Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / وقف بورڈ پر عمر جلیل 6ماہ کیلئے دوبارہ فائز

وقف بورڈ پر عمر جلیل 6ماہ کیلئے دوبارہ فائز

بعض مخصوص معاملات کی یکسوئی کیلئے تقرر کی اطلاعات،جی او کی اجرائی میں رازداری
حیدرآباد۔/25مئی، ( سیاست نیوز) وقف بورڈ میں گذشتہ دو ماہ سے عہدیدار مجاز کی عدم موجودگی سے کارکردگی ٹھپ ہونے سے متعلق ’’سیاست‘‘ میں خبر کی اشاعت کے ساتھ ہی حکومت نے فوری کارروائی کرتے ہوئے سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل کو اس عہدہ کی زائد ذمہ داری دی ہے۔ اس سلسلہ میں سکریٹری اقلیتی بہبود نے آج جی او ایم ایس (19) مورخہ 24مئی 2016 جاری کیا ۔ جی او انتہائی رازداری میں جاری کیا گیا اور اسے سرکاری ویب سائیٹ پر نہیں رکھا گیا شاید اس بات کا اندیشہ تھا کہ اس جی او کوعدالت میں چیالنج کیا جائیگا لیکن مذکورہ جی او ’سیاست ‘ کو مل چکا ہے۔جس کے مطابق وہ 6ماہ تک یا پھر وقف بورڈ کے الیکشن تک عہدیدار مجاز کی زائد ذمہ داری سنبھالیں گے۔ واضح رہے کہ حکومت نے 19اکٹوبر 2015کو عمر جلیل کو عہدیدار مجاز مقرر کیا تھا۔ ان کی چھ ماہ کی مدت 19 اپریل کو ختم ہوگئی جس کے بعد سے انہوں نے وقف بورڈ کی فائیلوں کو دیکھنا بند کردیا تھا۔ گذشتہ دو ماہ سے سینکڑوں فائیلیں زیر التواء ہیں اور وقف بورڈ کی کارکردگی عملاً ٹھپ ہوچکی ہے۔ عمر جلیل بعض مخصوص فائیلوں کی یکسوئی کررہے تھے جبکہ رمضان المبارک سے قبل کمیٹیوں کے انتخاب سے متعلق بے شمار فائیلیں زیر التواء ہیں۔ عمر جلیل نے حکومت کو عہدیدار مجاز کے عہدہ پر کسی عہدیدار کے تقرر کی خواہش کی لیکن حکومت نے دوبارہ انہیں یہ ذمہ داری سونپ دی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ وقف بورڈ کے بعض اہم معاملات اور خاص طور پر بعض مخصوص متولیوں کے خلاف کارروائی سے متعلق اُمور کی یکسوئی کیلئے عمر جلیل کو یہ ذمہ داری دی گئی اور اس معاملہ میں مقامی سیاسی جماعت کا اہم رول ہے۔ عہدیدار مجاز کی حیثیت سے انہیں کئی اہم اور متنازعہ معاملات کی یکسوئی کرنی ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ کس طرح وقف قواعد کے مطابق اور غیر جانبداری کے ساتھ وہ وقف بورڈ میں فرائض انجام دیں گے۔ بعض اوقافی جائیدادوں کے معاملات میں سید عمر جلیل کے فیصلوں پر کافی تنازعہ پیدا ہوا ہے کیونکہ انہوں نے بعض مخصوص افراد کے حق میں فیصلے کئے اور اوقافی جائیدادوں کے تحفظ اور وقف بورڈ کے مفادات کو نظرانداز کردیا۔ اب جبکہ عمر جلیل دوبارہ وقف بورڈ پر فائز ہوچکے ہیں انہیں کئی اہم فائیلوں کا سامنا کرنا پڑیگا۔ اسی دوران ان کے تقرر کے خلاف ہائی کورٹ میں دائر کردہ مقدمہ کی سماعت آئندہ ماہ مقرر ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT