Friday , May 25 2018
Home / دنیا / نتن یاہو کی تازہ جعلسازی مقدمہ سے ربط کی تحقیقات

نتن یاہو کی تازہ جعلسازی مقدمہ سے ربط کی تحقیقات

وزیراعظم کے قریبی ساتھی گرفتار، شریک حیات پر بھی الزام ،انٹرویو پر شکوک
یروشلم ۔ 20 فروری (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیل کی پولیس نے آج وزیراعظم بنجامن نتن یاہو کے جج کے عہدہ پر ترقی کے سلسلہ میں رشوت خوری کے مقدمہ سے ان کے ربط کی تحقیقات کا آغاز کردیا۔ ان کی شریک زندگی کے خلاف ایک فوجداری مقدمہ درج کرلیا گیا۔ نئی تحقیقات نتن یاہوکی جانب سے کاروباری اجلاس سے چند گھنٹے قبل لاکھوں کی رشوت حاصل کرنے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ یہ اب تک کا دائیں بازو کے وزیراعظم کی طویل میعاد اقتدار کا سب سے بڑا اسکینڈل ہے۔ پولیس کے بیان کے بموجب دو افراد نے 2015ء میں ایک سرکاری عہدیدار سے ربط پیدا کیا تھا تاکہ اٹارنی جنرل کے عہدہ پر تقرر کے سلسلہ میں لاکھوں رشوت پیش کی جاسکے۔ دونوں افراد جن کی نشاندہی کی گئی ہے، میر ہیفیٹز اور ہیلی کامیر دونوں نتن یاہو خاندان کے ذرائع ابلاغ مشیر ہیں۔ انہوں نے مبینہ طور پر ایلاگورٹل نامی جج کو لاکھوں کی رشوت پیش کی تھی۔ سارہ نتن یاہو اس سلسلہ میں سرکاری رقومات کا استحصال کیا تھا۔ نتن یاہو کے ترجمان نے کہا کہ ہیفیٹز نے انہیں کبھی بھی یا ان کی شریک حیات کو رشوت کی پیشکش نہیں کی تھی اور نہ ان سے ایسی خواہش کی گئی تھی۔ پولیس نے پہلے ہی دو علحدہ مقدمات میں وزیراعظم اور ان کی سفارشات کے ملوث ہونے کے بارے میں تحقیقات مکمل کرلی ہیں۔ ان پر الزام عائد کیا ہیکہ انہوں نے اٹارنی جنرل کے عہدہ پر ایک مخصوص شخص کے تقرر کیلئے دباؤ ڈالا تھا۔ پولیس کمشنر رانی الشیخ نے انکشاف کیا ہیکہ پارلیمانی کمیٹی کی ارکان پارلیمنٹ پر ایک حالیہ انٹرویو کے سلسلہ میں برہمی کے بعد ان تحقیقات کو مکمل کرلیا گیا ہے۔ انٹرویو میں کہا گیا تھا کہ سراغ رساں نتن یاہو کے خلاف تحقیقات کررہے ہیں اور خانگی سرمایہ کاروں کو نشانہ بنارہے ہیں۔ ان پر کیچڑ اچھال رہے ہیں۔ بائیں بازو کے ارکان مقننہ نے کمیٹی پر جس کی قیادت جوآف کش کرتے ہیں، الزام عائد کیا کہ نتن یاہو کی لیکوڈ پارٹی دہشت گرد الشیخ کو نتن یاہو کے مشکوک روابط کے بارے میں پولیس تحقیقات پر اثرانداز ہونے کیلئے دباؤ ڈال رہے ہیں۔ وزیراعظم کے حامیوں کا کہنا ہیکہ یہ انٹرویو جو چینل 2 ٹی وی پر نشر کیا گیا ہے۔ پولیس پر عوام کے اعتماد میں مزید کمزوری پیدا کرتا ہے اور نتن یاہو کو پھنسانے کی کوشش کا شبہ پیدا کرتا ہے۔ وزیراعظم کے کسی بھی چیز سے ربط ہونے کے بارے میں اس بیان میں کچھ نہیں کہا گیا لیکن ایسے افراد موجود ہیں جو سمجھتے ہیں کہ کمیٹی کے ارکان جن میں سے بیشتر نے اعتراف کیا ہیکہ انہوں نے اس انٹرویو کا نشریہ دیکھا ہے اس سلسلہ میں مشکوک ہیں۔ تازہ ترین شکوک اس وقت ابھر کر آئے جبکہ کرپشن کے بارے میں تحقیقات کی گئیں اور ہیفٹیز کو کرپشن میں ملوث پایا گیا۔ اتوار کے دن نتن یاہو کے ایک اور ساتھی شلموفلبر گرفتار کئے گئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT