Saturday , June 23 2018
Home / ہندوستان / وائس چانسلر علی گڑھ یونیورسٹی پر قومی کمیشن برائے خواتین کی تنقید

وائس چانسلر علی گڑھ یونیورسٹی پر قومی کمیشن برائے خواتین کی تنقید

نئی دہلی ۔ 12 ۔ نومبر (سیاست ڈاٹ کام) قومی کمیشن برائے خواتین نے وائس چانسلر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اس متنازعہ تبصرہ کی سخت مذمت کی جس میں انہوں نے کہا کہ لائبریری میں لڑکیوں کو داخلہ دینے سے لڑکے زیادہ راغب ہوں گے۔ وائس چانسلر نے کل کہا تھا کہ انڈر گریجویٹ طالبات کو لائبریری میں نہیں آنا چاہئے ۔ اگر انہیں داخلہ دیا گیا تو لڑکے ان ک

نئی دہلی ۔ 12 ۔ نومبر (سیاست ڈاٹ کام) قومی کمیشن برائے خواتین نے وائس چانسلر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اس متنازعہ تبصرہ کی سخت مذمت کی جس میں انہوں نے کہا کہ لائبریری میں لڑکیوں کو داخلہ دینے سے لڑکے زیادہ راغب ہوں گے۔ وائس چانسلر نے کل کہا تھا کہ انڈر گریجویٹ طالبات کو لائبریری میں نہیں آنا چاہئے ۔ اگر انہیں داخلہ دیا گیا تو لڑکے ان کے پیچھے دوڑنے لگیں گے۔ صدرنشین کمیشن للیتا کمارا منگلم نے کہا کہ وہ وائس چانسلر کے موقف سے بالکل اتفاق نہیں کرسکتیں۔ انہوں نے کہا کہ کیا ہمارے ملک کے لڑکے اس قدر کمزور ہوگئے ہیں؟ کمارا منگلم نے کہا کہ بعض لوگ یہ سوچتے ہیں کہ وہ جو چاہے کرسکتے ہیں اور کچھ ہونے والا نہیں لیکن اب خواتین میں بیداری آچکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ خواتین کے بارے میں عوامی ذہنیت کو بدلنے کی ضرورت ہے۔ معاشی پسماندگی دور کرنے کیلئے کئی پروگرامس چلائے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی ترقی میں 45 فیصد خواتین کی آبادی کو شامل کرنا ضروری ہے۔

وائس چانسلر اپنے موقف پر قائم
اس دوران جاریہ تنازعہ کی پرواہ کئے بغیر وائس چانسلر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ضمیرالدین شاہ نے کہا کہ وہ اپنے متنازعہ تبصرہ پر قائم ہیں۔ وزارت فروغ انسانی وسائل کو آج وائس چانسلر کی روانہ کردہ رپورٹ موصول ہوئی تاہم مزید تفصیلات طلب کی گئیں۔ ضمیر الدین شاہ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ یہ قوانین ابتداء ہی سے برقرار ہے اور انڈر گریجویٹ و پوسٹ گریجویٹ طالبات کی رسائی پر پابندی عائد ہے۔

TOPPOPULARRECENT