وزیراعظم مستعفی ، لوک سبھا کو تحلیل کرنے کی سفارش

نئی دہلی ، 17 مئی (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم منموہن سنگھ نے آج استعفیٰ دے دیا جس کے ساتھ ہی یو پی اے کی دو حکومتوں کی 10 سالہ میعاد کا اختتام ہوا جو لوک سبھا انتخابات میں اس کی بدترین شکست کا نتیجہ ہے۔ 81 سالہ منموہن سنگھ اپنی سرکاری رہائش گاہ 7، ریس کورس روڈ سے راشٹرپتی بھون روانہ ہوئے اور اپنی مجلس وزراء کا استعفیٰ پیش کردیا۔ بعدازاں راشٹرپتی بھون سے جاری اعلامیہ میں کہا گیا کہ صدرجمہوریہ نے منموہن سنگھ کا استعفیٰ قبول کرلیا۔ تاہم ان سے نئی حکومت کے قیام تک خدمات جاری رکھنے کی خواہش کی ہے۔ صدر پرنب مکرجی اور وزیراعظم منموہن سنگھ نے گلدستوں کا تبادلہ کیا۔ ڈاکٹر منموہن سنگھ نے صدر کو اپنا استعفیٰ پیش کیا اور 15 ویں لوک سبھا کی تحلیل کیلئے اپنی کابینہ کی سفارش پیش کی جو محض ایک رسمی ضابطہ ہے۔ صدرمکرجی نے جو ماضی میں ڈاکٹر سنگھ کی کابینہ میں فینانس، دفاع، امور خارجہ کے وزیر رہ چکے تھے، ان سے ملاقات کے بعد غیرمعمولی خیرسگالی کا مظاہرہ کرتے ہوئے راشٹرپتی بھون کے باب الداخلہ تک پہنچ کر سبکدوش وزیراعظم کو وداع کیا۔

TOPPOPULARRECENT