Monday , January 22 2018
Home / شہر کی خبریں / نصف رمضان کی تکمیل، پرانے شہر میں برقی کا مسئلہ جوں کا توں برقرار

نصف رمضان کی تکمیل، پرانے شہر میں برقی کا مسئلہ جوں کا توں برقرار

برقی کے عہدیدار حکومت کے احکامات سے لاپرواہ، عوامی مشکلات میں اضافہ

برقی کے عہدیدار حکومت کے احکامات سے لاپرواہ، عوامی مشکلات میں اضافہ
حیدرآباد۔/4جولائی، ( سیاست نیوز) رمضان المبارک کا نصف حصہ گذرچکا لیکن پرانے شہر میں آج تک برقی کی سربراہی کی صورتحال بہتر نہیں ہوئی ہے۔ حکومت کی جانب سے بارہا اعلانات اور سدرن پاور ڈسٹری بیوشن کمپنی اور ٹرانسکو کی جانب سے عہدیداروں کی ٹیم کی تشکیل کے باوجود پرانے شہر میں وقفہ وقفہ سے غیر معلنہ طور پر برقی کٹوتی کا سلسلہ جاری ہے۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ برقی کے عہدیداروں کو حکومت کی ہدایات کی کوئی پرواہ نہیں۔ پرانے شہر کے مختلف علاقوں سے برقی کٹوتی کے سلسلہ میں مختلف شکایات مل رہی ہیں۔ عوام نے بتایا کہ دن کے اوقات کے علاوہ سحر اور افطار کے موقع پر اچانک برقی منقطع کی جارہی ہے جس سے روزہ داروں کو کئی ایک دشواریوں کا سامنا ہے۔ نمازوں کے اوقات کے موقع پر برقی کٹوتی سے ایسی مساجد جہاں بیاٹری کا انتظام نہیں وہاں نمازوں کی ادائیگی میں دشواری ہورہی ہے۔ دن بھر شدید گرمی اور پھر برقی کٹوتی نے عوام کی مشکلات میں اضافہ کردیا ہے۔ عوامی نمائندوں کی بے حسی اور خاموشی اس سلسلہ میں معنیٰ خیز ہے جو صرف رسمی نمائندگیوں تک محدود ہوچکی ہے۔ تلنگانہ سدرن پاور ڈسٹری بیوشن کمپنی کے صدرنشین نے بعض ڈائرکٹرس اور اہم عہدیداروں پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی تاکہ رمضان المبارک کے دوران برقی کی موثر سربراہی کو یقینی بنایا جائے۔ کمپنی نے عہدیداروں کے ٹیلی فون نمبرات عوام کی سہولت کیلئے جاری کئے لیکن افسوس کہ عوام کو ان عہدیداروں سے بھی کوئی راحت نہیں مل سکی۔ کمیٹی کی تشکیل کے چاردن گزرنے کے باوجود سربراہی کی صورتحال میں کوئی بہتری نہیں ہوئی ہے۔ عوام نے شکایت کی کہ وہ جب عہدیداروں کو فون کرتے ہیں تو اکثر و بیشتر فون کا جواب نہیں دیا جاتا۔ اگر کوئی عہدیدار فون ریسیو کرلے تو وہ اوقات کار میں فون کرنے کی ہدایت دیتا ہے یا پھر مقامی شکایتی سیل کو فون کرنے کی صلاح دی جارہی ہے۔ عوام نے شکایت کی کہ بعض عہدیداروں کے دیئے گئے فون نمبرات اکثر بند رہتے ہیں۔ اس طرح ڈائرکٹرس پر مشتمل کمیٹی کی تشکیل بھی بے فیض ثابت ہوئی۔

TOPPOPULARRECENT