Sunday , December 17 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ویجلنس ایس پی رشوت ستانی کے الزام میں گرفتار

ویجلنس ایس پی رشوت ستانی کے الزام میں گرفتار

نلگنڈہ میں رائس ملرس کی شکایت پر اے سی بی کی کارروائی

نلگنڈہ۔ 12 جنوری (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ویجلینس اینڈ انفورسمنٹ ایس پی نلگنڈہ کو آج نلگنڈہ مستقر میں واقع مکان میں رشوت لیتے ہوئے محکمہ انسداد رشوت ستانی کے عہدیداروں نے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا۔ تفصیلات کے بموجب محکمہ ویجلینس اینڈ انفورسمنٹ ایس پی نلگنڈہ بھاسکر راؤ نلگنڈہ کے 12 رائس ملرس کو چند دنوں سے ہراساں کررہے تھے۔ مرکزی حکومت کی نوٹ بندی سے پریشان رائس ملرس پر ایس پی ملوں کا معائنہ نہ کرنے کیلئے بڑے پیمانے پر رشوت دینے کیلئے دباؤ ڈال رہے تھے، جس کی وجہ سے 12 رائس ملرس میں سے 5 رائس ملرس بند پڑگئے۔ بھاسکر راؤ نے رائس ملرس اسوسی ایشن صدر سے ماہانہ رشوت کا مطالبہ کیا جس سے ملرس اسوسی ایشن کے ارکان نے محکمہ انسداد رشوت ستانی کے عہدیداروں سے حیدرآباد میں شکایت کی۔ آج ملرس اسوسی ایشن قائد آر بھدرا دری اور راملو نے نلگنڈہ مستقر کے وینکٹیشورا کالونی میں واقع بھاسکر راؤ ایس پی کی قیام گاہ پر ایک لاکھ روپئے رشوت حاصل کررہے تھے کہ اے سی بی ڈی ایس پی سنیتا کی قیادت میں دھاوا کرکے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا اور ایس پی کو حراست میں لے لیا۔ ایس پی بھاسکر راؤ ضلع ورنگل سے تعلق رکھتے ہیں۔ اے سی بی عہدیداروں نے نلگنڈہ اور ورنگل میں بھی اچانک دھاوے کرتے ہوئے بڑے پیمانے پر جائیدادوں اور دیگر دستاویزات کو حاصل کرلیا۔ بتایا جاتا ہے کہ ایس پی بھاسکر راؤ پر بدعنوانیوں کے کئی ایک الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ عہدیداروں نے بتایا کہ بھاسکر راؤ کو ہنمکنڈہ میں پٹرول بینک، آتماکور منڈل کے موضع اور کنڈہ میں 5 کروڑ روپئے مالیتی 10 ایکر اراضی ہونے کا انکشاف ہوا۔ تادم تحریر اے سی بی عہدیداروں کی جانب سے دھاوے جاری ہیں اور مزید جائیدادیں ہونے سے متعلق مباحث ہورہے ہیں۔ رائس ملرس کی جانب سے بڑے پیمانے پر ہراساں کرنے سے پریشان ہوکر مہتمم ویجلنس اینڈ انفورسمنٹ کے عہدیدار شکایت کی گئی ہے۔ ایس پی عہدے پر فائز عہدیدار کو اے سی بی عہدیداروں نے رنگے ہاتھوں پکڑ جانے پر ضلع مستقر پر مباحث ہورہے ہیں۔ بدعنوانیوں کی روک تھام کیلئے خدمت انجام دینے والے عہدیداروں ہی بدعنوانی میں ملوث ہو تو اس کا تدارک کس طرح ممکن ہے۔

TOPPOPULARRECENT