Monday , November 20 2017
Home / شہر کی خبریں / وائی ایس آر کانگریس کے واحد رکن اسمبلی بھی ٹی آر ایس میں شامل

وائی ایس آر کانگریس کے واحد رکن اسمبلی بھی ٹی آر ایس میں شامل

چندرا بابو اور جگن کا کھیل اب ختم ہوچکا ہے : کے سی آر
دونوں آندھرائی قائدین پر تلنگانہ کے آبپاشی پراجکٹوں میں رکاوٹیں پیدا کرنے کا الزام
حیدرآباد۔ 4۔ مئی  ( سیاست نیوز) وائی ایس آر کانگریس پارٹی کا آج تلنگانہ میں عملاً اس وقت صفایا ہوگیا جب اس کے ریاستی صدر اور تلنگانہ میں واحد رکن پارٹی پی سرینواس ریڈی نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی موجودگی میں ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کرلی۔ ان کے ہمراہ ریاست میں وائی ایس آر کانگریس کے واحد رکن اسمبلی پی وینکٹیشورلو بھی ٹی آر ایس میں شامل ہوگئے۔ اس سلسلہ میں تلنگانہ بھون میں تقریب منعقد کی گئی اور چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے دونوں قائدین کا پارٹی میں استقبال کیا۔ ان کے ہمراہ بڑی تعداد میں مجالس مقامی کے نمائندے بھی ٹی آر ایس میں شامل ہوگئے ۔ کھمم ضلع کے پالیرو اسمبلی حلقہ کے ضمنی انتخاب کے پس منظر میں ان قائدین کی شمولیت اہمیت کے حامل ہے۔ ضمنی انتخاب میں پارٹی کی کامیابی کو یقینی بنانے اور کھمم میں ٹی آر ایس کو مستحکم کرنے کیلئے ان قائدین کو شامل کیا گیا۔ اس موقع پر ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہری ، ریاستی وزراء این نرسمہا ریڈی ، ٹی ناگیشور راؤ کے علاوہ کئی ارکان اسمبلی و کونسل موجود تھے۔ چیف منسٹر نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چندرا بابو نائیڈو اور جگن موہن ریڈی پر الزام عائد کیا کہ وہ تلنگانہ میں آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر میں رکاوٹ پیدا کرنے کی خوشش کر رہے ہیں۔ کے سی آر نے کہا کہ اب بابو اور جگن کا کھیل ختم ہوچکا ہے اور ان کی کوئی بھی سازش کامیاب نہیں ہوگی۔ عوام کے حقوق کیلئے ٹی آر ایس حکومت کی جدوجہد جاری رہے گی اور آبپاشی پراجکٹ کی تعمیر کو کوئی بھی طاقت روک نہیں سکتی۔

چیف منسٹر نے اعلان کیا کہ چاہے کچھ بھی ہوجائے وہ اپنے وعدہ کے مطابق تلنگانہ کی ایک کروڑ ایکر اراضی کو پانی سیراب کریں گے۔ انہوں نے تلنگانہ کے پراجکٹس کے خلاف جگن موہن ریڈی کی بھوک ہڑتال اور آندھراپردیش کابینہ میں مخالف پراجکٹ قرارداد کی منظوری کو افسوسناک قرار دیا۔ کے سی آر نے کہا کہ ٹی آر ایس چاہتی ہے کہ دونوں پڑوسی ریاستیں باہمی بھائی چارہ کے ساتھ کام کریں اور اپنے عوام کی بہتر خدمت کریں۔ انہوں نے کہا کہ آندھراپردیش کی حکومت چاہتی ہے کہ تلنگانہ کے عوام کو خوشحالی نصیب نہ ہو۔ یہی وجہ ہے کہ وہ پراجکٹ کی تعمیر پر سیاست کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کرشنا اور گوداوری پر تلنگانہ کا بھی مکمل حق ہے۔ چیف منسٹر نے آندھرائی حکمرانوں پر تلنگانہ کی ترقی نظر انداز کرنے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ گزشتہ 50 برسوں میں تلنگانہ کے ساتھ ہر شعبہ میں ناانصافی کی گئی ہے۔ رکن پارلیمنٹ پی سرینواس ریڈی نے کہا کہ پالمور پراجکٹ کے خلاف جگن موہن ریڈی کے دھرنے کو روکنے کیلئے وہ پہنچے اور انہوں نے جگن کو مشورہ دیا کہ وہ احتجاج سے باز آئیں کیونکہ تلنگانہ میں پارٹی اور عوام کو نقصان ہوگا۔ سرینواس ریڈی کے مطابق جگن موہن ریڈی نے واضح کردیا کہ انہیں آندھرائی عوام کے مفادات عزیز ہیں۔ ان کے اس جواب کے بعد سرینواس ریڈی نے وائی ایس آر کانگریس سے استعفیٰ دینے کا فیصلہ کرلیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ تلنگانہ عوام کی خدمت کے جذبہ سے ٹی آر ایس میں شامل ہوئے ہیں۔ چیف منسٹر کی ستائش کرتے ہوئے سرینواس ریڈی نے کہا کہ 2019 ء میں نئی دہلی کی سیاست میں کے سی آر کا اہم رول رہے گا ۔ رکن اسمبلی وینکٹیشورلو نے کہا کہ کے سی آر کی جدوجہد کے نتیجہ میں تلنگانہ ریاست حاصل ہوئی ہے۔ اس موقع پر کھمم سے تعلق رکھنے والے قائدین کی کثیر تعداد موجود تھی۔

TOPPOPULARRECENT