Wednesday , September 26 2018
Home / کھیل کی خبریں / ویسٹ انڈیزکے خلاف پاکستان کا کلین سوئپ

ویسٹ انڈیزکے خلاف پاکستان کا کلین سوئپ

کراچی۔4 اپریل(سیاست ڈاٹ کام) 9 سال بعد کراچی میں انٹر نیشنل کرکٹ کی بحالی کے بعد پاکستان ویسٹ انڈیز سیریز کامیابی سے ختم ہوئی۔ سرفراز احمد کی قیادت میں پاکستان نے دوسری مرتبہ سیریز میں کلین سوئپ مکمل کرتے ہوئے عالمی نمبر ایک مقام کو برقرار رکھا۔ نیشنل اسٹیڈیم میں پاکستان نے عالمی چیمپئن ویسٹ انڈیز کیخلاف تیسرا ٹی 20 مقابلہ 8 وکٹوں سے جیت لیا۔ اس سے قبل پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو متحدہ عرب امارات میں بھی 3-0 سے ہرایا ہے۔ پاکستان نے ساتویں مسلسل سیریز جیتی ہے۔ نومبر میں پاکستان نے سری لنکا کے خلاف بھی وائٹ واش کیا تھا۔ پاکستان دنیا کی پہلی ٹیم بن گئی جس نے تیسری ٹی ٹوئنٹی سیریز جیتی ہے۔ ویسٹ انڈیز نے پاکستان کو 154رنز کا ہدف دیا۔ میزبان نے ہدف 16.5 اوورز میں پورا کرلیا۔ حسین طلعت 28گیندوں پر31اور آصف علی نے16گیندوں پر25رنز بناکر ناٹ آئوٹ رہے۔ اوپنرز فخر زمان اور بابر اعظم نے اننگز کی نصف سنچری 24 گیندوں پر بنائی۔ فخر زمان نے17 گیندوں پر 40رنز بنائے۔ انہوں نے دو چھکے اور6چوکے لگائے ۔ پہلی وکٹ61رنز پر گری۔ بابر اعظم نے نصف سنچری39گیندوں پر بنائی اور اگلی گیند پر51رنز بنا کر آئوٹ ہوگئے۔ بابر اعظم اور حسین طلعت کے درمیان دوسرے وکٹ پر52رنز کی شراکت45رنز پر قائم ہوئی۔

ویسٹ انڈیز اپنا وقار نہیں کھورہی:کوچ
کراچی۔4 اپریل(سیاست ڈاٹ کام) پاکستان کے دورے پر آئے ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ اسٹوارٹ لاء نے کہا کہ موجودہ ٹیم اپنا وقار نہیں کھو رہی بلکہ حقیقت صرف یہ ہے کہ پاکستان کو اس کی سرزمین پر شکست دینا کبھی آسان نہیں ہوتا۔ سیریز میں کلین سوئپ ناکامی کے بعد میڈیا سے بات چیت میں اسٹوارٹ لاء نے کہا کہ انٹرنیشنل کرکٹ میں کبھی یہ بہانہ نہیں کیا جا سکتا کہ کسی ٹیم کے پاس اس کے صف اول کے کھلاڑی موجود نہیں تھے یا ان کی کم تعداد سیریز میں شریک تھی بلکہ اپنی جانب سے بہتر کارکردگی کی کوشش کی جاتی ہے اور وہ اپنے ساتھ کچھ نوجوان کھلاڑیوں کو لے کر آئے تھے جن سے مستقبل میں اچھی توقعات کی جا سکتی ہیں۔ طویل سفر کے بعد تین مسلسل میچز کے باوجود ان کے نوجوان کھلاڑیوں نے بہتر کرکٹ کھیلی اور ہر میچ کے دوران ان کی کارکردگی بہتر ہوتی رہی لیکن یہ بات بھی پیش نظر رکھی جائے کہ پاکستان فی الوقت ٹوئنٹی 20 کی عالمی نمبر ایک ٹیم ہے جو اپنے ہوم گراؤنڈ پر طویل عرصے کے بعد اپنے لوگوں کے سامنے کھیل رہی تھی۔ انہوں نے پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یہ سلسلہ آئندہ بھی جاری رہنا چاہئے۔ اسٹوارٹ لاء نے مزید کہا کہ مثبت بات یہ ہے کہ دونوں ٹیموں کے نوجوان کھلاڑیوں نے اچھا مظاہرہ کیا جن کو اچھا تجربہ حاصل ہوا۔ ستان کے کرکٹ کے شائقین بہت زبردست ہیں جن کو انٹرنیشنل کرکٹ سے محروم نہیں ہونا چاہئے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT