Wednesday , September 19 2018
Home / عرب دنیا / میں ہمیشہ سچ بولوں گا چاہے اس کا جوبھی انجام ہو : نواز شریف

میں ہمیشہ سچ بولوں گا چاہے اس کا جوبھی انجام ہو : نواز شریف

اسلام آباد ۔ 14 مئی (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان کی اعلیٰ سطحی سیول ۔ ملٹری مجلس ملک کے سابق وزیراعظم نواز شریف کے اس بیان کو گمراہ کن قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا جہاں انہوں نے ریمارک کیا تھا کہ 2008ء میں کئے گئے ممبئی حملوں میں ملوث دہشت گردوں سے نمٹنے میں حکومت پاکستان ناکام رہی۔ نواز شریف کے اس بیان نے کھلبلی مچا دی ہے جس کے بعد وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی قیادت میں نیشنل سیکوریٹی کمیٹی (NSC) کا ایک اجلاس طلب کیا گیا جس میں نواز شریف کے دیئے گئے بیان کے بعد پیدا ہوئی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ نواز شریف نے ایک انٹرویو کے دوران واضح طور پر کہا تھا کہ پاکستان میں دہشت گرد تنظیمیں آج بھی سرگرم ہیں۔ انہوں نے اس بات پر بھی سوال اٹھایا کہ وہ کونسی پالیسی تھی جس کے تحت ’’بیرونی افراد‘‘ کی ایک ٹولی کو ممبئی بھیجا گیا تاکہ وہ وہاں جاکر لوگوں کو ہلاک کرسکیں۔ 68 سالہ نواز شریف نے یہ بھی کہا کہ اس وقت پاکستان نے خود کو یکا و تنہا کرلیا ہے۔ این ایس سی کے اجلاس کے بعد جاری کئے گئے ایک بیان میں نواز شریف کے بیان کو گمراہ کن قرار دیا گیا۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہیکہ این ایس سی کے اجلاس کے بعد جو بیان جاری کیا گیا اس میں اس بات پر زائد زور دیا گیا ہیکہ ممبئی حملوں کے کیس کے اختتام میں تاخیر ہندوستان کی طرف سے ہورہی ہے ناکہ پاکستان کی جانب سے۔ دوسری طرف نواز شریف نے اپنے بیان کا دفاع کیا۔ حیرت انگیز بات یہ ہیکہ ان کا بیان ان کی پارٹی کے موقف سے متضاد ہے جبکہ پی ایم ایل (این) کے صدر شہباز شریف نے بھی کہا کہ رپورٹ میں جو کچھ بھی پیش کیا گیا ہے، پارٹی اسے یکسر مسترد کرتی ہے چاہے وہ براہ راست ریمارکس ہوں یا بالواسطہ۔ قومی احتسابی بیورو میں جس وقت ان سے اخباری نمائندوں سے بات کررہے تھے تو انہوں نے خود اپنے بیان کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ میں نے ایسی کونسی بات کہہ دی جو غلط ہے؟ نواز شریف کا انٹرویو ہفتہ کے روز شائع ہوا تھا جس کے فوری بعد ان کی پارٹی نے ایک وضاحتی بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف نے جو کچھ اپنے انٹرویو کے دوران کہا ہندوستانی میڈیا نے اسے توڑمروڑ کر پیش کیا ہے۔ نواز شریف نے کہا کہ وہ ہر حال میں سچائی بیان کریں گے۔ نواز شریف نے کہا کہ انہوں نے جو کچھ ریمارکس کئے ہیں ان کی توثیق سابق صدر پرویز مشرف، سابق وزیرداخلہ رحمن ملک اور سابق قومی سلامتی مشیر میجر جنرل (ریٹائرڈ) محمود درانی نے بھی کی ہے۔ نواز شریف نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ جو لوگ سوالات پوچھتے ہیں میڈیا انہیں غدار سے تعبیر کرتا ہے۔ انہوں نے ایک بار پھر کہا کہ وہ ہمیشہ سچ بولیں گے چاہے اس کا جو بھی انجام ہو۔

TOPPOPULARRECENT