Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / وائی ایس آر کانگریس پارٹی سے آندھرا پردیش قانون ساز اسمبلی کا اجلاس بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ

وائی ایس آر کانگریس پارٹی سے آندھرا پردیش قانون ساز اسمبلی کا اجلاس بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ

ریاست میں جنگل راج چلنے کا الزام ، صدر جمہوریہ ہند کو مکتوب
حیدرآباد ۔ 27 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : صدر وائی ایس آر کانگریس پارٹی و قائد اپوزیشن آندھرا پردیش جگن موہن ریڈی نے صدر جمہوریہ رامناتھ کویند کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے اسمبلی اجلاس کے بائیکاٹ کرنے کی وجوہات سے واقف کرایا ۔ واضح رہے کہ آئندہ ماہ سے منعقد ہونے والے آندھرا پردیش اسمبلی اجلاس کا بائیکاٹ کرنے کا وائی ایس آر کانگریس پارٹی نے فیصلہ کیا ہے ۔ اپنے مکتوب میں جگن موہن ریڈی نے بتایا کہ چیف منسٹر آندھرا پردیش ریاست میں سیاسی انحراف پالیسی کو فروغ دے رہے ہیں ۔ سیاسی عہدے اور دوسری چیزوں کا لالچ دیتے ہوئے وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے ارکان اسمبلی کو تلگو دیشم میں شامل کرلینے کی شکایت کی ہے ۔ سیاسی وفاداریاں تبدیل کرنے والے ارکان اسمبلی ارکان قانون ساز کونسل کے خلاف کارروائی کرنے کی نوٹس دینے پر اسپیکر اسمبلی اور صدر نشین قانون ساز کونسل نے ابھی تک کوئی مثبت ردعمل کا اظہار نہیں کیا ہے ۔ آندھرا پردیش میں جمہوری حکومت کا نام و نشان نہیں ہے ۔ جنگل راج چل رہا ہے ۔ عوامی دولت کو لوٹ لیا جارہا ہے ۔ 41 ماہ کے دوران حکومت کی جانب سے 1,09,422 کروڑ روپئے کا قرض حاصل کرتے ہوئے ریاست کے ہر شخص کو یہاں تک کہ پیدا ہونے والے ہر بچے کو مقروض کردیا گیا ہے ۔ اسمبلی کا اجلاس غیر جمہوری انداز میں چلایا جارہا ہے ۔ ایوانوں میں اپوزیشن کی آواز کا گلا گھونٹ دیا جارہا ہے ۔ آندھرا پردیش میں جاری غیر جمہوری سرگرمیوں کو روکنے کے لیے مداخلت کرنے کی جگن موہن ریڈی نے اپنے مکتوب میں صدر جمہوریہ سے اپیل کی ہے ۔ تلگو دیشم حکومت کی بے قاعدگیوں اور بدعنوانیوں کو 5 صفحات پر مشتمل مکتوب کے ذریعہ صدر جمہوریہ کو روانہ کیا گیا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT