Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / نتیش کمار جنتادل(یو) کے نئے صدر منتخب

نتیش کمار جنتادل(یو) کے نئے صدر منتخب

ہم خیال پارٹیوں سے اتحاد کی کوشش ‘ آئندہ لوک سبھا انتخابات میں حصہ لینے کا منصوبہ
نئی دہلی۔10اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر بہار نتیش کمار کو آج جنتادل ( یو) کا صدر منتخب کرلیا گیا ۔ یہ اقدام انہیں پارٹی کی مکمل کمان حوالے کرے گا ۔ وہ پارٹی کو بیرون ریاست ‘ دیگر ریاستوں میں بھی توسیع دینا چاہتے ہیں تاکہ 2019ء کے لوک سبھا انتخابات کی تیاری کرسکیں ۔ پارٹی کے اعلیٰ ترین عہدہ کیلئے قومی مجلس عاملہ کے اجلاس میں انہیں متفقہ طور پر منتخب کرلیا گیا ۔ اس طرح شرد یادو کا 10سالہ دور اختتام کو پہنچا ۔ خود انہوں نے چوتھی میعاد کیلئے پارٹی کی صدارت قبول کرنے سے انکار کردیا تھا ۔ نتیش کمار پہلی بار جے ڈی یو کے صدر منتخب ہوئے ہیں ۔ وہ بہار کا چہرہ سمجھے جاتے تھے اور اُن کی پارٹی ریاست بہار کی حد تک محدود تھی ۔ دو سابق صدور جارج فرنانڈیز اور شرد یادو بہار کے باہر کے افراد تھے ۔ ریاست درحقیقت جے ڈی ( یو) کا وطن بن چکی تھی ۔ نتیش کمار کا نام شرد یادو نے تجویز کیا اور اس کی تائید پارٹی کے سکریٹری جنرل کے سی تیاگی ‘ جاوید رضا اور دیگر نے کی ۔ چیف منسٹر بہار جنہوں نے گذشتہ سال بہار میں شاندار کامیابی حاصل کر کے اپنی پارٹی کو ریاست میں دوبارہ برسراقتدار لایا ہے ۔ جب کہ 2014ء کے لوک سبھا انتخابات میں پارٹی کو زبردست دھکہ پہنچا تھا  ۔ مجلس عاملہ کے ایک رکن نے نتیش کمار کی جدوجہد کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ انہوں نے یکساں نظریہ رکھنے والوں کو متحد کیا اور نئے ذمہ داری قبول کرلی ۔ کے سی تیاگی نے کہا کہ جے ڈی ( یو) ‘ آر جے ڈی اور کانگریس اتحاد نے بی جے پی زیرقیادت این ڈی اے کو گذشتہ سال کے ریاستی انتخابات میں شرمناک شکست دی تھی ۔جے ڈی یو۔ اجیت سنگھ زیر قیادت آر ایل ڈی کے ساتھ اورجھارکھنڈ کے سابق چیف منسٹر بابو لال مرانڈی کے ساتھ جھارکھنڈ وکاس مورچہ کے انضمام کیلئے بات چیت کررہی ہے ۔ اسی طرح کے انضمام کا ایک اقدام جنتاپریوار کی چھ پارٹیوں بشمول سماج وادی پارٹی کو متحد کرنے کیلئے بھی کیا جارہا ہے لیکن گذشتہ سال بہار انتخابات سے پہلے سماج وادی پارٹی کے ملائم سنگھ یادو نے اس کوشش کو ناکام بنادیا تھا اور ان کی پارٹی نے ریاست کے اسمبلی انتخابات میں اپنے بل بوتے پرمقابلہ کیا تھا ۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ جے ڈی یو آئندہ سال یو پی اسمبلی انتخابات پر نظر رکھے ہوئے ہے اس کے بھی وہ 2019ء بڑی انتخابی جنگ یعنی لوک سبھا انتخابات کی تیاری کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT