Sunday , November 19 2017
Home / کھیل کی خبریں / ویسٹ انڈیز کے کھلاڑیوں کو ’’آئینہ دیکھنے‘‘ ہولڈر کا مشورہ

ویسٹ انڈیز کے کھلاڑیوں کو ’’آئینہ دیکھنے‘‘ ہولڈر کا مشورہ

پہلے ٹسٹ میں انگلینڈ کیخلاف اننگز اور 209 رنز سے شکست پر کپتان کی برہمی
برمنگھم۔ 20 اگست (سیاست ڈاٹ کام) ویسٹ انڈیز کے کپتان جیسن ہولڈر نے ایجبیسٹن میں انگلینڈ کے خلاف پہلے ٹسٹ میں ایک اننگز اور 209 رنز سے عبرت ناک شکست کے بعد اپنی ٹیم کو ’’آئینہ دیکھنے‘‘ کا چیلنج کیا ہے۔ برطانیہ میں دن ؍ رات کا افتتاحی ٹسٹ میچ تیسرے دن ہفتہ کو ہی ختم ہوگیا تھا۔ ہولڈر نے اخباری نمائندوں سے کہا کہ ’’یہ چند دشوار گذار دن ہیں۔ اس میچ میں ہم ہمارا کھیل مایوس کن رہا۔ بولنگ کے معاملے میں ہم میں مستعدی کا فقدان تھا اور ہم رنز بھی نہیں بنا سکتے تھے۔ ہمیں صرف تین دن میں شکست ہوگئی جو ہمارے لئے مناسب نہ تھی‘‘۔ تین میچوں کی سیریز کے آغاز سے قبل چند تجزیہ نگاروں نے ویسٹ انڈیز کو کافی موقع دیا تھا اور بدترین ناقدین نے بھی کبھی یہ تصور تک نہیں کیا تھا کہ وہ (ویسٹ انڈیز) محض ایک دن میں 19 وکٹس سے محروم ہوجائیں گے جس کے باوجود ہفتہ کو ویسٹ انڈیز کے ساتھ بالکل ایسا ہی ہوا جنہوں نے ایک وکٹ کے نقصان پر 44 رنز کے اسکور سے اپنے کھیل کا آغاز کیا تھا اور فالوآن کے بعد 168 اور 137 رنز پر آؤٹ ہوگئے تھے۔ ہولڈر نے کہا کہ ’’ہمیں دوبارہ منظم ہونا ہے۔ یہ صرف ایک ٹسٹ تھا اور ہم اپنے سر نیچے جھکا نہیں سکتے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ’’ہم سیریز سے محروم نہیں ہوئے ہیں۔ مجھے اس بات پر یقین رکھنا ہے کیونکہ ہر ٹیم قابل شکست اور قابل تسخیر ہوتی ہے‘‘۔ ہولڈر نے کہا کہ ’’(لیکن) ہر کھلاڑی کو آئینہ دیکھ لینا چاہئے اور یہ دیکھنا چاہئے کہ وہ کہاں بہتری پیدا کرسکتی ہیں‘‘۔ انگلینڈ کے خلاف پہلے ٹسٹ میں ویسٹ انڈیز کی بولنگ بھی اس کی بیٹنگ کی طرح انتہائی ناقص تھی۔ انگلینڈ کی ٹیم 8 وکٹ کے نقصان 514 رنز کا بھاری اسکور بناکر اننگز ڈیکلر کی تھی۔ اس کے کپتان جو روٹ 136 اور ان کے پیشرو الیسٹر کک (243) رنز بناتے ہوئے ایک بے بس ویسٹ انڈیز ٹیم کے حملوں کو بری طرح پسپا کرتے ہوئے رنوں کو لوٹ لیا تھا۔ ویسٹ انڈیز کے صرف ایک بیٹسمین جرمائین بلیک ووڈ نے ڈٹ کر مقابلہ کیا اور 79 رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے تھے۔ کیمر روش اس کے اچھے بولر ثابت ہوئے جنہوں نے 28 اوورس میں 86 رنز دے کر 2 وکٹس حاصل کیا۔ ویسٹ انڈیز کے لئے گھر سے باہر ٹسٹ کرکٹ میں ایسے مسائل کوئی نہیں بات نہیں ہیں۔ 1997ء سے صرف بنگلہ دیش اور زمبابوے جیسی کمزور ٹیموں کے سواء ویسٹ انڈیز کو 87 ٹسٹ میچوں کے منجملہ صرف 3 میں کامیابی حاصل ہوسکی ہے۔ 67 میچوں میں شکست اٹھانی پڑی اور 17 میچ ڈرا ہوئے تھے۔ 1970ء اور 1980ء کی دہائیوں میں ٹسٹ کرکٹ کے اُفق پر غالب رہی۔ اس ٹیم کے لئے یہ اعداد افسوسناک اور مایوس کن ہیں۔

TOPPOPULARRECENT