Monday , December 11 2017
Home / دنیا / نوٹ بندی اور جی ایس ٹی مودی حکومت کے جرأتمندانہ فیصلے : چوہان

نوٹ بندی اور جی ایس ٹی مودی حکومت کے جرأتمندانہ فیصلے : چوہان

l کسی دیگر وزیراعظم کے بس کی بات نہیں
چین اور پاکستان کو انتباہ
l ہندوستا ن اب 1962ء والا ملک نہیں
سابق وزیردفاع جیٹلی کے بیان کا اعادہ
l ہندوستانی سفارتخانہ کی جانب سے منعقدہ
استقبالیہ تقریب سے خطاب

واشنگٹن ۔ 23 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان نے آج بالواسطہ طور پر پاکستان اور چین کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ آج کا ہندوستان وہ نہیں جو 1962ء میں ہوا کرتا تھا اور دہشت گردی معاملہ پر ہندوستان کسی کو بخشنے والا نہیں ہے اور نہ ہی کوئی سمجھوتہ کرے گا۔ یاد رہیکہ شیوراج سنگھ چوہان اس وقت امریکہ کے ایک ہفتہ طویل دورہ پر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اب 1962ء والا ملک نہیں ہے جس کا اندازہ چین کو بخوبی ہوچکا ہے کہ کس طرح ہندوستانی افواج کے عزائم نے انہیں دراندازی کئے گئے مقام ڈوکلام سے نکلنے پر مجبور کیا جس سے یہ واضح ہوچکا ہیکہ موجودہ وزیراعظم نریندر مودی کی قیادت میں اب ایک مضبوط اور مستحکم ہندوستان دنیا کے سامنے ابھر رہا ہے۔ ہندوستانی سفارتخانے کی جانب سے منعقدہ ایک استقبالیہ تقریب کے دوران مسٹر چوہان نے ہندوستانی نژاد امریکی شہریوں کے گروپ سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات کہی جس وقت انہوں نے یہ ریمارک کئے وہاں موجود تمام افراد نے تالیاں بجا کر ان کے بیان کا خیرمقدم کیا۔ مسٹر چوہان کے ریمارک نے ڈوکلام تنازعہ کے دوران اس وقت کے وزیردفاع ارون جیٹلی کے بیان کی یاد تازہ کردی جنہوں نے کہا تھا کہ یہ 2017ء کا زمانہ ہے اور ہندوستان کے دفاعی شعبہ نے بھی زبردست ترقی کرلی ہے۔ چین یہ نہ سمجھے کہ ہندوستان اب تک 1962ء میں سانس لے رہا ہے۔ چین نے انتباہ دیا تھا کہ ہندوستان کو تاریخ سے سبق سیکھنے کی ضرورت ہے جس کا ارون جیٹلی نے بھی منہ توڑ جواب دیا تھا۔ مسٹر چوہان نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی پر ہندوستان کسی سے کوئی سمجھوتہ نہیں کرسکتا۔ ہم پاکستان کو بھی ڈھکے چھپے انداز میں کوئی دھمکی نہیں دیتے۔ ہمیں جو بھی کہنا ہوتا ہے ڈنکے کی چوٹ پر کہتے ہیں کیونکہ یہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں کہ پاکستان دہشت گردی کی پشت پناہی کرنے والا ملک ہے اور اپنی سرزمین پر اس نے دہشت گردوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رکھی ہیں۔ انہوں نے ایک بار پھر اپنی بات دہراتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی پر ہندوستان کو کسی بھی ملک نے اگر مشتعل کرنے کی کوشش کی تو وہ اس کے دانت کھٹے کردے گا۔ اپنے خطاب کے دوران انہوں نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ اور وزیرخارجہ ریکس ٹلرسن کی جانب سے ہندوستان کے بارے میں دیئے گئے بیانات کا بھی حوالہ دیا۔ ہندی زبان میں اپنے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ ہندوستان ایک امن پسند ملک ہے اور اس نے کسی بھی ملک کو مشتعل نہیں کیا۔ انہوں نے موجودہ دور میں ہند ۔ امریکہ دوستی کو ایک ’’سنہرے دور‘‘ سے تعبیر کیا اور کہا کہ اس وقت دنیا میں دو سب سے بڑی جمہوریتیں موجود ہیں اور وہ ہندوستان اور امریکہ ہیں۔ مسٹر چوہان جاریہ ہفتہ نیویارک کا دورہ کرنے کے علاوہ واشنگٹن میں ’’انسانیت‘‘ کے موضوع پر پنڈت دین دیال اپادھیائے فورم کا افتتاحی کلیدی خطاب بھی دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان حالانکہ دہشت گردی کا عرصۂ دراز سے سامنا کررہا ہے لیکن مودی جی کی قیادت میں ہندوستان نے ایسے ممالک (خصوصی طور پر پاکستان) کے خلاف سرجیکل حملے کئے جنہوں نے دہشت گردوں کو پناہ دے رکھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈوکلام میں ہندوستانی فوج نے جن عزائم کا اظہار کیا اس کے بعد چینی فوج کو بھی متنازعہ مقام سے ہٹنا پڑا تھا۔ انہوں نے مودی حکومت کی دو اہم پالیسیوں ’’نوٹ بندی‘‘ اور ’’جی ایس ٹی‘‘ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ صرف نریندر مودی جیسے اعلیٰ پائے کے وزیراعظم ہی ایسے جرأتمندانہ فیصلے کرسکتے ہیں۔ دیگر کوئی ’’عام سے‘‘ وزیراعظم یہ فیصلہ ہرگز نہیں کرسکتے تھے جن کا واحد مقصد ملک سے بدعنوانی اور کالادھن کا خاتمہ تھا۔ جی ایس ٹی کا فیصلہ بھی مودی جیسی آہنی ارادوں والی حکومت نے کیا اور اس کا اطلاق بھی کیا اور اس طرح انہوں نے اس خواب کو شرمندہ تعبیر کردیا کہ ایک ملک کا صرف ایک ہی ٹیکس ہونا چاہئے اور اس طرح اب ہندوستان ہر شعبہ میں ترقی کے منازل طئے کرتا جارہا ہے اور ترقی کی یہ رفتار مودی جی کے وزیراعظم بننے کے بعد ہی تیز ہوئی ہے۔ ملک کی ترقی کے ہر مثبت فیصلے تیز رفتاری سے کئے جارہے ہیں۔ افراط زر میں کمی ہوئی ہے۔ اس موقع پر ہندوستانی سفیر متعینہ امریکہ نوتیج سرنا نے بھی شیوراج سنگھ چوہان کو ہندوستان کا ایک ترقی پسند، دوراندیش اور ویژنری قائد قرار دیا۔

TOPPOPULARRECENT