میکسیکو کی پناہ گزینوں کے مسئلہ پر ٹرمپ سے بات چیت

میکسیکو سٹی، 13 دسمبر (سیاست ڈاٹ کام) میکسیکو کے صدر اینڈریس مینوئل لوپیز اوبراڈور نے پناہ گزینوں کے مسئلے پر اپنے امریکی ہم منصب ڈونالڈ ٹرمپ سے گفتگو کی ہے ۔مسٹر اوبراڈور نے ٹویٹ کیا کہ ‘‘آج میں نے صدر ڈونالڈ ٹرمپ سے ٹیلی فون پر بات کی ہے ۔ ہمارے درمیان پناہ گزینوں کے مسئلے پر خوشگوار ماحول میں گفت و شنید ہوئی۔ اس کے علاوہ ہم نے وسطی امریکہ اور اپنے ممالک میں ترقی اور ملازمتوں کے مواقع فراہم کے لئے مشترکہ پروگرام نافذ کرنے کے امکانات پر بھی تفصیل سے بات کی’’َ۔میکسیکو کے وزیر خارجہ ماسیلو ابرارڈ نے منگل کو کہا تھا کہ ملک کے جنوبی علاقوں کی ترقی پر پانچ سال میں تقریباً 30 ارب ڈالر کا خرچ آئے گا۔ اس علاقے کی ترقی سے متعلق کاموں سے پناہ گزینوں کا مسئلہ حل میں مدد مل سکتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میکسیکو حکومت ہونڈوراس، گوئٹے مالا اور ال سلواڈور کی حکومتوں کے ساتھ ملکر علاقے کے مجموعی ترقی کے لئے ایک منصوبہ تیار کرے گی۔قابل ذکر ہے کہ روزگار اور بہترزندگی کی تلاش میں لاطینی امریکی ممالک ہونڈوراس، گوئٹے مالا اور ال سلواڈور سے میکسیکو کی جنوبی سرحد سے امریکہ میں داخل ہونے کے معاملے پر دونوں ممالک کے تعلقات میں تلخی پیدا ہوگئی تھی۔ مسٹر ٹرمپ کے انتخابی وعدوں میں سے ایک میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر کا وعدہ بھی تھا۔حالیہ مہینوں میں تقریباً 10 ہزار افراد کا کارواں امریکہ کی جانب گامزن تھا۔ انہیں روکنے کے لئے امریکہ ۔میکسیکو سرحد پر 15ہزار فوجی تعینات کئے گئے تھے ۔ مسٹر ٹرمپ نے کہا تھا کہ اگر بھیڑ سنگباری کرتی ہے تو فوج کو ان پر گولیاں چلانے کی اجازت ہے ۔

TOPPOPULARRECENT