Tuesday , September 25 2018
Home / شہر کی خبریں / وقف بورڈ میں ’ این او سی اسکام ‘ عہدیدار تحقیقات سے خائف

وقف بورڈ میں ’ این او سی اسکام ‘ عہدیدار تحقیقات سے خائف

ڈپٹی چیف منسٹر سے چیف ایگزیکٹیو آفیسر کی بند کمرہ میں وضاحت، بے قصور ہونے کا دعویٰ
حیدرآباد ۔27۔ نومبر (سیاست نیوز) وقف بورڈ میں این او سی اسکام کے منظر عام پر آنے کے بعد پولیس تحقیقات سے عہدیدار خائف دکھائی دے رہے ہیں۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر منان فاروقی نے آج ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی ، اعلیٰ عہدیداروں اور عوامی نمائندوں کے بند کمرہ کے اجلاس میں اسکام کے سلسلہ میں اپنے موقف کی وضاحت کی۔ این او سی پر منان فاروقی کے دستخط ہیں ، لہذا وہ اس موقع سے استفادہ کرتے ہوئے بار بار یہ وضاحت کر رہے تھے کہ این او سی سے ان کا کوئی تعلق نہیں۔ انہوں نے مکتوب پر دستخط سے بھی انکار کیا۔ این او سی پر وقف بورڈ کا جو اسٹامپ ہے، اس پر بھی منان فاروقی نے شبہات ظاہر کئے۔ انہوں نے ڈپٹی چیف منسٹر اور اعلیٰ عہدیداروں کو بتایا کہ روزنامہ سیاست میں اسکام کے منظر عام پر آتے ہی انہوں نے کلکٹر ملکاجگری اور کمشنر پرنٹنگ پریس سے رجوع ہوکر تفصیلات حاصل کی ہیں۔ کلکٹر رنگا ریڈی کو جو مکتوب روانہ کیا گیا ، اس پر نکا نرسنگ راؤ کا نام بحیثیت درخواست گزار درج ہے۔ انہوں نے کہا کہ این او سی ان کے دفتر سے جاری نہیں کیا گیا اور اس پر ان کے دستخط جعلی ہیں۔ کمشنر پرنٹنگ پریس سے حاصل کردہ معلومات کے مطابق ان سروے نمبرات کو وقف سے علحدہ کرتے ہوئے گزٹ نوٹیفکیشن کی اجرائی کیلئے محمد سہیل کے نام سے درخواست دی گئی ہے۔ انہوں نے گزٹ نوٹیفکیشن اجرائی کیلئے فیس کے ادخال ، درخواست اور دیگر دستاویزات کی نقل حاصل کرلی ہے۔ بند کمرہ کے اجلاس میں جب منان فاروقی تفصیلی طور پر وضاحت کر رہے تھے تو ڈپٹی چیف منسٹر اور حکومت کے مشیر نے کہا کہ یہاں وضاحت کی کوئی ضرورت نہیں کیونکہ پولیس اس معاملہ کی تحقیقات کر رہی ہے۔ اے کے خاں نے کہا کہ وہ متعلقہ ڈپٹی کمشنر سے بات چیت کریں گے تاکہ سی ای او کی دستخط کی اصلیت کا پتہ چلایا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ دستخط کس کی ہے ، یہ تو تحقیقات میں پتہ چل جائے گا ۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے بھی تیقن دیا کہ وہ جلد سے جلد تحقیقات کی تکمیل کیلئے اعلیٰ عہدیداروں سے بات چیت کریں گے ۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر نے کہاکہ ملکاجگری ضلع میں وقف اراضی سے متعلق تمام ریکارڈ وقف بورڈ میں محفوظ ہیں اور این او سی کی اجرائی کیلئے کوئی فائل صدرنشین اور ان کے اجلاس پر پیش نہیں کی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ میں کسی بھی متعلقہ سیکشن میں یہ فائل تیار نہیں کی گئی ، لہذا اس معاملہ کی تفصیلی جانچ ہونی چاہئے ۔ بتایا جاتا ہے کہ چیف اگزیکیٹیو آفیسر نے ڈپٹی چیف منسٹر سے خواہش کی کہ تحقیقات کی تکمیل کے فوری بعد انہیں اس عہدہ کی ذمہ داری سے سبکدوش کردیا جائے کیونکہ وقف بورڈ میں کام کرنے پر ان کے کئی مخالفین پیدا ہوچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT