Friday , January 19 2018
Home / شہر کی خبریں / والدین کی فرمانبرداری کامیابی کی کلید

والدین کی فرمانبرداری کامیابی کی کلید

محنت ، جستجو اور تعلیم سے غربت کا مقابلہ ، حرمین شریفین کے نٹ ورکنگ سیکوریٹی انجینئر محمد الیاس سے بات چیت

محنت ، جستجو اور تعلیم سے غربت کا مقابلہ ، حرمین شریفین کے نٹ ورکنگ سیکوریٹی انجینئر محمد الیاس سے بات چیت
حیدرآباد ۔ 12 ۔ اگست : میں نے تعلیم حاصل نہیں کی اس کا مجھے افسوس ہے لیکن میں نے اس بات کا تہیہ کرلیا تھا کہ اپنی اس خامی اور کمی کو اپنے بچوں کے ذریعہ ضرور دور کرلوں گا انہیں ہر حال میں زیور تعلیم سے آراستہ کروں گا ۔ انہیں بیرون ملک اعلیٰ تعلیم کے لیے روانہ کرتے ہوئے اپنے پیارے نبی ﷺ کے اس ارشاد پاک پر عمل کروں گا جس میں آپ ﷺ نے فرمایا ’ اگر علم حاصل کرنے کے لیے تمہیں چین بھی جانا پڑے تو جاؤ ‘ اگرچہ میں بیرون ملک برسرروزگار تھا لیکن اپنے دو بیٹوں کی تعلیم اور ان کی تربیت کے لیے وطن واپس آگیا اور اللہ تعالی نے مجھے اپنی محنت کا صلہ عطا کیا ۔ بچوں کو زیور تعلیم سے آراستہ کرنے کا جو مقصد تھا اسے اللہ نے اپنے فضل و کرم اور حضور اکرم ﷺ کے صدقہ میں پورا کیا ۔ میں نے زندگی میں غربت سے کافی مقابلہ کیا ۔ اور آج بچوں کی تعلیم میرے لیے راحت ثابت ہوئی ہے ۔ یہ خیالات یاقوت پورہ کے ر ہنے والے جناب محمد یحییٰ صدیقی کے ہیں جن کے دونوں فرزندان انجینئر ہیں ۔ بڑے فرزند محمد الیاس نے کمپیوٹر سائنس سے انجینئرنگ کی اور پھر لندن سے سیکوریٹی کے مضمون میں ماسٹرس کیا ۔ نیو اعزہ اسکول ملک پیٹ سے اسکولی تعلیم ، رتنا جونیر کالج نارائن گوڑہ سے انٹر اور انوارالعلوم انجینئرنگ کالج سے کمپیوٹر سائنس میں انجینئرنگ کرنے والے محمد الیاس فی الوقت الدئاسہ العامہ لشوؤن المسجد الحرام و المسجد النبویؐ ( حرمین شریفین کے انتظامات کی نگرانی کرنے والے ادارہ ) میں سیکوریٹی انجینئر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں اس ادارہ یا دفتر کے سربراہ امام حرم شریف ( شیخ عبدالرحمن السدیس ہیں ) جب کہ نائب سربراہ کے عہدہ پر ناصر الخظیم فائز ہیں ۔ محمد الیاس کو اس بات کا اعزاز حاصل ہے کہ وہ حرمین شریفین کے نٹ ورک سیکوریٹی کے عملہ میں واحد ہندوستانی ہیں جب کہ عملہ کے زیادہ تر ارکان سعودی شہری ہیں ۔ حرمین شریفین میں بہترین نٹ ورک سیکوریٹی نظام اور حجاج کرام اور معتمرین کو مفت وائی فائی سہولت کی فراہمی میں ان کی مہارت اور نمایاں خدمات کو دیکھتے ہوئے امام کعبہ شیخ عبدالرحمن السدیس کے ہاتھوں انہیں توصیف نامہ بھی پیش کیا گیا ۔ ایک ملاقات میں محمد الیاس صدیقی نے بتایا کہ وہ 14 ماہ سے حرم شریف میں خدمات انجام دے رہے ہیں جس کے لیے وہ بارگاہ رب العزت میں ہمیشہ سجدہ شکر بجالاتے ہیں ۔ ان کی خدمات کی کافی ستائش کی گئی ہے اور اللہ کے فضل سے کئی ایوارڈس مل چکے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں اس ہونہار حیدرآبادی نوجوان نے بتایا کہ اللہ تعالیٰ نے ان کے ماں باپ کی محنت دعاؤں کے باعث ہی ان پر خاص کرم کیا ہے ۔ جس کے نتیجہ میں وہ آج حرمین شریفین میں خدمات انجام دے رہے ہیں ۔ انہیں عازمین حج اور معتمرین کو نٹ ورک سیکوریٹی سسٹم کے ذریعہ وائی فائی اور دیگر خدمات فراہم کرتے ہوئے غیر معمولی روحانی خوشی محسوس ہوتی ہے ۔ اس سوال پر کہ حیدرآبادی نوجوانوں کو وہ کیا پیام دیں گے ؟ محمد الیاس نے کہا کہ ہمارے نوجوانوں کو کبھی بھی حالات سے مایوس نہیں ہونا چاہئے ۔ وہ خود کو ایسے قابل بنائیں کہ غربت میں بھی نام پیدا ہوجائے ۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ اپنے والدین کی فرمانبرداری ان کی خدمت میں کوئی کسر نہ چھوڑیں کیوں کہ والدین کو محبت کی نظر سے دیکھنا بھی عبادت ہے ۔ ان کی مسکراہٹیں اور خوشیاں ہماری کامیابیوں و کامرانیوں کی راہیں ہموار کرتی ہیں ۔ محمد الیاس اور ان کے بھائی محمد اسحاق جو ایم ٹیک کررہے ہیں کا کہنا ہے کہ ان کے والد محمد یحییٰ صدیقی اور والدہ طاہرہ بیگم کی سخت محنت کے نتیجہ میں ہی وہ آج اس مقام پر کھڑے ہیں ۔ نوجوانوں کوا پنے والدین کی فرمانبرداری کے ساتھ علم پر خصوصی توجہ دیناچاہئے ۔ غربت کا رونا رونے کے بجائے غربت کے خاتمہ کی کوشش کرنی چاہئے تب ہی زندگی کامیاب ہوسکتی ہے۔ جناب محمد یحییٰ صدیقی نے اپنے دونوں ہونہار فرزندان کے ہمراہ ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں سے ملاقات کی ۔ ایڈیٹر سیاست نے محمد الیاس کی ستائش کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنی قابلیت اور محنت کے ذریعہ اپنے والدین خاندان اور ملک و ملت کا نام روشن کررہے ہیں ۔۔[email protected]

TOPPOPULARRECENT