Monday , June 25 2018
Home / ہندوستان / نریش اگروال کی بی جے میں شمولیت یو پی میں شکست کی وجہ : شیوسینا

نریش اگروال کی بی جے میں شمولیت یو پی میں شکست کی وجہ : شیوسینا

نئی دہلی۔14 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) شیوسینا کے رکن پارلیمنٹ سنجے راوت نے آج دعوی کیا کہ اترپردیش میں دو ضمنی پارلیمانی انتخابات میں بی جے پی کو شرمناک شکست کا سامنا اس لیے کرنا پڑا کیوں کہ سماج وادی پارٹی کے قائد نریش اگروال کو بھگوا پارٹی نے اپنی صف میں شامل کرلیا تھا۔ یہ نہیں سمجھا جانا چاہئے کہ سماج وادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کا اتحاد کارگرہوا۔ انوہں نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ لارڈ رام بی جے پی پر برہم تھے۔ اسی دن سے جبکہ اس نے سماج وادی پارٹی قائد کا استقبال کرنے کے لیے سرخ قالین بچھایا تھا۔ حالانکہ وہ لارڈ رام پر تنقید کرچکے تھے۔ گورکھ پور لوک سبھا نشست چیف منسٹر یوگی آدتیہ ناتھ کا مستحکم گڑھ اور وقار کی نشست تھی۔ بی جے پی کے اوپیندر دت شکلا سماج وادی پارٹی کے پروین نشادکے پس پردہ تھے۔ پھول پور میں سماج وادی پارٹی امیدوار ناگیندر پرتاپ سنگھ پٹیل اپنے قریبی بی جے پی حریف سے آگے رہے۔ دونوں حلقوں میں 11 مارچ کو رائے دہی منعقد کی گئی تھی۔ ایک دن بعد اگروال نے سماج وادی پارٹی سے ترک تعلق کرلیا اور بی جے پی میں شامل ہوگئے۔ جبکہ اداکار سے سیاستداں بننے والے جیہ بچن کے خلاف راجیہ سبھا کی نامزدگی میں انہیں ناکامی ہوئی۔ ضمنی انتخابات آدتیہ ناتھ اور ڈپٹی چیف منسٹر کیشوپرساد موریہ کے گورکھپور اور پولپور لوک سبھا نشستوں سے مستعفی ہوگئے تھے کیوں کہ وہ ریاستی مقننہ کونسل کے لیے منتخب ہوگئے تھے۔ ان کا ریاستی ایوان کا رکن بننا ضروری ہوگیا تھا کیوں کہ وہ چیف منسٹر اور ڈپٹی چیف منسٹر مقرر کیے گئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT