Sunday , December 17 2017
Home / ہندوستان / وزارت دفاع میں سابقہ پالیسیوں کی برقراری کا وعدہ

وزارت دفاع میں سابقہ پالیسیوں کی برقراری کا وعدہ

ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد ارون جیٹلی کا تیقن ۔ جملہ حالات سے آگہی حاصل کی
نئی دہلی 14 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیر فینانس ارون جیٹلی نے آج وزارت دفاع کی اضافی ذمہ داری قبول کرلی جبکہ منوہر پریکر نے گوا کے چیف منسٹر کی حیثیت سے حلف لے لیا ہے ۔ ارون جیٹلی نے وعدہ کیا کہ وہ سابقہ پالیسیوں کو جاری رکھیں گے ۔ جیٹلی نے 2014 میں مئی سے نومبر تک وزارت دفاع کی اضافی ذمہ داری سنبھالی تھی اور انہیں ایک بار پھر یہ ذمہ داری سونپی گئی ہے جبکہ پریکر اتوار کو اس عہدہ سے مستعفی ہوگئے تھے ۔ پریکر نے ذمہ داری سنبھالنے کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وزارت دفاع ملک کی سلامتی اور مسلح افواج کے تعلق سے ایک اہم ترین ذمہ داری ہے ۔ وہ ملک کیلئے سلامتی آلات حاصل کرنے پر غور کرینگے ۔ آج انہوں نے صورتحال کے تعلق سے معلومات حاصل کی ہیں۔ جیٹلی نے کہا کہ وہ منوہر پریکر جہاں چھوڑ کر گئے ہیں وہاں سے آگے لے جائیں گے ۔ انہو ںنے کہا کہ ہماری ایک تسلسل والی حکومت ہے اور جہاں پریکر چھوڑ کر گئے ہیں وہاں سے وہ آگے بڑھائیں گے ۔ پریکر کے دور میں کئی دفاعی معاملتیں ہوئیں اور حصول اسلحہ کے عمل کو سادہ کیا گیا تھا ۔ راشٹرپتی بھون کی جانب سے کل جاری کردہ ایک اعلامیہ میں کہا گیا تھا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے مشورہ کے مطابق صدر جمہوریہ پرنب مکرجی نے مسٹر جیٹلی کو وزارت دفاع کی اضافی ذمہ داری سنبھالنے کی ہدایت دی ہے ۔ یہ واضح نہیں ہے کہ ارون جیٹلی وزارت فینانس کے ساتھ دفاع کی اضافی ذمہ داری کب تک سنبھالیں گے ۔ گوا میں بی جے پی نے منوہر پریکر کو دوبارہ چیف منسٹر بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ گوا بی جے پی نے اتوار کو ایک قرار داد متفقہ طور پر منظور کرتے ہوئے پارٹی کی قیادت سے خواہش کی تھی کہ انہیں دوبارہ گوا کی ذمہ داری سونپی جائے ۔ بی جے پی کو تشکیل حکومت میں مدد فراہم کرنے والی جماعتوں نے بھی پریکر کو یہ ذمہ داری سونپنے کی حمایت کی تھی ۔ اسی کو دیکھتے ہوئے بی جے پی قیادت نے منوہر پریکر کو چیف منسٹر گوا نامزد کیا ہے اور ان کی بجائے اب وزارت دفاع کی ذمہ داری مسٹر ارون جیٹلی کے سپرد کردی ہے ۔ ارون جیٹلی مودی حکومت کے سینئر ترین وزرا میں شامل ہیں۔

TOPPOPULARRECENT