Thursday , February 22 2018
Home / دنیا / نیوکلیئرلانچ آرڈر سے انکار ممکن : امریکی جنرل

نیوکلیئرلانچ آرڈر سے انکار ممکن : امریکی جنرل

جزائر ہیتی کے سینکڑوں شہریوں کا حکومت کے کرپشن کے خلاف احتجاج‘ٹائر جلانے اور ناکہ بندی کے واقعات
ہیلی فیکس( امریکہ ) ۔19نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکی دفاعی کمان کے ایک اعلیٰ سطحی عہدیدار نے کہا کہ اگر صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ یا ان کے جانشینوں میں سے کوئی بھی نیوکلیئر ہتھیار کا آغاز کرنے کا حکم دیں تو اس سے انکار ممکن ہیں کیونکہ اس حکمنامہ کو غیرقانونی قرار دیا جاسکتا ہے ۔ امریکی فضائیہ کے جنرل جان ایٹن کمانڈر دفاعی کمان نے کہا کہ ہیلی فیکس بین الاقوامی صیانتی فورم کی ایک کمیٹی نے کہا کہ اگر وہ اور ٹرمپ باہم بات چیت کے بعد اس پس منظر میں حکمنامہ جاری کریں تو وہ صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ سے کھل کر کہہ دے گی کہ غیرقانونی کارروائی کے احکام تسلیم نہیں کئے جاسکتے ۔ جنرل نے کہا کہ اگر انکار کردیا جائے تو کیا ہوگا ۔ آپ تصور بھی نہیں کرسکتے ۔ اگر صدرامریکہ کوئی غیرقانونی حکمنامہ جاری کرے تو ان سے کہا جاسکتا ہے کہ غیرقانونی حکم کی پابندی نہیں کی جاسکتی ۔ پورٹ آپرنس سے موصولہ اطلاع کے بموجب ہیتی کے سینکڑوں اپوزیشن کارکنوں نے آج دارالحکومت فورٹ آ پرنس کی سڑکوں پر ایک احتجاجی جلوس نکالا جس میں سینکڑوں افراد شریک تھے ۔ احتجاجی حکومت کی بدعنوانی اور فوج کی نقل و حرکت کے خلاف احتجاج کررہے تھے ۔ فوری طور پر کسی کے زخمی ہونے کی کوئی اطلاع نہیں ملی ۔ احتجاجیوں نے ٹائر جلائے ‘ سڑکوں کی ناکہ بندی کی اور ایک لاری کو جس میں ریفریجریٹرس منتقل کئے جارہے تھے نذرآتش کردیا ۔ بعد احتجاجیوں نے آلات کی توڑ پھوڑ کی ۔ احتجاجی کہہ رہے تھے کہ وہ چوروں کی فوج نہیںچاہتے ‘ ان کا کہنا تھا کہ وہ ایسی فوج چاہتے ہیں جو ہمارے تحفظ کا تیقن دے ۔ غریب لوگوں کا خون نہ بہائے جو غربت زدہ پڑوسی ممالک کا خیال رکھے ۔ دیگر احتجاجی پولیس کارروائی کے خلاف جو پیر کے دن پڑوسی علاقہ عظیم وادی میں کی گئی تھی مخالفت میں نعرہ بازی کررہے تھے ۔ پولیس نے تسلیم کیا کہ کم از کم 7شہری انسداد گروہ بندی کارروائی کے دوران ہلاک ہوگئے ۔ جن میں دو پولیس عہدیدار بھی شامل تھے جنہیں گولی مار کر ہلاک کردیا گیا ۔ احتجاجیوں کی بڑھتی ہوئی برہمی پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے ایک جسٹس آف پیس کو مقام واردات پر روانہ کیا گیا اور مبینہ طور پر اُس نے احتجاجی شہریوں کو امن کا پیغام پہنچایا ۔ چیف آف آرمڈفورسیس کو ذمہ داری دی گئی ہے کہ وہ ایک فوجی کمانڈ اس علاقہ میںقائم کریں ۔

TOPPOPULARRECENT