Friday , December 15 2017
Home / مذہبی صفحہ / نماز کے لئے کام چھوڑدو

نماز کے لئے کام چھوڑدو

سیدہ مریم صدیقہ

اللہ تعالیٰ نے ہماری دنیوی اور اخروی صلاح و فلاح کے لئے جو عبادتیں فرض کی ہیں، ان میں سب سے زیادہ اہمیت نماز کو حاصل ہے۔ اسلام کا دوسرا اہم رکن نماز ہے۔ اللہ تعالی قرآن مجید میں فرماتا ہے: ’’اور مؤمن وہ ہیں جو اپنے رب کی آواز کو قبول کرتے ہیں اور نمازوں پر کاربند رہتے ہیں‘‘۔
اسلام اور کفر کے درمیان فرق کرنے والی چیز نماز ہے۔ نماز یاد الہی کا ذریعہ ہے۔ نماز کی پابندی سے ادائیگی بندے کو دینی و دنیوی دونوں نعمتوں سے مالا مال کرتی ہے۔ ہمارے پیارے آقا صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ’’میری آنکھوں کی ٹھنڈک نماز ہے۔ نماز دین کا ستون ہے۔ نماز مؤمن کی معراج ہے‘‘۔ یہ وہ روحانی ترقی کا زینہ ہے، جس پر چڑھ کر انسان خدائے تعالی سے ملاقات کا شرف حاصل کرتا ہے۔
وقت کے اندر نماز ادا کرنا اللہ تعالی کے نزدیک ایک مقبول عمل ہے۔ جو نمازوں کی حفاظت کرتا ہے، اللہ تعالی اس کی حفاظت فرماتا ہے۔ بندے سے قیامت کے دن اس کے اعمال میں سب سے پہلے نماز کے بارے میں پوچھا جائے گا۔ اگر اس کی نماز ٹھیک ہے تو وہ کامیاب و کامران ہو گیا اور اگر خرابی ہے تو وہ ناکام و نامراد ہو گیا۔
حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا اسوہ حسنہ یہی بتاتا ہے کہ آپﷺ نے ہر حالت میں نمازوں کا خاص اہتمام فرمایا۔ آپﷺ نے حالت قیام اور سفر میں نمازوں کی پابندی کی، صحت اور بیماری میں بھی، امن و جنگ اور خوف کی حالت میں بھی نماز سے غافل نہیں ہوئے۔ پس نماز اسلام کا بنیادی حکم ہے۔ یہ انسان کو صراط مستقیم پر چلاتی ہے، برائیوں اور فحش باتوں سے بچاتی ہے، روحانیت بڑھاتی اور اللہ تعالی کا قرب عطا کرتی ہے۔ کام کی خاطر نماز نہیں چھوڑنا چاہئے، بلکہ نماز کی خاطر کام چھوڑ دینا چاہئے۔ نماز کو قصداً ترک نہیں کرنا چاہئے، جو شخص نماز کو قصداً ترک کردیتا ہے، اللہ تعالی اور رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اس سے بری الذمہ ہیں۔ جس کی نماز فوت ہوئی، گویا اس کے اہل اور مال جاتے رہے، کیونکہ ایمان کی علامت نماز ہے۔

TOPPOPULARRECENT