Tuesday , January 23 2018
Home / شہر کی خبریں / نوٹ برائے ووٹ اسکام ‘ چندرا بابو نائیڈو کو نوٹس جاری کرنے کی تیاریاں عملا مکمل

نوٹ برائے ووٹ اسکام ‘ چندرا بابو نائیڈو کو نوٹس جاری کرنے کی تیاریاں عملا مکمل

حیدرآباد 16 جون (سیاست نیوز) نوٹ برائے ووٹ معاملہ میں صدر تلگودیشم و چیف منسٹر اے پی چندرا بابو نائیڈو کو تلنگانہ اے سی بی کی جانب سے نوٹس جاری کئے جانے کی تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں اور اس سے قبل تلنگانہ اے سی بی نے اہم پیشرفت کرتے ہوئے آج رات تلگودیشم رکن اسمبلی مسٹر سنڈرا وینکٹ ویریا کو نوٹس جاری کرتے ہوئے تحقیقاتی عہدیدار کے روبر

حیدرآباد 16 جون (سیاست نیوز) نوٹ برائے ووٹ معاملہ میں صدر تلگودیشم و چیف منسٹر اے پی چندرا بابو نائیڈو کو تلنگانہ اے سی بی کی جانب سے نوٹس جاری کئے جانے کی تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں اور اس سے قبل تلنگانہ اے سی بی نے اہم پیشرفت کرتے ہوئے آج رات تلگودیشم رکن اسمبلی مسٹر سنڈرا وینکٹ ویریا کو نوٹس جاری کرتے ہوئے تحقیقاتی عہدیدار کے روبرو پیش ہونے کی ہدایت دی ہے۔اس کارروائی کے اندرون ایک گھنٹہ اے سی بی نے تلگودیشم ایم ایل سی امیدوار مسٹر ویم نریندر ریڈی کو اُن کی رہائش گاہ واقع آدرش نگر پہونچ کر نوٹس حوالے کی اور تحقیقات کے لئے طلب کیا۔ یہ اہم فیصلہ ایسے وقت کیا گیا جبکہ چند گھنٹے قبل ہی ڈائرکٹر جنرل اینٹی کرپشن بیورو مسٹر اے کے خان نے چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ سے ملاقات کی تھی۔ ذرائع نے بتایا کہ کھمم کے ستوپلی حلقہ کی نمائندگی کرنے والے وینکٹ ویریا کے موبائیل فون ریکارڈ کے تجزیہ میں بیورو کو پتہ چلا کہ رکن اسمبلی نے نوٹ برائے ووٹ اسکام کے اہم ملزم بشپ ہیری سبسٹین سے کئی مرتبہ فون پر بات کی۔ بیورو نے تلگودیشم رکن اسمبلی کو فوجداری ضابطہ کی دفعہ 160 (اس دفعہ کے تحت تحقیقاتی عہدیدار زیردریافت کیس کیلئے کسی بھی شخص کو طلب کرسکتا ہے) کے تحت نوٹس جاری کی۔ بتایا جاتا ہے کہ اینٹی کرپشن بیورو کی ایک ٹیم نے ایم ایل اے کوارٹرس پہونچ کر رکن اسمبلی وینکٹ ویریا کے کوارٹر نمبر 208 پر نوٹس حوالے کرنے کی کوشش کی لیکن رکن اسمبلی کی عدم موجودگی پر نوٹس کو وہاں پر چسپاں کردیا گیا۔ اطلاعات کے مطابق تلنگانہ اے سی بی نے چندرا بابو نائیڈو کو بھی نوٹس جاری کرنے کی تیاری مکمل کرلی ہے جس کے نتیجہ میں ان کی مشکلات میں اضافہ کا سلسلہ جاری رہے گا ۔ یہ بھی قیاس کیا جارہا ہے کہ اے سی بی کی جانب سے نوٹس کی اجرائی کے بعد چندرا بابو نائیڈو کو گرفتار کرنے کی کوشش بھی کی جائیگی ۔ کہا گیا ہے کہ چندرا بابو نائیڈو ٹکنیکل بنیادوں پر اس کیس سے بچنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن ماہرین قانون کی رائے میں سپریم کورٹ کے ماضی میں دئے گئے فیصلوں کے مطابق اگر انہیں نوٹس جاری کی جاتی ہے تو ان کی گرفتاری بھی یقینی ہوسکتی ہے ۔ دو ہفتوں سے جاری نوٹ برائے ووٹ معاملہ اب اپنے منطقی انجام کی سمت پہونچ رہا ہے تو دونوں ریاستوں کی حکومتیں اپنی اپنی حکمت عملی کی تیاری میں مصروف ہیں۔ ہر حکومت دوسری کو نیچا دکھانے اور ہر جماعت اپنی حریف کے خلاف شکنجہ کسنے کی کوششوں میں مصروف ہے ۔ اطلاعات کے بموجب ریاستی اینٹی کرپشن بیورو کے سربراہ اے کے خان نے اس سارے معاملہ میں 13 صفحات پر مشتمل ایک جامع رپورٹ مرکزی حکومت کو پیش کردی ہے جس میں اس کیس میں دستیاب ثبوت و شواہد کی تفصیلات کو درج کیا گیا ہے ۔ باخبر ذرائع نے ادعا کیا ہے کہ اسی رپورٹ کی بنیاد پر مرکز نے بالواسطہ طور پر ریاستی حکومت کو اس کیس میں پیشرفت اور کارروائی کیلئے گرین سگنل دیدیا ہے ۔ چیف منسٹر آندھراپردیش چندرابابو نائیڈو کو بیورو کی جانب سے نوٹس کی قیاس آرائیوں کے پیش نظر تلگودیشم رکن اسمبلی وینکٹ ویریا کو نوٹس جاری کرنا اہمیت کا حامل ہے اور بیورو کے اِس اقدام سے چندرابابو نائیڈو کی مشکلوں میں اضافہ ہی ہوگا ۔ ذرائع نے بتایا کہ اس اسکام میں گرفتار تلگودیشم رکن اسمبلی ریونت ریڈی کو بیورو کی جانب سے حالیہ دنوں 4 دن کی پولیس تحویل میں لے کر تفتیش کی گئی تھی جس میں کئی اہم شخصیتوں کے نام افشا ہونے کی اطلاع ہے۔ باور کیا جاتا ہے کہ رکن راجیہ سبھا تلگودیشم سی ایم رمیش اور مرکزی مملکتی وزیر مسٹر سجنا چودھری کو بھی نوٹس جاری کی جاسکتی ہے ۔ قبل ازیں بیورو سربراہ اے کے خان نے آج چیف منسٹر تلنگانہ چندرشیکھر راؤ سے ملاقات کرکے کیس کی تحقیقات سے واقف کروایا اور اِس میں مسٹر چندرابابو نائیڈو کو نوٹس جاری کئے جانے اور قانونی پہلوؤں بشمول دائرہ کار پر تبادلہ خیال کی اطلاع ہے۔ رکن اسمبلی مسٹر ایس وینکٹ ویریا نے اُنھیں نوٹس جاری کئے جانے کی اطلاعات پر کہاکہ اُنھیں راست کوئی نوٹس حاصل نہیں ہوئی۔

TOPPOPULARRECENT