Saturday , July 21 2018
Home / Top Stories / وزیراعظم مودی کو مجھ میں ’خطرہ‘ نظر آتا ہے: راہول گاندھی

وزیراعظم مودی کو مجھ میں ’خطرہ‘ نظر آتا ہے: راہول گاندھی

دلتوں کی ہلاکت اور مارپیٹ ہوئی، وزیراعظم خاموش رہے، توجہ ہٹادینا مودی کی عادت
بنگلورو 10 مئی (سیاست ڈاٹ کام) صدر کانگریس راہول گاندھی نے آج کہاکہ وزیراعظم نریندر مودی کو اُن میں خطرہ دکھائی دے رہا ہے اور یہ کہ آخرالذکر کا اُن کی وزارت عظمیٰ سے متعلق خواہش پر اُنھیں تنقید کا نشانہ بنانے کا واحد مقصد توجہ ہٹانا ہے۔ راہول نے سختی سے کہاکہ مودی، یو پی اے چیرپرسن سونیا گاندھی کے بیرونی نژاد مسئلہ کو اُٹھارہے ہیں اور کہاکہ وہ کئی ہندوستانیوں سے بڑھ کر ہندوستانی ہیں۔ راہول نے گزشتہ روز اپنے وزارت عظمیٰ کے متعلق عزائم پر مودی کے بار بار حملوں کے تعلق سے ایک سوال کے جواب میں میڈیا والوں کو بتایا کہ یہ الیکشن راہول سے متعلق نہیں ہے۔ میں نے اب وزیراعظم سے نمٹنا سیکھ لیا ہے۔ جب وہ کوئی جواب نہیں دے سکتے تو توجہ دوسری طرف مبذول کرادیتے ہیں۔ راہول نے یہاں میڈیا سے بات چیت میں اپنے وزارت عظمیٰ سے متعلق عزم کا برسرعام اعلان کیا تھا جس پر سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے مودی نے تعجب ظاہر کیاکہ آیا ملک اِس اعلیٰ عہدہ کے لئے کوئی اس طرح کے ناپختہ کار اور نامدار لیڈر کو کبھی قبول کرپائے گا۔ سونیا گاندھی کے بیرونی نژاد مسئلہ پر مودی کو اُن کے ریمارک پر ہدف تنقید بناتے ہوئے راہول نے کہاکہ میری والدہ اطالوی نژاد ہیں لیکن اُنھوں نے اپنی زندگی کا زیادہ تر حصہ ہندوستان میں گزارا ہے۔ وہ کئی ہندوستانیوں کے مقابل زیادہ ہندوستانی ہیں۔ سونیا گاندھی کے بیرونی نژاد مسئلہ کو مودی نے ایک حالیہ انتخابی ریالی میں چھیڑا جہاں اُنھوں نے کانگریس سربراہ کو چیلنج کیا تھا کہ حکومت کرناٹک کے کارہائے نمایاں کے تعلق سے کسی بھی زبان میں 15 منٹ تقریر کرکے دکھائیں۔ چاہے زبان اُن کی ماں کی مادری زبان بھی کیوں نہ ہو۔ مودی دراصل راہول کے قبل ازیں اس چیلنج کا جواب دے رہے تھے جس میں صدر کانگریس نے چیلنج کیا تھا کہ اُنھوں نے پارلیمنٹ میں مختلف مسائل بشمول کرپشن پر 15 منٹ بولنے کا موقع دیں اور یہ کہ وزیراعظم 15 منٹ بھی بیٹھ نہیں پائیں گے۔ صدر کانگریس جنھوں نے کرناٹک میں اپنے مصروف انتخابی دورے کا پریس کانفرنس کے ساتھ اختتام کیا، انھوں نے گوتم بودھ سے متعلق ایک واقعہ کا تذکرہ کرتے ہوئے دعویٰ کیاکہ وزیراعظم کو ہر کسی پر غصہ آرہا ہے۔ ’’مودی میں اندرونی طور پر برہمی معلوم ہوتی ہے۔ وہ صرف مجھ پر نہیں بلکہ ہر کسی پر غصہ ہورہے ہیں۔ اور اُنھیں مجھ میں خطرہ دکھائی دے رہا ہے‘‘۔ صدر کانگریس نے دلتوں کی ہلاکت کے واقعات اور اُن پر حملوں کے بارے میں وزیراعظم کی مسلسل خاموشی کی مذمت کی۔ جب وزیراعظم کے دعوے پر تبصرہ پر کہا گیا کہ کانگریس پارٹی نے دلتوں کا مسئلہ بس برائے نام اُٹھایا ہے، راہول نے کہاکہ ہم اُن کے مسائل اُٹھاتے رہیں گے یہ ہماری ذمہ داری ہے۔ جب روہت ویمولا (حیدرآباد کا اسٹوڈنٹ جس نے مبینہ امتیازی برتاؤ پر خودکشی کرلی) کی موت ہوئی، تب اُنھوں نے ایک لفظ تک نہیں بولا۔ جب دلتوں کو اونا میں مارپیٹ کی گئی تب بھی وہ خاموش رہے۔

TOPPOPULARRECENT