Wednesday , January 17 2018
Home / سیاسیات / نہرو کی پالیسیاں مستقل طور پر کارآمد : راہول گاندھی

نہرو کی پالیسیاں مستقل طور پر کارآمد : راہول گاندھی

نئی دہلی۔ 18 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نریندر مودی حکومت پر درپردہ تنقید کرتے ہوئے نائب صدر کانگریس راہول گاندھی نے آج کہا کہ جو لوگ جواہر لال نہرو کا نام تاریخ سے ’’مٹا دینے‘‘ کی کوشش کررہے ہیں، انہیں جان لینا چاہئے کہ پنڈت جواہر لال نہرو کی پالیسیاں مستقل طور پر کارآمد ہے۔ پنڈت نہرو کے موضوع پر بین الاقوامی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے

نئی دہلی۔ 18 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نریندر مودی حکومت پر درپردہ تنقید کرتے ہوئے نائب صدر کانگریس راہول گاندھی نے آج کہا کہ جو لوگ جواہر لال نہرو کا نام تاریخ سے ’’مٹا دینے‘‘ کی کوشش کررہے ہیں، انہیں جان لینا چاہئے کہ پنڈت جواہر لال نہرو کی پالیسیاں مستقل طور پر کارآمد ہے۔ پنڈت نہرو کے موضوع پر بین الاقوامی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہندوستان کے اولین وزیراعظم نے جمہوریت، سب کو ساتھ لے کر چلنے اور بااختیاری کیلئے زندگی بھر جدوجہد کی اور ان کی یہ پالیسیاں ہمیشہ کارآمد رہیں گی۔ دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس کے اختتامی خطاب میں صدر کانگریس سونیا گاندھی نے کہا کہ جیسا کہ نہرو کے نظریات کو آج چیلنج کیا جارہا ہے، ہمیں نہ صرف نہرو نے جو کچھ تعمیر کیا ہے، اس سے وابستہ رہنا چاہئے بلکہ جمہوریت ، سیکولرازم اور بااختیاری ،

سب کو ساتھ لے کر چلنے کی پالیسیوں کے استحکام کے لئے جنگ کرنی چاہئے۔نہرو کے نظریات کو مشترکہ مفادات کا معاملہ قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ تمام طبقات سے متعلق ہے ۔ سونیا گاندھی نے کہا کہ اعلامیہ اجتماعی وابستگی کی توثیق کرتا ہے تاکہ ان نظریات کو پروان چڑھایا جاسکے۔ سابق صدر گھانا جان کوفور نے اعلامیہ پڑھ کر سناتے ہوئے کہا کہ ہم 20 ممالک، ان کی سیاسی پارٹیوں اور تنظیموں کی نمائندگی کرتے ہوئے نہرو کے عالمی نظریہ اور ان کی وراثت کے موضوع پر منعقدہ بین الاقوامی کانفرنس میں شرکت کررہے ہیں۔

ہم دُنیا کو انتشار کے رجحانات یا معاشرہ میں صف آرائی پیدا کرنے کے رجحانات کے خلاف خبردار کرتے ہیں۔ بنی نوع انسان کے نمائندوں کی حیثیت ہم عہد کرتے ہیں کہ ان اقدار کو جو نہرو نے پیش کئے تھے، پروان چڑھائیں گے اور ان کے نظریات پر عمل کریں گے۔ ان کے جذبہ اور ان کے ورثے کو پوری دنیا میں پھیلائیں گے تاکہ امن غالب آسکے۔ہماری تمام سرگرمیاں تشدد کو مسترد کرنے کیلئے ہوں گی۔ کانفرنس میں نہرو کے عالمی نظریہ اور ورثہ کو اجاگر کیا گیا جس میں کئی بین الاقوامی قائدین اور نمائندگی نے جن کا تعلق ہندوستان اوربیرون ملک کی کئی سیاسی پارٹیوں سے تھا، شرکت کی ۔ سابق صدر افغانستان حامد کرزئی ، گھانا کے کوفور ، نائجیریا کے جنرل اوبا سانجو ، سابق وزیراعظم نیپال مادھو کے نیپال اور ڈورجی وانگمو وانکچک، راج ماتا بھوٹان، پاکستان کی اسماء جہانگیر، نامور افریقی مجاہد آزادی احمد کتھراڈا شامل تھے۔

TOPPOPULARRECENT