نواب صاحب کنٹہ میں پولیس چیک پوسٹ ویران

ٹرافک جام ، غنڈہ عناصر سرگرم ، شہریوں کا جینا دوبھر

ٹرافک جام ، غنڈہ عناصر سرگرم ، شہریوں کا جینا دوبھر

حیدرآباد ۔20 مارچ( سیاست نیوز ) ۔ پرانے شہر کے گنجان آبادی والے علاقے نواب صاحب کنٹہ میں ،چوراہے کے قریب ایک پولیس چیک پوسٹ 2002 میںقائم کیا گیا تھا۔ اس پولیس چیک پوسٹ کو قائم کرنے کا مقصد یہ تھا کہ نواب صاحب کنٹہ میں ہورہے جرائم پر نظر رکھی جائے اور جرائم کی روک تھام کے لئے اقدامات کئے جائیں۔یہ چیک پوسٹ فلک نما پولیس اسٹیشن کے زیر انتظام ہے۔جس میں شروعاتی تین سال تک چار تا پانچ پولیس عہدیدار اپنی ڈیوٹی انجام دیا کرتے تھے ۔چیک پوسٹ پر دن رات پولیس عہدیدار عوام کی خدمت کے لئے موجود رہتے تھے۔لیکن گذشتہ آٹھ سال سے یہ چیک پوسٹ ویران پڑا ہے ۔ اس پر ایک تالا لگا ہوا ہے اور جہاں پر پولیس عہدیدار بیٹھا کرتے تھے اُس اندرونی حصہ میں آج کیڑے ، گردو غبار اور مکڑی کے جالے پائے جاتے ہیں۔اتنا ہی نہیں بلکہ اس چیک پوسٹ کی وجہ سے ٹرافک میں خلل بھی پڑرہا ہے۔ مصروف اوقات میں لوگوں کو ٹرافک جام ہونے کی وجہ سے کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔اس کے علاوہ قریبی دوکانداروں کو اس کی وجہ سے کا فی پریشانی ہورہی ہے۔مقامی لوگوں نے اس غیر کارکرد چیک پوسٹ کو یہاں سے ہٹانے کی محکمہ پولیس سے درخواست کی ہے۔دوسری جانب علاقے کے کئی تعلیم یافتہ افراد اس پولیس چیک پوسٹ کو دوبارہ کارکرد بنانے کے لیے محکمہ پولیس سے اپیل کررہے ہیں۔اِن افردا کا کہنا ہے کہ اگر پولیس چیک پوسٹ پر عہدیدار موجودرہیںگے تو علاقے میں ہورہے جرائم پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ایک شخص نے ہمیں بتایا کہ علاقہ نواب صاحب کنٹہ میں آوارہ نوجوانوں نے شریف لوگوں کا جینا حرام کررکھا ہے ۔

غنڈہ عناصر یہاں پر اپنی غیر اخلاقی حرکتوں سے علاقے کا نام بدنام کررہے ہیں۔انہو ں نے کہا کہ نوجوان لڑکے گروپ کی شکل میں دن رات چبوتروں پر بیٹھے رہتے ہیں ، چیخ وپکار کرنا، بہ آواز بلند گانے گانا ،کبڈی کھیلنا،کرکٹ کھیلنا ، فٹ بال کھیلنا یا گوٹیاں کھیلنا اور راستہ سے گذرنے والوں کو تکلیف دینا اِن نوجوانوں کا روزکا معمول بن گیا ہے۔ اس کے علاوہ پڑوسیوںکو تنگ کرنا اُن کے اثاثہ جات کو نقصان پہنچانا ان کے لئے معمولی بات ہے۔ اسی طرح ایک خاتون نے ہمیں بتایا کہ اس علاقے کے چند غنڈہ عناصر گلیوں میں جمع ہوکر اسکول و کالج کی طالبات پر آوازیں کسنا، چھیڑ چھاڑ کرنا ، بال وغیرہ سے تکلیف پہنچانا جیسے عمل روزآنہ کررہے ہیں۔ جس کی وجہ سے لڑکیوں اور خواتین میں کافی خوف و ہراس پایا جارہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر کوئی اِن غنڈہ عناصر کی حرکتوں پر اعتراض کرے تو یہ لوگ ان کے خلاف گالی گلوج کرنا شروع کردیتے ہیں۔ اس خاتون نے فلک نما پولیس پر الزام عائد کیا کہ پولیس نے مجرم پیشہ افراد اور غنڈہ عناصر کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے جس کی وجہ سے اِن افراد کو کسی کا بھی ڈر نہیں ہے ۔اس خاتون نے فلک نما پولیس اسٹیشن کے سی آئی سے اپیل کی ہے کہ وہ علاقے میں وقتاً فوقتاً طلائی گردی کرتے ر ہیں تاکہ غنڈہ عناصر کی حرکتوں کو رنگے ہاتھ پکڑسکیں

اور پولیس چیک پوسٹ کو دوبارہ کار کرد کریں تاکہ علاقہ کے عوام پرسکون ماحول میں زندگی بسر کرسکے۔نواب صاحب کنٹہ کے عوام نے یہ بھی شکایت کی ہے کہ علاقے کے کئی گھروں میں چوریاں بھی بہت ہورہی ہیں۔جس کی وجہ سے لوگوں کو ہزاروں روپیوں کا نقصان برداشت کرنا پڑرہا ہے۔یہاں اس بات کا ذکر بیجا نہ ہوگا کہ عین انتخابات سے قبل علاقے میں مقامی سیاسی پارٹی کے کارکن سرگرم رہتے ہیں ایسے میں اگر کوئی دوسری سیاسی پارٹی کے کارکن نظر آئیں تو حالات بگڑ سکتے ہیں۔اس لحاظ سے پولیس کے آوٹ پوسٹ کا کارکرد ہونا بھی بہت معنی رکھتا ہے۔ کیونکہ اس وقت ناخوشگوار واقعات کی روک تھام ہی ایک اہم مسئلہ ہے۔نواب صاحب کنٹہ کے عوام نے پولیس کمشنر سے اپیل کی ہے کہ یہاں پر موجود پولیس چیک پوسٹ کی دوبارہ کشادگی کے لئے احکامات جاری کریں تاکہ بستی کے مکینوں کو ہورہی مشکلات سے نجات حاصل ہوسکے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT