Friday , December 15 2017
Home / ہندوستان / وکلاء کے سینئر عہدوں کیلئے سپریم کورٹ کے رہنمایانہ خطوط

وکلاء کے سینئر عہدوں کیلئے سپریم کورٹ کے رہنمایانہ خطوط

ہائیکورٹ جج یا چیف جسٹس کی زیرقیادت کمیٹی کی تشکیل
نئی دہلی۔ 12 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج مسلسل کئی رہنمایانہ خطوط بشمول ایک مستقل کمیٹی کی تشکیل جس کی قیادت چیف جسٹس آف انڈیا کریں گے، وکلاء کو سینئر عہدے دینے کے لئے قائم کردی۔ تین ججوں پر مشتمل بینچ جسٹس رنجن گوگوئی کی زیرقیادت کام کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس آف انڈیا کے علاوہ کمیٹی میں سپریم کورٹ کے انتہائی سینئر سپریم کورٹ کے جج یا ہائیکورٹ کے جج شامل ہوں گے۔ یہ بینچ جسٹس آر ایف نریمان اور جسٹس نوین سنہا پر مشتمل ہوگی۔ کمیٹی کی تشکیل کی تجویز مستقل سیکریٹریٹ نے پیش کی ہے جو کسی امیدوار کے بارے میں تمام اطلاعات جمع کرے گی۔ بعدازاں اس سے مستقل کمیٹی کی جانب سے سینئر عہدہ دینے پر غور کیا جائے گا۔ چیف جسٹس آف انڈیا اور سینئر موسٹ سپریم کورٹ یا ہائیکورٹ کے جج کے علاوہ کمیٹی میں بار کے نمائندے اور اٹارنی جنرل چاہے وہ سپریم کورٹ کو ہو یا نہ ہو، ایڈوکیٹ جنرل ہائیکورٹ (ریاستوں کی صورت میں) شامل ہوں گے۔ کسی وکیل کو سینئر ایڈوکیٹ کا عہدہ دینے کے سلسلے میں کمیٹی تمام پہلوؤں پر بھی غور کرے گی جیسا پریکٹس کی مدد، فیصلہ شدہ مقدمات کی تعداد جن میں اس وکیل نے حصہ لیا ہو، مفادِ عامہ کے تنازعات اور شخصیت کی جانچ کو بھی پیش نظر رکھا جائے گا۔ وکیل کو شخصیت کی جانچ کے کئی مرحلوں سے گذرنا ہوگا۔ اس کے بعد ہی اسے سینئر وکیل قرار دیا جائے گا۔ کسی نام پر غور اور مستقل کمیٹی کی جانب سے اس کی منظوری کے بعد جسے عدالت کے اجلاس کاملہ پر پیش کیا جائے گا اور متفقہ یا اکثریتی تائید کے بعد اس کا فیصلہ خفیہ رائے دہی پر ہوگا۔ کسی وکیل کو سینئر قرار دیا جائے گا۔

 

TOPPOPULARRECENT