Wednesday , December 12 2018

وقف بورڈ میں قابل عہدیداروں کی کمی سے دشواریاں

شاہنواز قاسم صبح 8 بجے سے فائلوں کی یکسوئی میں مصروف، زائد عہدیداروں کیلئے حکومت سے سفارش
حیدرآباد ۔ 5 ۔جون (سیاست نیوز) تلنگانہ وقف بورڈ میں اہل اور قابل عہدیداروں کی کمی کے نتیجہ میں چیف اگزیکیٹیو آفیسر شاہنواز قاسم کو فائلوں کی یکسوئی میں دشواری پیش آرہی ہے ۔ سینئر آئی پی ایس عہدیدار شاہنواز قاسم نے جب سے چیف اگزیکیٹیو آفیسر کی ذمہ داری سنبھالی وہ بورڈ کی کارکردگی بہتر بنانے پر توجہ مرکوز کرچکے ہیں۔ فائلوں کی یکسوئی کے سلسلہ میں بریفنگ کرنے کیلئے کوئی قابل عہدیدار موجود نہیں جس کے نتیجہ میں روزانہ زیر التواء فائلوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ شاہنواز قاسم صبح 8 بجے سے فائلوں کی یکسوئی میں مصروف دکھائی دے رہے ہیں اور وہ صبح کے وقت ضروری عہدیداروں کو دفتر طلب کر رہے ہیں۔ انہوں نے سکریٹری اقلیتی بہبود سے خواہش کی کہ آر ڈی او رینک کے کسی عہدیدار کو وقف بورڈ میں متعین کیا جائے۔ انہوں نے ڈپٹی سکریٹری رینک کے عہدیدار کی خدمات وقف بورڈ کے حوالے کرنے کی سفارش کی تاکہ بورڈ کے کام کاج کو بہتر بنایا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ کے موجودہ عہدیداروں میں زیادہ تر ریٹائرڈ عہدیدار ہیں یا پھر ناتجربہ کار عہدیدار موجود ہیں، جس کے باعث اہم فائلوں کی یکسوئی میں تاخیر ہورہی ہے ۔ رمضان المبارک کے بعد شاہنواز قاسم بورڈ کے لئے درکار عہدیداروں کے سلسلہ میں حکومت سے نمائندگی کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ سے جاری کردہ جعلی این او سی معاملہ کی تحقیقات سی بی سی آئی ڈی کے ذریعہ کرائی جائیں گی۔ اس سلسلہ میں سکریٹری اقلیتی بہبود کے ذریعہ ڈائرکٹر جنرل پولیس سے خواہش کی گئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ این او سی معاملہ کی جانچ اہمیت کی حامل ہے اور اس سلسلہ میں عابڈس پولیس اسٹیشن میں جو شکایت کی گئی تھی اس کی پیشرفت کے بارے میں کمشنر پولیس کو توجہ دلائی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ سی بی سی آئی ڈی تحقیقات میں این او سی اجرائی اور اس کے پس پردہ عناصر کا پتہ چلے گا۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ میں ورک کلچر اور ڈسپلن کے نفاذ کیلئے شروع کردہ اقدامات کے حوصلہ افزاء نتائج برآمد ہوئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT