Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / نوٹ بندی ، 50 دن بعد مشکلات ختم ہوجائیں گی

نوٹ بندی ، 50 دن بعد مشکلات ختم ہوجائیں گی

The Prime Minister, Shri Narendra Modi at the inauguration ceremony of the Amul Cheese Plant and Whey Drying Pant, in Palanpur, Banaskantha, Gujarat on December 10, 2016.

اپوزیشن جماعتوں پر تنقید ، گجرات میں وزیراعظم مودی کا جلسہ عام سے خطاب
ڈیسا (گجرات)، 10 دسمبر (یو این آئی) نوٹوں کی منسوخی کے معاملے پر پارلیمنٹ میں جاری تعطل کے درمیان وزیر اعظم نریندر مودی نے آج کہا کہ اپوزیشن جماعتیں چونکہ اس مسئلے پر اپنے جھوٹ کو بے نقاب ہونے سے بچنے کے لئے انہیں لوک سبھا میں بولنے نہیں دے رہا اسی لئے وہ اپنی بات عوامی جلسوں کے ذریعے رکھ رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی کے 50 دن بعد لوگوں کی مشکلات آہستہ آہستہ کم ہو جائیں گی اور حالات معمول پر آ جائیں گے اور لوگوں کو موبائیل بینکنگ اور ای ادائیگی جیسی چیزوں کو اپنا لینا چاہئے تاکہ انہیں کبھی بھی بینکوں یا اے ٹی ایم کے سامنے قطار نہیں لگانی پڑے ۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ بدعنوان لوگوں کو اور نوٹوں کی دھاندلی کرنے والوں کو کسی قیمت پر نہیں چھوڑیں گے ۔مسٹر مودی نے یہاں اپنی آبائی ریاست گجرات کے بناس کانٹھا ضلع کے ڈیسا میں ایک جلسہ عام میں کہا کہ اگر موقع ملا تو وہ لوک سبھا میں بھی نوٹ بندي پر تفصیل سے اپنا موقف رکھیں گے ۔وزیر اعظم نے کہا کہ ایک الگ سیاسی نظریہ رکھنے کے باوجود صدر جمہوریہ نے بھی پارلیمنٹ میں جاری اپوزیشن کے ہنگامے اور تعطل کے سلسلے میں عوامی طور پر سخت تبصرہ کیا ہے ۔مسٹر مودی نے اپوزیشن سے بدعنوانی اور کالا دھن مخالف نوٹوں کی منسوخی کے معاملے میں حکومت کا ساتھ دینے کی بھی اپیل کی تاکہ ملک کو آگے لے جایا جا سکے ۔ انہوں نے اپنے خاص لہجے میں کہا، ‘پورے ملک میں اس بات کی بحث چل رہی ہے کہ نوٹوں کا کیا ہوگا؟’آپ مجھے بتایئے آٹھ تاریخ سے پہلے 100، 50، 20 کے نوٹوں کی کوئی قیمت تھی کیا؟ چھوٹوں کو کوئی پوچھتا تھا کیا؟ ہر کوئی 1000، 500 کے نوٹوں کی طرح صرف بڑوں کو ہی پوچھتا تھا۔ لیکن اس کے بعد چھوٹے نوٹوں اور چھوٹے لوگوں کی طاقت بڑھ گئی۔ میں نے غریب اور عام طبقے کی طاقت بڑھانے کے لئے ہی یہ فیصلہ کیا تھا’۔مسٹر مودی نے کہا، ‘پہلے ہر چیز میں کچے پکے بل کی بات ہوتی تھی۔نوٹوں کی بے تحاشہ چھپائي سے معیشت کا نظام اس بوجھ میں ہی دب گیا تھا۔میری لڑائی ہے دہشت گردی سے اور اس کو تقویت ملتی ہے جعلی نوٹوں سے ۔جعلی نوٹوں کے کاروباری جتنے ملک میں ہیں اس سے زیادہ باہر ہیں۔ نوٹ بندي کے بعد نکسلیوں کو اب لگتا ہے کہ مرکزی دھارے میں آنا چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT