Wednesday , January 17 2018
Home / Top Stories / نتیش ۔ لالو اتحاد سے این ڈی اے کی مشکلات میں اضافہ

نتیش ۔ لالو اتحاد سے این ڈی اے کی مشکلات میں اضافہ

نئی دہلی۔/11جون، ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر اوپیندر کشواہا نے آج کہا کہ چیف منسٹر بہار نتیش کمار اور ار جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادوکے درمیان مفاہمت سے بہار میں این ڈی اے کا کام مشکل ترین ہوگیا ہے جہاں پر اسمبلی انتخابات منعقد ہونے والے ہیں۔ انہوں نے مجوزہ اتحاد کے بارے میں بی جے پی صدر امیت شاہ سے تبادلہ خیال کیا ہے۔ امیت شاہ نے بی ج

نئی دہلی۔/11جون، ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر اوپیندر کشواہا نے آج کہا کہ چیف منسٹر بہار نتیش کمار اور ار جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادوکے درمیان مفاہمت سے بہار میں این ڈی اے کا کام مشکل ترین ہوگیا ہے جہاں پر اسمبلی انتخابات منعقد ہونے والے ہیں۔ انہوں نے مجوزہ اتحاد کے بارے میں بی جے پی صدر امیت شاہ سے تبادلہ خیال کیا ہے۔ امیت شاہ نے بی جے پی کی حلیف جماعت راشٹریہ لوک سمتا پارٹی کے سربراہ سے بات چیت کی ہے جو کہ لالو ۔ نتیش مفاہمت کا مقابلہ کرنے کیلئے بہار میں جلد از جلد بی جے پی اور اس کی حلیف جماعتوں کے درمیان انتخابی اتحاد کو قطعیت دی جائے۔ علاوہ ازیں بہار میں بی جے پی کی ایک اور حلیف جماعت رام ولاس پاسوان کی زیر قیادت ایل جے پی اور مہادلت لیڈر اور سابق چیف منسٹر جتن رام مانجھی کے ساتھ بھی مفاہمت کی کوششوں کا آغاز کردیا گیا ہے۔

امیت شاہ سے ملاقات کے بعد مرکزی وزیر اوپیندر کشواہا نے بتایا کہ بہار میں اقتدار تک پہنچنے کا راستہ اب دشوار ہوگیا ہے اور ہمارا کام آسان نہیں رہا کیونکہ آر جے ڈی اور جنتا دل متحدہ کے درمیان اتحاد سے بہار میں انتخابات جیتنا ہمارے لئے مشکل ہوگیا ہے۔ اس موقع پر بی جے پی جنرل سکریٹری بھوپیندر یادو جوکہ بہار میں پارٹی اُمور کے انچارج ہیں اور مرکزی وزیر دھرمیندر پردھان بھی موجود تھے، راشٹریہ لوک سمتا پارٹی نے بہار میں 40تا50نشستوں پر دعویٰ پیش کیا ہے۔ تاہم کشواہا نے اس خصوص میں تفصیلات بتانے سے انکار کردیا اور کہا کہ ہم نے اس پر بات چیت نہیں کی ہے تاہم اسمبلی انتخابات کیلئے حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ نشستوں کی تقسیم کے مسئلہ پر بات چیت جاری رہنے کے دوران آر ایل ایس پی قائدین نے کہا کہ آر جے ڈی اور جے ڈی یو اتحاد کا مقابلہ اور پسماندہ طبقات پر اثرانداز ہونے کیلئے اوپیندر کشواہا کو این ڈی اے کے امیدوار کی حییت سے پیش کیا جائے۔

پارٹی کے جنرل سکریٹری شیوراج سنگھ نے یہ ادعا کیا ہے کہ کشواہا ایک معتبر چہرہ ہے اور آر جے ڈی۔ جے ڈی یو کے سماجی انصاف نعروں کا موثر جواب دینے کی اہلیت رکھتے ہیں جس کا فقدان بی جے پی میں پایا جاتا ہے۔ جنتا پریوار اتحاد کی جانب سے نتیش کمار کو چیف منسٹر امیدوار کی حیثیت سے پیش کئے جانے کے بعد بی جے پی پر بھی پنے لیڈر کے اعلان کیلئے دباؤ بڑھتا جارہا ہے۔ بہار کے سابق ڈپٹی چیف منسٹر سوشیل کمار چیف منسٹر کے عہدہ کیلئے اصل دعویدار ہیں گوکہ پارٹی کا ایک گوشہ ان کے خلاف ہے۔دریں اثناء بہار میں اسمبلی انتخابات کے پیش نظر سیاسی ماحول گرم ہوگیا ہے جبکہ سابق چیف منسٹر جتن رام مانجھی آج ایک نو تشکیل شدہ ہندوستانی عوام پارٹی کیلئے انتخابی نشان حاصل کرنے کیلئے نئی دہلی روانہ ہوگئے ہیں توقع ہے کہ وہ یہاں بی جے پی قائدین سے ملاقات کریں گے۔ میڈیا کے نمائندوں نے جب ان سے یہ دریافت کرنا چاہا کہ بی جے پی نے صرف مٹھی بھر نشستیں دینے کی پیشکش کی ہے جس کے باعث این ڈی ا ے کے ساتھ اتحاد کی راہ ہموار نہیں ہوسکی۔ مانجھی نے راست جواب دینے کی بجائے مسکراتے ہوئے کہا کہ تم لوگ مجھ سے زیادہ جانتے ہو، تاہم انہوں نے کہا کہ ہندوستانی عوام پارٹی بہار میں تمام 243 نشستوں پر امیدواروں کو نامزد کرنے کی تیاری کررہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT