Thursday , November 23 2017
Home / دنیا / نجران دھماکے کی ذمہ داری داعش نے قبول کر لی

نجران دھماکے کی ذمہ داری داعش نے قبول کر لی

حملہ آور مشکوک انداز اور سردیوں کے لباس میں مسجد کے صحن میں داخل ہوا
دبئی ، 27 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کے شہر نجران کی کسی بھی مسجد میں پیش آئے اولین خودکش حملے میں دو نمازی شہید ہوئے جبکہ حملہ آور بھی ہلاک ہوگیا۔ سعودی عرب کے جنوب مغربی علاقہ نجران کی ادحضہ کالونی کی مسجد المشھد میں اس وقت نمازیوں کو نشانہ بنایا  گیا جب وہ نماز مغرب کی ادائی کے بعد مسجد سے باہر نکل رہے تھے۔ مسجد المشھد اپنے علاقہ کی اسماعیلی فرقہ کی دوسری بڑی مسجد ہے۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ خودکش حملہ آور مسجد میں مشکوک انداز کے ساتھ اور سردیوں کے لباس میں داخل ہوا۔ دریں اثناء انتہاء پسند تنظیم داعش نے نجران کی مسجد میں دوشنبہ کے خودکش حملہ کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ داعش کی مقامی تنظیم ’ولایہ الحجاز‘ نے ٹوئیٹر پر ایک بیان میں حملہ کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے تصدیق کی کہ حملہ کا مقصد اسماعیلی فرقہ کو نشانہ بنانا تھا۔ انتہا پسند تنظیموں کی ویب سائٹ کی مانیٹرنگ کرنے والے ادارہ (SITE) کے مطابق تنظیم نے دھمکی دی کہ اسماعیلی فرقہ کو جزیرہ نما عرب میں امن وسلامتی سے نہیں رہنے دیا جائے گا۔ تنظیم کے اعلان کے مطابق خودکش حملہ آور کا نام ابو اسحق الحجازی تھا۔ تاہم سعودی وزارت داخلہ کے سکیورٹی ترجمان کا کہنا ہے کہ قابل نفرت عمل کا مرتکب حملہ آور سعد سعید سعد الحارثی تھا۔ ادھر نجران خطہ کے گورنر نے مسجد المشھد بم حملہ میں زخمی ہونے والوں کی شاہ خالد ہاسپٹل اور نجران کے جنرل ہاسپٹل میں عیادت کی۔  ترجمان وزارت داخلہ میجر جنرل منصور الترکی کے مطابق سکیورٹی والوں نے علاقے کو گھیرے میں لے کر جامع تحقیقات شروع کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT