Monday , December 18 2017
Home / مضامین / وسیم رضوی کو ہمایوں مقبرے پر غصہ کیوں آتا ہے!

وسیم رضوی کو ہمایوں مقبرے پر غصہ کیوں آتا ہے!

 

ظفر آغا
ان دنوں شیعہ قائدین کی باڑھ آئی ہوئی ہے، اور قائد بھی کیسے کیسے! ایسے کہ جن کا نام اوروں کو تو جانے دیجیے خود شیعہ فرقہ کے افراد نے بھی پہلے نہیں سن رکھا تھا۔ اس کی مثال وسیم رضوی صاحب ہیں۔ موصوف کا تعلق اتر پردیش شیعہ وقف بورڈ سے ہے۔ حضرت نے ابھی حال میں وزیر اعظم نریندر مودی کو ایک خط لکھ کر یہ رائے دی کہ حکومت ہند دہلی میں واقع ہمایوں مقبرے کو گرا کر اس کی کئی سو ایکڑ کی زمین مسلمانوں کو قبرستان کے لیے دے دی جائے۔
ذرا وسیم رضوی صاحب سے پوچھیے کہ آپ ہوتے کون ہیں ایک تاریخی نیشنل مانومنٹ کو گروانے کی رائے دینے والے! پھر آپ کی حیثیت کیا ہے کہ آپ اس قسم کی بے ہودہ باتیں کریں۔ آپ ایک ادنیٰ سے وقف بورڈ کے چیئرمین ہیں۔ کل تک زیادہ تر شیعوں نے بھی آپ کا نام نہیں سنا تھا۔ میں خود ایک شیعہ خاندان سے تعلق رکھتا ہوں، صحافی ہوں لیکن آپ اس قدر ’بلند و بالا شخصیت‘ ہیں کہ نہ تو میں نے آج تک ؑآپ کی شکل دیکھی اور نہ ہی آپ سے واقف ہوں۔ پھر بھی مغل بادشاہ ہمایوں جیسی شاندار شخصیت کی پہلی بیوی اور شہنشاہ اکبر کی والدہ حمیدہ بانو بیگم کے بنوائے ہمایوں مقبرے کو گروانے کی رائے آپ نے دے ڈالی۔

بھلا وسیم رضوی جیسے لوگوں کی کیا حیثیت کہ وہ مغل بادشاہوں کے بارے میں زبان کھولیں! نہ تو وہ تاریخ داں ہیں اور نہ ہی ان کا مغلوں سے کوئی تعلق ہے۔ پھر بھی ایسے حضرات منہ کھولنے سے باز نہیں آتے ہیں۔ حقیقت تو یہ ہے کہ وسیم رضوی کا بیان ان کا اپنا بیان نہیں ہے۔ یو پی شیعہ بورڈ کی بنا پر ان کو بی جے پی کی خوشنودی کرنا لازمی ہے۔ ایسے افراد کو اپنی کرسی برقرار رکھنے کے لیے حکومت کی خوشنودی حاصل کرنے کے لیے ہر وہ حکم بجا لانا پڑتا ہے جو ان کو اوپر سے ملتا ہے۔ ظاہر ہے کہ وسیم رضوی نے جو بیان دیا ہے اس کا حکم ’اوپر‘ سے ہی آیا ہوگا! لیکن سوال یہ ہے کہ وسیم رضوی کو اس وقت ’ہمایوں کا مقبرہ‘ یاد کیوں آیا! جیسا کہ عرض کیا گیا یہ بات وسیم رضوی کے ذہن کی اختراع نہیں ہے بلکہ یہ بی جے پی کی ایما پر دیا گیا بیان ہے۔ تو پھر ان دنوں بی جے پی کو کبھی شاہجہاں، تو کبھی ہمایوں اور کبھی اکبر بادشاہ اس قدر کیوں پریشان کر رہے ہیں! کیا سبب ہے کہ کبھی تاج محل تو کبھی ہمایوں کے مقبرے کو مسمار کرنے کی مانگ ہو رہی ہے۔
بات یہ ہے کہ سیاستدان جب کوئی بیان دیتا ہے تو وہ بے مقصد نہیں ہوتا۔ اس لیے بی جے پی اور بی جے پی کے خادموں کے مغلوں کے خلاف جو بیانات آ رہے ہیں وہ بے معنی بیانات نہیں ہیں۔ دراصل کبھی تاج محل اور کبھی ہمایوں مقبرے کو مسمار کرنے کی باتیں کر کے مسلمانوں کو اْکسایا جا رہا ہے۔ اُس کو یہ احساس دلایا جا رہا ہے کہ تم اس ملک میں دوسرے درجے کے شہری ہو، تمہاری تو کیا تمہارے بادشاہوں اور ان کے بنوائے ہوئے تاج محل اور ہمایوں مقبرے جیسی شاندار عمارتوں کی بھی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ ہم جب چاہیں بابری مسجد کی طرح تاج محل جیسی عمارت کو بھی گرا سکتے ہیںلیکن بی جے پی کو اس وقت مغلوں کی کیوں یاد آ رہی ہے! آخر بی جے پی پر ایسی کیا مصیبت آن پڑی ہے کہ وہ مسلمانوں کو ذلیل کریں۔ یاد رکھیے، جب جب بی جے پی کو ووٹ چاہیے ہوتا ہے تب تب اس کو مسلمان یاد آتے ہیں۔ وہ بھی اس لیے کہ مسلمان کوئی ایسی حرکت کریں کہ اس سے ہندو رد عمل پیدا ہو۔ کیونکہ جب تک مسلمان سڑکوں پر نہ نکلیں گے تب تک ہندو کو نہ تو غصہ آئے گا اور نہ ہی اس کا کوئی رد عمل ہوگا۔ مثلاً، اگر ایک بابری مسجد ایکشن کمیٹی جیسی تنظیم نہ ہوتی اور وہ بابری مسجد کی ’دفاع‘ میں اتر پردیش میں سنہ 1990 کی دہائی میں درجنوں ریلیاں نہیں کرتی تو ہندوؤں کو ایودھیا میں کسی رام مندر تعمیر میں دلچسپی نہیں ہوتی۔ آخر سنہ 1960 کی دہائی سے بابری مسجد اور رام مندر تنازعہ عدالت میں چل رہا تھا۔ لیکن عام ہندوؤں کو رام مندر کی فکر پریشان نہیں کر رہی تھی۔ جب بابری مسجد کے نام پر ’اللہ اکبر‘ کے نعرے لگے تو پھر جواباً ’جئے سیا رام‘ کے بھی نعرے لگے۔ اور پھر ایسے لگے کہ بابری مسجد مسمار ہوئی اور بابری مسجد کی دفاع کرنے والی بابری مسجد ایکشن کمیٹی کا نام بھی سنائی نہیں پڑا۔ اس طرح گجرات فسادات کے لیے ایک گودھرا جیسے واقعہ کا ہونا لازمی ہے۔

لب و لباب یہ کہ اس وقت تاج اور ہمایوں مقبرے جیسی باتیں محض اس لیے ہو رہی ہیں کہ بابری مسجد ایکشن کمیٹی جیسی کوئی مسلم تنظیم کھڑی ہو جائے جو تاج محل اور ہمایوں مقبرہ کی حفاظت کے لیے سرکاری خرچے پر ڈھو ڈھو کر مسلم ریلیاں کروائیں جہاں نعرۂ تکبیر بلند ہو جس کو ٹی وی پر لائیو پورے ہندوستان کو دکھائے تاکہ ہندو کو مسلم سے خوف پیدا ہو اور پھر وشو ہندو پریشد جیسی تنظیمیں لاکھوں ہندوؤں کا مجمع اکٹھا کر کے گجرات جیسے حالات پیدا کر دیں جس میں ایک چھوٹی سی چنگاری وہ کام کرے جو سنہ 1992 میں ایودھیا میں ہوا یا 2002 میں گجرات میں ہوا تھالیکن ابھی تو عام انتخابات میں دو برس سے زیادہ وقت باقی ہے۔ بی جے پی کو ابھی سے ہندو رد عمل کی کیا ضرورت ہے۔ گجرات چناؤ سر پر ہیں اور ٹی وی سروے کے باوجود گجرات میں زمین بی جے پی کے پیروں تلے سے نکلتی نظر آ رہی ہے۔ پٹیل، دلت، پسماندہ ذاتیں تو بی جے پی کے خلاف گجرات میں شمشیر بہ کف ہیں ہی، وہاں سب سے بڑی مصیبت یہ ہے کہ گجراتی تاجر جی ایس ٹی اور نوٹ بندی سے اس قدر پریشان ہے کہ اس نے بھی مودی کے خلاف علم بغاوت بلند کر دیا ہے۔ گجراتی تاجر برسوں سے ’ہندوتوا دی‘ رہا ہے۔ وہ گجرات میں بی جے پی کی سب سے بڑی طاقت ہے۔ اگر چناؤ میں اس نے ہی ساتھ چھوڑ دیا تو پھر چناؤ لڑے کیسے جائیں گے!

بی جے پی کی مشکل کشائی کا محض ایک ہی نسخہ ہے اور وہ ہے ’مسلمان‘! جیسے ہی ہندو کے دماغ پر مسلم خوف یا مسلم غصہ سوار ہو جاتا ہے ویسے ہی وہ اپنی ساری مصیبتیں بھول جاتا ہے اور پھر اس کو مودی جی ’ہندو اَنگ رکشک‘ لگنے لگتے ہیں۔ لیکن یہ اس وقت تک ممکن نہیں جب تک ایک بابری مسجد ایکشن کمیٹی یا ایک گودھرا نہ ہو۔ یہ تب ہی ممکن ہے جب پہلے مسلمان کو غصہ آئے۔اس لیے ابھی ساری کوشش یہ ہے کہ مسلمان کو غصہ آئے۔ اس لیے کبھی قصاب خانے بند تو کبھی موب لنچنگ۔ جب یہ سب نہیں چلا تو مغلوں کو لعنت ملامت۔ یہ بھی کافی نہیں تو تاج محل اور ہمایوں کا مقبرہ گروانے اور زخم پر نمک چھڑکنے کے لیے ایک نام نہاد شیعہ کو سنی مسلمانوں کے خلاف کھڑا کرو۔اس لیے وسیم رضوی جیسوں کی حیثیت بی جے پی کی سیاسی بساط پر کسی ادنیٰ پیدل مہرے سے زیادہ نہیں ہے۔ ان کے جیسوں کا نہ تو شیعوں سے کچھ لینا دینا ہے اور نہ ہی مغلوں سے ان کو کوئی مطلب۔ ویسے یہ بھی ذکر کر دوں کہ اکھلیش یادو کی حکومت کے وقت تک یہی وسیم رضوی اعظم خان کے معتمد خاص تھے اور اس وقت بھی ان کی ایما پر شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمین تھے۔ اس پورے دور میں انہی وسیم رضوی کا سب سے زیادہ جھگڑا شیعہ عالم دین کلب جواد سے تھا۔ اب یہی وسیم رضوی بی جے پی کی بساط کا مہرہ ہیں۔ اور آپ تو واقف ہیں:
جعفر از بنگال صادق از دکن
ننگ دین، ننگ ملت، ننگ وطن
ہر دور میں جعفر و صادق ہوتے ہیں۔ وہ کبھی رضوی ہو سکتے ہیں اور کبھی کچھ اور۔ اس لیے بس خاموش رہیے۔ جیسے آپ نے اب تک صبر سے کام لیا ہے ویسے ہی خون کا گھونٹ پی کر صبر اور خاموشی سے کام لیجیے۔ یہ بھی سمجھ لیجیے کہ اس وقت جو بھی مسلم قیادت کا ٹھیکا لیتا ہے وہ بی جے پی کا مہرہ ہے۔ یہ وقت کٹ جائے گا۔ بس عقل اور خاموشی کا دامن مت چھوڑیے۔

TOPPOPULARRECENT