Friday , January 19 2018
Home / دنیا / وزیراعظم برطانیہ ڈیوڈ کیمرون پر مشتبہ بوکوحرام کارکن کا حملہ، ایک فوجی اور حملہ آور انتہا پسند ہلاک

وزیراعظم برطانیہ ڈیوڈ کیمرون پر مشتبہ بوکوحرام کارکن کا حملہ، ایک فوجی اور حملہ آور انتہا پسند ہلاک

یونڈے۔ 9؍نومبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ اسلام پسند انتہا پسندوں کی تنظیم بوکوحرام کے مشتبہ ارکان نے وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون پر سرحد پر واقع ایک قصبہ میں حملہ کیا جس کے نتیجہ میں 6 گھنٹے تک جھڑپ جاری رہی جس میں ایک فوجی اور کئی شورش پسند ہلاک ہوگئے۔ عہدیداروں کے بموجب حملہ کیراوا میں کیا گیا جو حال ہی میں نائیجیریا میں بوکوحرام کے خلاف مہم چلا چ

یونڈے۔ 9؍نومبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ اسلام پسند انتہا پسندوں کی تنظیم بوکوحرام کے مشتبہ ارکان نے وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون پر سرحد پر واقع ایک قصبہ میں حملہ کیا جس کے نتیجہ میں 6 گھنٹے تک جھڑپ جاری رہی جس میں ایک فوجی اور کئی شورش پسند ہلاک ہوگئے۔ عہدیداروں کے بموجب حملہ کیراوا میں کیا گیا جو حال ہی میں نائیجیریا میں بوکوحرام کے خلاف مہم چلا چکا ہے۔ اس گروپ کی شورش پسندی نائیجیریا میں گزشتہ پانچ سال سے جاری ہے جس میں ہزاروں افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ بعد اوقات اسلام پسند سرحد پار بھی حملے کرتے ہیں۔ قریبی منڈارا پہاڑیاں بوکوحرام کے ارکان اپنے خفیہ ٹھکانے کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ کیراوا میں حملہ بوکوحرام نے تقریباً 4 بجے شب (ہندوستانی معیاری وقت کے مطابق 8.30 بجے صبح) کیا گیا تھا۔ اعلیٰ سطحی فوجی شعبہ بیرکا ایک رکن فوجی ہلاک ہوگیا جب کہ حملہ آوروں میں سے کئی افراد ہلاک کردیئے گئے۔ انتہا پسندوں اور فوج کے درمیان فائرنگ کے تبادلہ سے 10 بجے دن تک یہ علاقہ دہلتا رہا۔ ڈیوڈ کیمرون نے اس علاقہ میں فوج تعینات کردی ہے تاکہ بوکوحرام کے حملوں پر قابو پایا جاسکے۔ 17 اکٹوبر سے اس علاقہ میں تعینات فوج نے دعویٰ کیا کہ اس نے شدید لڑائی کے دوران 107 اسلام پسندوں کو ہلاک کردیا ہے اور 8 فوجی بھی جھڑپ کے دوران ہلاک ہوگئے ہیں۔ 10 چینیوں اور 17 مقامی افراد کو جاریہ سال کے اوائل میں اغواء کرکے یرغمال بنایا گیا ہے جسکے بعد ڈیوڈ کیمرون نے بوکوحرام کے خلاف فوجی کارروائی کا حکم دیا تھا، تاہم یرغمالیوں کو گزشتہ ماہ رہا کردیا گیا۔ حملہ کا حکم دینے کے بعد وزیراعظم برطانیہ پر بوکوحرام کا یہ اولین حملہ ہے۔ اس پر انتقامی کارروائی ہونے کا شبہ کیا جارہا ہے، تاہم حملہ آور فوج کی جوابی کارروائی کی وجہ سے ناکام رہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT