Sunday , February 25 2018
Home / کھیل کی خبریں / نوجوان ٹیم کو ریکارڈ چوتھی مرتبہ خطاب کا موقع

نوجوان ٹیم کو ریکارڈ چوتھی مرتبہ خطاب کا موقع

ماؤنٹ مانگنوئی۔2 فروری (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان راہول ڈراویڈ کی رہنمائی اور نوجوان بیٹسمین پرتھوی شا کی کپتانی میں آئی سی سی انڈر19 ورلڈ کپ میں شاندار کارکردگی کے ساتھ ناقابل شکست رہ کر فائنل میں پہنچی ہندستانی کرکٹ ٹیم کل یہاں آسٹریلیائی ٹیم کے خلاف میدان میں اترے گی اور دونوں ہی ٹیمیں ریکارڈ چوتھی مرتبہ عالمی چمپئن بننے سے ایک قدم دور ہیں۔ہندستانی انڈر19 ٹیم کے بیٹسمینوں اوربولروں نے اب تک جس طرح کا مظاہرہ کیا ہے اس کے بعد وہ خطاب کے مضبوط دعویداروں میں شمار کی جا رہی ہے ۔ ہندستان نے پاکستان کو سیمی فائنل میں 203 رنوں کے بڑے فرق سے شکست دے کر فائنل میں جگہ بنائی ہے جبکہ آسٹریلیا نے افغانستان کو چھ وکٹ سے شکست دی تھی۔نوجوان ٹیم نے لیگ مرحلے سمیت ٹورنمنٹ میں تمام پانچوں میچ جیتے ہیں اور وہ ناقابل شکست فائنل میں پہنچی ہے ۔ اس نے اپنے پہلے ہی لیگ مرحلے کے مقابلے میں آسٹریلیا کو 100 رنز سے شکست دی تھی اور اب اس سے ایک مرتبہ پھر اسی کارکردگی کو دہرانے کی امید کی جا رہی ہے ۔باصلاحیت کھلاڑیوں سے بھری اس ٹیم کی خصوصیت اس کا شاندار کھیل ہے اور اس نے ابھی تک بولنگ، بیٹنگ اور فیلڈنگ میں حیرت انگیز کارنامہ دکھایا ہے ۔پاکستان کے خلاف سیمی فائنل میں ٹیم نے اپنا بہترین کھیل کا مظاہرہ کرتے ہوئے روایتی حریف ٹیم کو صرف69 رن پر آؤٹ کردیا تھا جو آئی سی سی انڈر 19ورلڈ کپ کی تاریخ میں کسی ٹیم کا سب سے کم اسکور ہے ۔بیٹسمینوں میں شبھم، گل، اوپنر اور کپتان پرتھوی ،منجوت کالرا، ہاردک ڈیسائی کی کارکردگی بہترین رہی ہے وہیں بولروں میں شیوم ماوی، کملیش ناگر کوٹی، انکول رائے پر سبھی کی نگاہیں ٹکی ہوئی ہیں۔ ہندستانی ٹیم بھلے ہی ناقابل شکست اور بلند حوصلے کے ساتھ خطابی مقابلے کے لئے میدان میں اتر رہی ہو لیکن اسے آسٹریلیا کے خلاف کافی احتیاط برتنی ہوگی کیونکہ یہ دونوں ہی ٹیم انڈر19 ورلڈ کپ کی سب سے زیادہ کامیاب ٹیموں میں ہیں اور تین تین مرتبہ خطاب جیت چکی ہیں۔ ہندستان نے 2000ء، 2008 ء اور 2012ء میں یہ خطاب جیتا تھا تو آسٹریلیا نے 1988 ء ، 2002 ء اور 2010 ء میں ٹرافی حاصل کی ہے۔ڈراویڈ کی رہنمائی میں مضبوطی سے آگے بڑھ رہی نوجوان ٹیم کو لیگ کے پہلے ہی مقابلے میں آسٹریلیا کے خلاف ہی 100 رن سے ملی شاندار جیت نے بھی خوداعتمادی دی ہے جس میں ٹیم کے تینوں اوپنروں نے نصف سنچریاں بنائی تھیں۔ فی الحال سب کی نگاہیں ان کھلاڑیوں سے آخری میچ میں بھی اسی شاندار کھیل پر ٹکی ہیں۔ٹیم کے سرفہرست اسکوررشبھم نے ٹورنمنٹ میں 170.50 کی اوسط سے 341 رنز بنائے ہیں جس میں ناٹ آؤٹ 102رنوں کی شاندار اننگز بھی شامل ہے ۔ پرتھوی 232، منجوت (151)، ھاروک (110) ٹیم کے اہم اسکورر ہیں جبکہ بولروں میں انکول رائے 3.65 کے اوسط سے 12 وکٹ لے کر سب سے کامیاب ہیں۔ شیوم ماوی 3.77 کے اوسط سے آٹھ وکٹ، ناگرکوٹی 3.19 سے سات وکٹ کے ساتھ تیسرے اہم بولر ہیں۔

TOPPOPULARRECENT