا ۔ تاحال 20 کیلو میٹر تک کے کاموں کی تکمیل ہوگئی ہے ۔ جب کہ بقیہ 10 کیلو میٹر تک کے کام سرعت کے ساتھ انجام دئیے جارہے ہیں اور میٹرو کے تمام اسٹیشنوں پر عوام کو پانی کی سخت ضرورت ہوتی ہے ۔ اوپل ، پنجہ گٹہ اور کوکٹ پلی اور دیگر علاقوں میں اسٹیشنس سے متصل شاپنگ کامپلکس تعمیر کئے جارہے ہیں ۔ اور ان مقامات پر بھاری مقدار میں پانی کی ضرورت ہوگی ۔ شہر کی اہم سڑکوں کے کناروں سے بھاری پائپ لائنس بچھائی گئی ہیں اور ان پائپس سے سب مین کے ذریعہ خصوصی پائپ لائنس مربوط کر کے پانی سربراہ کیا جائے گا ۔ جب کہ بعض میٹرو لائنس کے پاس پانی کی پائپ لائنس نہیں ہیں ۔ جس کی وجہ سے ان مقامات پر خصوصی پائپ لائنس کے ذریعہ پانی سربراہ کرنے کی جل منڈل ریونیو ڈائرکٹر وجئے کمار ریڈی نے اطلاع دی ۔ انہوں نے کہا کہ تجارتی خطوط پر میٹرو کو پانی سربراہ کیا جائے گا ۔ جل منڈل کی جانب سے فراہم کئے جانے والے پانی کے علاوہ میٹرو ریل انتظامیہ کی جانب سے دیگر اقدامات بھی کئے جائیں گے ۔ میٹرو اسٹیشنوں میں آنے والے بارش کے پانی کو محفوظ کر کے اس پانی کو دوبارہ استعمال کے لیے تیار کرنے کے بھی اقدامات کئے جائیں گے ۔ بارش کے وقت ریل کی پٹریوں پر بھاری مقدار میں پانی جمع ہوتا ہے ۔ حالیہ دنوں ہوئی بارش کی وجہ سے مختلف ریلوے فلائی اوورس پر پانی جمع ہوگیا تھا اور مستقبل میں ایسے مسائل سے نمٹنے کے لیے خصوصی اقدامات کئے جارہے ہیں جب کہ اسٹیشنس میں بارش کے پانی کو ٹینکوں میں محفوظ کر کے استعمال میں لانے کے اقدامات کئے جارہے ہیں اور جن اسٹیشنس کے پاس زائد خالی زمینات ہوں گی وہاں پر زیر زمین پانی کو محفوظ کرنے کے اقدامات سے متعلق غور کیا جارہا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT