Tuesday , December 12 2017
Home / Top Stories / نوٹوں کے چلن پر امتناع کے عوام پر مہلک اثرات

نوٹوں کے چلن پر امتناع کے عوام پر مہلک اثرات

۔500 اور 1000 کے نوٹ قبول کرنے سے دواخانہ کا انکار
ممبئی۔ 12 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) ممبئی میں گوونڈی علاقہ کے ساکن جوڑے جگدیش اور کرن شرما کیلئے 500 اور 1000 روپئے کے نوٹوں کا چلن بند کرنے حکومت کے فیصلہ کا نہ صرف تکلیف دہ بلکہ انتہائی تباہ کن اثر پڑا جس کے نتیجہ میں اس جوڑے کو اپنی نومولود لخت جگر سے محروم ہونا پڑا جب گوونڈی کے ایک خانگی ہاسپٹل نے اس جوڑے کو محض اس لئے واپس بھیج دیا کہ ان کے پاس خاطر خواہ نقد رقم نہیں تھی۔ بیان کیا جاتا ہے کہ کرن چہارشنبہ کو دردِ زہ میں مبتلا ہوگئی اور اس کا شوہر جیون جیوتی ہاسپٹل کیلئے سواری کا بندوبست کرنا نکل گیا جہاں گزشتہ چھ ماہ نے کرن کی زچگی کیلئے وقفہ وقفہ سے چیک اَپ کیا جارہا تھا۔ جگدیش نے کہا کہ اس ہاسپٹل نے اس کی بیوی کو محض اس لئے شریک کرنے سے انکار کردیا کیونکہ ان کے پاس 500 اور 1000 روپئے سے ہٹ کر دیگر کرنسی نوٹوں میں 6,000 روپئے فیس جمع کرنے کیلئے رقم نہیں تھی۔ جگدیش شرما نے کہا کہ ’’میں نے دواخانہ کے انتظامیہ سے بار بار 500 اور 1000 روپئے کی منسوخ شدہ نوٹ قبول کرنے کی ہدایت کی ہے لیکن انہوں نے اس درخواست کو قبول کرنے سے انکار کردیا‘‘۔ جگدیش نے کہا کہ اس دواخانہ نے فائیل دینے سے بھی انکار کردیا اور فائیل نہ ہونے کے سبب وہ اپنی بیوی کو کسی دوسرے دواخانہ میں بھی شریک نہ کرسکا۔ اس اثناء میں انہیں لڑکا تولد ہوگیا لیکن فائیل نہ ہونے کی وجہ سے کسی بھی دواخانہ نے اس کو شریک کرنے سے انکار کردیا اور اس لیت و لعل کے درمیان جمعرات کو بچہ فوت ہوگیا۔ متوفی کے باپ نے پولیس کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے ہاسپٹل حکام کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ پولیس نے کہا کہ دواخانہ کے خلاف ایف آئی آر درج کیا گیا ہے تاہم دواخانہ کے انتظامیہ نے جگدیش کے بیان کو غلط دعویٰ اور بکواس قرار دیا ہے۔ اس جوڑے نے ڈاکٹروں کی بے رحمی اور حکومت کے فیصلہ پر شدید غم و غصہ کا اظہار کیا۔

TOPPOPULARRECENT