نیپال میں7.3 شدت کا زلزلہ اور مابعد زلزلہ 7جھٹکے،50ہلاک

کٹھمنڈو۔/12مئی، ( سیاست ڈاٹ کام) ایک نئے 7.3 شدت کے زلزلہ اور 7 مابعد زلزلہ تازہ جھٹکوں نے نیپال کو دہلاکر رکھ دیا جبکہ کم از کم 50افراد ہلاک ہوگئے اور نیپال میں دہشت زدہ عوام آج تباہ کن عفریتی زلزلہ سے گھبراکر جو تین ہفتے قبل پیش آیا تھا اور جس میں 8000انسانی جانیں ضائع ہوئی تھیں‘ جس کی دہشت ہنوز اُن پر طاری تھی گھروں سے باہر نکل آئے۔ دورا

کٹھمنڈو۔/12مئی، ( سیاست ڈاٹ کام) ایک نئے 7.3 شدت کے زلزلہ اور 7 مابعد زلزلہ تازہ جھٹکوں نے نیپال کو دہلاکر رکھ دیا جبکہ کم از کم 50افراد ہلاک ہوگئے اور نیپال میں دہشت زدہ عوام آج تباہ کن عفریتی زلزلہ سے گھبراکر جو تین ہفتے قبل پیش آیا تھا اور جس میں 8000انسانی جانیں ضائع ہوئی تھیں‘ جس کی دہشت ہنوز اُن پر طاری تھی گھروں سے باہر نکل آئے۔ دورافتادہ پہاڑی اضلاع میں جو ملک کے دارالحکومت کے شمال مشرق میں واقع ہیں کم از کم 50افراد ہلاک اور1100سے زیادہ زخمی ہوگئے۔ جسمانی نقصان اس سے بھی کہیں زیادہ ہے۔ غیر سرکاری اطلاعات کے بموجب ہلاکتوں کی تعداد 60ہے۔ زلزلہ آج 12:35بجے دوپہر کٹھمنڈو کے مشرق میں 80کیلو میٹر کے فاصلے پر ماؤنٹ ایورسٹ کے قریب ایک کم گہری وادی میں جو 15کلو میٹر گہری ہے محسوس کیا گیا۔ امریکی ارضیاتی سروے کے بموجب سابقہ زلزلے کی شدت ریختر پیمانہ پر 7.4تھی۔ مابعد زلزلہ جھٹکے کی شدت 7.3 ریکارڈ کی گئی۔ زلزلہ ڈولاکھا اور سندھوپال چوک کے علاقوں کو بدترین متاثر کرگیا۔ کم از کم 26افراد ڈولاکھا میں ہلاک ہوئے پولیس کے بموجب جملہ 75اضلاع تازہ زلزلہ سے متاثر ہوئے۔ زلزلہ کا دوسرا جھٹکہ جس کی شدت 6.3تھی تقریباً 30منٹ بعد محسوس کیا گیا جس کی وجہ سے دہشت زدہ شہری سڑکوں پر دوڑنے لگے۔ امریکی ارضیاتی سروے کے بموجب 5مزید مابعد زلزلہ جھٹکے جن کی شدت ریختر پیمانہ پر 5سے زیادہ ریکارڈ کی گئی،دوسرے جھٹکے کے بعد محسوس ہوئے۔ ہندوستانی محکمہ موسمیات کے بموجب پہلے زلزلہ کے بعد کم از کم 7مزید زلزلے کے جھٹکے دو گھنٹے سے بھی کم وقت میں محسوس ہوئے۔ پولیس کے بموجب کئی مکان اس زلزلہ سے منہدم ہوگئے۔ تازہ زلزلہ سے عوام میں بڑے پیمانے پر دہشت پھیل گئی جو 7.9شدت کے مہلک زلزلے کے بعد جو 25اپریل کو آیا تھا کھلے میدانوں میں مقیم ہیں۔ تمام دستیاب ہیلی کاپٹرس، طبی ٹیم، ایس ایس آر کو ڈولاکھا اور سندھپال چوک جلد ہی روانہ کردیا جائے گا۔

نیپال کے قومی ہنگامی کارروائی مرکز کے بموجب ہندوستانی فضائیہ 8ہیلی کاپٹر نیپال میں تعینات کرچکی ہے ان میں سے ایک نے آج کے زلزلہ کے بعد فضائی سروے کیا۔ پولیس کے بموجب پہلے زلزلہ کے بعد کم از کم سات مزید جھٹکے دو گھنٹے سے بھی کم وقت میں محسوس کئے گئے جن کی وجہ سے کئی مکانات منہدم ہوگئے۔ نیپال کے واحد بین الاقوامی ایرپورٹ تریبھون انٹر نیشنل ایرپورٹ کو مختصر سے وقفہ کیلئے عہدیداروں نے بند کردیا اور کٹھمنڈو آنے والے تمام طیاروں کو دوسرے مقامات پر روانہ ہونے کی ہدایت دی گئی۔ عہدیداروں نے تمام اسکول آئندہ دو ہفتوں کیلئے بند کردینے کے احکام دیئے۔ کٹھمنڈو میں زلزلہ زیادہ شدید تھا جہاں لوگ اپنے گھروں سے باہر دوڑتے ہوئے نکل گئے اور بعض نے رونا شروع کردیا۔ عہدیداروں نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ کھلے میدانوں میں قیام کریں۔ زلزلہ کے جھٹکے سے زمین کھسکنے اور عمارتوں کے منہدم ہونے کے واقعات پیش آئے۔ کٹھمنڈو کا صدر دواخانہ زخمی مریضوں سے پُر ہے۔ آج کا زلزلہ بہار، مغربی بنگال اور یو پی کے کئی علاقوں کو متاثر کرگیا۔

مشرقی اور شمال مشرقی ہند میں ہلاک ہونے والوں کی جملہ تعداد تاحال 17ہوگئی ہے۔ زلزلے کے جھٹکے چین میں بھی محسوس کئے گئے۔ تبت میں ایک خاتون ہلاک ہوگئی۔ سکم میں بھی طاقتور زلزلہ کا جھٹکہ محسوس کیا گیا۔ تاہم کسی جانی یا مالی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔نئی دہلی سے موصولہ اطلاع کے بموجب بلند شدت کے زلزلے کا جھٹکہ جس کی شدت ریختر پیمانہ پر 7.3تھی اور جس کا مبداء نیپال میں تھا کئی مشرقی اور شمال مشرقی ہند کے علاقوں کو متاثر کرگیا۔ کم ازکم 17افراد ہلاک ہوگئے جن میں سے 16بہار میں ہلاک ہوئے جس کی وجہ سے بہار میں دہشت پھیل گئی۔ مرکزی وزارت داخلہ کے بموجب سب سے زیادہ ہلاکتیں بہار میں واقع ہوئیں۔ 25اپریل کے زلزلہ سے بھی بہار میں58افراد ہلاک ہوئے تھے جو پورے ملک میں سب سے زیادہ تعداد میں ہلاکتیں تھیں۔ دہلی میں کئی عمارتوں کا فوری تخلیہ کرادیا گیا۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے زلزلہ کے بعد حالات کا جائزہ لیا اور عہدیداروں کو ہدایت دی کہ چوکس رہیں اور فوری راحت رسانی کی کارروائی کریں۔ وزارت داخلہ مختلف ریاستوں سے معلومات حاصل کررہی ہے جس سے زلزلہ کی وجہ سے ہونے والی ہلاکتوں کی درست تعداد معلوم کی جاسکے۔ آفات سماوی سے نمٹنے والی قومی فورس کو چوکس کردیا گیا ہے۔ مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ اور ڈائرکٹر جنرل آئی ایم ڈی ایل ایس راٹھور نے کہا کہ مابعد زلزلے کے جھٹکے کئی ہفتے یا کئے مہینے جاری رہ سکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT