Friday , November 16 2018
Home / شہر کی خبریں / نظام آباد حلقہ پارلیمنٹ سے ٹی آر ایس امیدوار کی کامیابی یقینی

نظام آباد حلقہ پارلیمنٹ سے ٹی آر ایس امیدوار کی کامیابی یقینی

حصول تلنگانہ کے بعد عوام ٹی آر ایس کے حق میں، کے کویتا کا خطاب

حصول تلنگانہ کے بعد عوام ٹی آر ایس کے حق میں، کے کویتا کا خطاب

حیدرآباد۔/12اپریل، ( سیاست نیوز) تلنگانہ جاگرتی کی صدر اور حلقہ لوک سبھا نظام آباد سے ٹی آر ایس امیدوار کویتا نے عام انتخابات میں ٹی آر ایس کی کامیابی اور تشکیل حکومت کو یقینی قرار دیا۔ خیریت آباد سے تعلق رکھنے والے مختلف پارٹیوں کے قائدین نے آج تلنگانہ بھون پہنچ کر ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کرلی۔ اس کے علاوہ سابق رکن قانون ساز کونسل اور ویملواڑہ کے تلگودیشم انچارج سی ایچ سدھاکر راؤ نے بھی آج ٹی آر ایس میں شمولیت کا اعلان کیا۔ اس موقع پر مخاطب کرتے ہوئے کویتا نے کہا کہ تلنگانہ ریاست کے حصول میں کامیابی کے بعد عوام میں ٹی آر ایس کے حق میں زبردست لہر پائی جاتی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ وینکیا نائیڈو کے دباؤ کے سبب بی جے پی اور تلگودیشم میں انتخابی مفاہمت ہوئی ہے اور یہ مفاہمت یکطرفہ کی گئی حالانکہ بی جے پی قائدین اس کے لئے تیار نہیں تھے۔ انہوں نے کہا کہ اس مفاہمت سے ناراض تلگودیشم قائدین ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کررہے ہیں۔ کویتا نے کہا کہ انتخابات میں صرف ٹی آر ایس ہی کی لہر چلے گی اور دیگر پارٹیوں کا صفایا یقینی ہے۔ انہوں نے سابق وزیر دانم ناگیندر کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ حلقہ اسمبلی خیریت آباد کی ترقی کیلئے ناگیندر کی کوئی خدمات نہیں ہیں۔عوام بھی اچھی طرح جانتے ہیں کہ ناگیندر نے علاقہ کے مسائل کو نظر انداز کردیا۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس اقلیتوں کی فلاحو بہبود اور ترقی کے عہد کی پابند ہے۔انتخابی منشور میں اقلیتوں کی ہمہ جہتی ترقی کے سلسلہ میں جو وعدے کئے گئے ان پر عمل آوری کی جائے گی۔ کویتا نے کہا کہ ٹی آر ایس برسر اقتدار آنے کے بعد تلنگانہ کی اوقافی جائیدادوں کا تحفظ کیا جائے گا اور جو اراضیات خانگی اداروں کے حوالے کی گئی ہیں انہیں واپس حاصل کرتے ہوئے اسے ترقی دی جائے گی اور اس کی آمدنی اقلیتوں کی فلاح و بہبود پر خرچ کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT