Wednesday , December 12 2018

وجئے واڑہ میں تلنگانہ مزدوروں پر حملہ کی مذمت، ملزمین کیخلاف کارروائی کا مطالبہ

حیدرآباد ۔ 20 ۔ جنوری (سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے فلور لیڈر ای راجندر نے وجئے واڑہ میں تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے مزدوروں پر حملے کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔ اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے راجندر نے کہا کہ سیما آندھرا کے عناصر نے اس حملہ کے ذریعہ اپنی نفرت کا مظاہرہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف سیما آندھرا قائدین متحدہ ریاست کا

حیدرآباد ۔ 20 ۔ جنوری (سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے فلور لیڈر ای راجندر نے وجئے واڑہ میں تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے مزدوروں پر حملے کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔ اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے راجندر نے کہا کہ سیما آندھرا کے عناصر نے اس حملہ کے ذریعہ اپنی نفرت کا مظاہرہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف سیما آندھرا قائدین متحدہ ریاست کا نعرہ لگا رہے ہیں تو دوسری طرف سیما آندھرا علاقوں میں تلنگانہ ملازمین اور ورکرس پر حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔ سابق میں بھی تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے ملازمین پر حملوں کے واقعات پیش آچکے ہیں۔ راجندر نے کہا کہ ان حالات میں متحدہ آندھرا کا نعرہ لگانا مضحکہ خیز ہے ۔ سیما آندھرا عوام کو جب تلنگانہ والوں سے اس قدر نفرت ہے تو پھر متحدہ ریاست کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ حملے کے ذمہ داروں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔ راجندر نے اسمبلی میں مسودہ بل پر مباحث کے دوران وزیر امور مقننہ شلیجا ناتھ کے مخالف تلنگانہ ریمارکس پر سخت تنقید کی ۔ انہوں نے شلیجا ناتھ کو انتباہ دیا کہ وہ اپنے رویے کو تبدیل کریں ورنہ تلنگانہ عوام کی برہمی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ راجندر نے سیما آندھرا ارکان کی جانب سے اشتعال انگیز تقاریر کو افسوسناک قرار دیا اور کہا کہ بل پر مباحث کے دوران سیما آندھرا قائدین تاریخ کو مسخ کرتے ہوئے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے سیما آندھرا ارکان کو مشورہ دیا کہ وہ حقائق کی بنیاد پر اپنے موقف کا اظہار کریں۔ انہوں نے کہا کہ سیما آندھرا کے سرمایہ داروں نے تلنگانہ وسائل پر اپنا تسلط قائم کرلیا جس کے خلاف تلنگانہ عوام نے جدوجہد کی۔ ناانصافیوں کے خلاف شروع کی گئی علحدہ تلنگانہ کی جدوجہد کی توہین ناقابل برداشت ہے۔ انہوں نے نظام حیدرآباد کے خلاف سیما آندھرا ارکان کی زہر افشانی کی بھی مذمت کی اور کہا کہ نظام دور حکومت میں رعایا کی فلاح و بہبود کیلئے کئی ایک قدم اٹھائے گئے ۔ راجندر نے مختلف صنعتی اداروں کے قیام کے ذریعہ ہزاروں افراد کیلئے روزگار کے مواقع فراہم کرنے اور تعلیمی سہولتوں کی فراہمی جیسے اقدامات کا ذکر کیا ۔ انہوں نے عثمانیہ یونیورسٹی اور کئی دواخانوں کے قیام کو نظام کا کارنامہ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ نظام کے فلاحی اقدامات کو سیما آندھرا عوام نظرانداز نہیں کرسکتے۔ راجندر نے کہا کہ سیما آندھرا قائدین کا یہ دعویٰ بے بنیاد ہے کہ ان کے باعث حیدرآباد کی ترقی ہوئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حیدرآباد کے آندھراپردیش میں انضمام کے وقت یہاں عوام کیلئے تمام بنیادی سہولتیں فراہم کردی گئی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ دلتوں اور پسماندہ طبقات پر مظالم سیما آندھرا علاقوں کی روایت ہے اور کارم چیڑو اور چنڈور میں دلتوں پر مظالم کے واقعات کو بھلایا نہیں جاسکتا۔ انہوں نے سیما آندھرا قائدین سے کہا کہ وہ اپنے علاقوں کی ترقی کیلئے مرکزی حکومت سے فنڈس کے حصول کی کوشش کریں۔ بجائے اس کے تلنگانہ اور اس کے عوام کی توہین کی جائے۔

TOPPOPULARRECENT