Thursday , May 24 2018
Home / شہر کی خبریں / ویمنس ڈے کے تناظر میں عزم مصمم اور بلند حوصلوں پر کامیابی یقینی

ویمنس ڈے کے تناظر میں عزم مصمم اور بلند حوصلوں پر کامیابی یقینی

محکمہ ڈاک کی پہلی پوسٹ ویمن جمیلہ کی جدوجہد دیگر خواتین کیلئے مثالی
نعیم وجاہت
حیدرآباد ۔ 7 ۔ مارچ : دکنی زبان میں کہاوت مشہور ہے ’ بیوہ کا رونا نکو ‘ جو اکثر اُس وقت کہی جاتی ہے جب کوئی چارہ باقی نہیں رہ جاتا لیکن ضلع محبوب آباد سے تعلق رکھنے والی اس بیوہ نے بیوگی کے ماتم کے بجائے اپنے شوہر کی ملازمت اختیار کرتے ہوئے اپنے بچوں کی پرورش کا بیڑہ اٹھایا ہے ۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ خواتین زندگی کے ہر شعبہ میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوا رہی ہیں ۔ محنت مزدوری کرنے سے لے کر چاند تک پہونچ گئی ہیں ۔ ہم نے خواتین کو ہاسپٹلس میں ڈاکٹرس ، طبی ٹیم میں خاتون عملہ ، عدالتوں میں ججس ، وکلا پولیس اسٹیشنوں میں اعلیٰ عہدوں ، ہوم گارڈس ، خاتون ڈرائیورس ، کنڈاکٹرس ، رکشہ راں وغیرہ کو دیکھا ہے ۔ لیکن یہ بات یقین کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ کسی خاتون کو پوسٹ ویمن کی شکل میں خطوط ، ٹیلی گرامس اور پارسلس وغیرہ کو ایک مقام سے دوسرے مقام تک پہونچاتے ہوئے نہیں دیکھا ہوگا ۔ آج یوم خاتون ہے ہم اس کی نوعیت سے پوسٹ ویمن جمیلہ سے متعارف کررہے ہیں جو ضلع محبوب آباد ، گارلہ منڈل سے تعلق رکھتی ہے ان کے شوہر خواجہ میاں پوسٹ مین تھے جن کا 10 سال قبل انتقال ہوگیا ۔ تب جملیہ کی ایک لڑکی پانچویں جماعت میں اور دوسری لڑکی تیسری جماعت میں زیر تعلیم تھیں جس کے بعد جمیلہ اور ان کی دو لڑکیوں کی زندگی مشکلات میں گھر چکی تھی اس حالت میں انہیں خوش قسمتی سے اپنے شوہر کی ملازمت مل گئی ۔ اس طرح جمیلہ کو محکمہ پوسٹ کی پہلی مسلم پوسٹ ویمن ہونے کا اعزاز حاصل ہوگیا ۔ ابتداء میں جمیلہ سیکل چلانا نہیں جانتی تھی جس کی وجہ سے انہیں روزانہ 4 گھنٹوں تک پیدل چلتے ہوئے گھروں تک خطوط اور پارسلس وغیرہ پہونچاتی تھی ۔ سیکل چلانا سیکھنے کے بعد وہ اپنے ماتحت کام کو انجام دے رہی ہیں ۔ ابتداء میں انہیں ماہانہ 6 ہزار روپئے تنخواہ حاصل ہوا کرتی تھی جو زندگی کی گذر بسر کے ساتھ لڑکیوں کے تعلیمی اخراجات کو پورا کرنے میں دشوار کن ثابت ہورہی تھیں ۔ انہوں نے خطوط گھروں تک پہونچانے کے علاوہ ساڑیاں فروخت کرنے کے کاروبار کا آغاز کیا آج ان کی ماہانہ تنخواہ 10 ہزار روپئے تک پہونچ گئی ہے ۔ بڑی لڑکی زرینہ انجینئرنگ اور چھوٹی لڑکی ڈپلومہ کی تعلیم حاصل کررہی ہیں ۔ جمیلہ نے اپنے شوہر کی موت کے بعد ہمت و حوصلہ کا مظاہرہ کرتے ہوئے پوسٹ ویمن کی خدمات انجام دیتے ہوئے اپنی لڑکیوں کو اعلیٰ تعلیم کے زیور سے ہمکنار کیا ہے جو قابل ستائش اقدام ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT