Saturday , November 25 2017
Home / سیاسیات / وزیراعظم کی یوم آزادی تقریر پر شیوسینا کی تنقید

وزیراعظم کی یوم آزادی تقریر پر شیوسینا کی تنقید

ممبئی۔ 16 اگست (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی کی یوم آزادی تقریر پر تنقید کرتے ہوئے شیوسینا نے آج چیلنج کیا کہ مرکزی حکومت دستور کی دفعہ 370 منسوخ کردے تاکہ ملک گیر سطح سے عوام کشمیر جاسکیں اور وہاں کے عوام کو گلے لگا سکیں۔ لال قلعہ کی فصیل سے کل یوم آزادی تقریر کرتے ہوئے مودی نے کہا تھا کہ ’’نہ گالی سے سمسیا سلجھنے والی ہے، نہ گولی سے سمسیا سلجھے گی، ہر کشمیری کو گلے لگانے سے‘‘۔ طنزیہ انداز میں پارٹی کے ترجمان ’’سامنا‘‘ کے ایک اداریہ میں آج کہا گیا ہے کہ کسی کو بھی آج سے پہلے یہ عظیم خیال کیوں نہیں آیا، حیرت انگیز ہے۔ اس قول پر عمل کیسے کیا جائے۔ دستور کی دفعہ 370 منسوخ کردینی چاہئے تاکہ عوام کا ہجوم ملک گیر سطح سے وہاں جاسکے اور وہاں کے عوام کو گلے لگاسکے۔ اداریہ میں کہا گیا ہے کہ مذہب کے نام پر ملک گیر سطح پر تشدد کا غلبہ ہے جو صرف مسلمانوں کو نہیں بلکہ ہندوؤں کو بھی خوف زدہ کررہا ہے۔ ہندو برادری کے چند فرقے پرتشدد اور انتہا پسند تحفظ گاؤ کے نام پر ہوچکے ہیں۔ انہیں صرف انتباہ دینا کافی نہیں ہے۔ شیوسینا نے مزید سوال کرتے ہوئے پوچھا کہ حکومت کیوں ان کے خلاف سختی نہیں برتتی جو وندے ماترم گانے سے انکار کرتے ہیں۔ نوٹوں کی تنسیخ میں اور جی ایس ٹی کے نفاذ میں جیسی سختی برتی گئی تھی ، ویسی وندے ماترم کے لزوم کیلئے کیوں نہیں برتی جاتی۔ وزیراعظم نے غیرملکی بینکوں سے کالا دھن ملک واپس لانے اور ہر شخص کے کھاتے میں 15 لاکھ روپئے جمع کروانے کا تیقن دیا تھا ، ہمیں یقین ہے کہ آئندہ دو سال میں ایسا کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT