Monday , December 11 2017
Home / کھیل کی خبریں / وینس کو شکست ، ومبلڈن فائنل میں کربر کا سریناسے مقابلہ

وینس کو شکست ، ومبلڈن فائنل میں کربر کا سریناسے مقابلہ

لندن ۔ 8 جولائی ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) اینجلک کربر نے گزشتہ روز وینس ولیمس کو 6-4 ، 6-4 سے شکست دیکر ومبلڈن فائنل میں پہونچ گئیں جہاں اُن کا مقابلہ وینس کی چھوٹی بہن سرینا سے ہوگا ۔ حالانکہ اس دن کے پہلے سیمی فائنل میں سرینا کے ہاتھوں ایلینا ویسنینا کو شکست کے بعد 2009 ء کے بعد ومبلڈن کے کسی فائنل میں دونوں ولیمس بہنوں سرینا اور وینس کے درمیان دلچسپ مقابلہ کے امکانات پیدا ہوگئے تھے لیکن ومبلڈن کی تاریخ میں خود کو پیچھے رکھنا کربر کو شائد پسند نہیں تھا چنانچہ انھوں نے سنٹر کورٹ پر 71 منٹ کے سنسنی خیز مقابلہ میں سخت محنت اور پھرتی کے ساتھ اپنے کھیل کا مظاہرہ کرتے ہوئے پانچ مرتبہ چمپیئن رہ چکی وینس کو شکست دیکر پہلی مرتبہ آل انگلینڈ کلب کے خطابی مقابلہ میں رسائی حاصل کرلی ۔ کربر نے بعد ازاں کہا کہ ’’وینس کئی مرتبہ یہاں کھیل چکی ہیں ۔ انھوں نے خوب کھیل کا مظاہرہ کیا چنانچہ ومبلڈن کے پہلے فائنل میں اپنی رسائی پر مجھے بہت خوشی ہے ‘‘ ۔ انھوں نے مزید کہا کہ ’’واقعی یہ ایک اچھا احساس ہے یقینا میں اپنے ٹینس کیرئیر سے محظوظ ہورہی ہوں‘‘ ۔ واضح رہے کہ 28 سالہ کربر نے اس سال جنوری کے دوران آسٹریلین اوپن میں 35 سالہ سرینا کو شکست دیتے ہوئے اپنے کیرئیر کا پہلا کرینڈ سلام حاصل کیا تھا

اور اب آئندہ مقابلہ میں وہ عالمی نمبر ایک سرینا کی جانب سے کامیابیوں کا ریکارڈ برابر کرنے والے 22 ویں مقابلہ میں حائل ہورہی ہیں۔ علاوہ ازیں ایک ولیمس بہن کو شکست دے چکی عالمی نمبر چار کربر کی نظریں اب نئے ریکارڈ پر مرکوز ہوگئی ہیں ، وہ چاہتی ہیں کہ ایک ہی گرینڈ سلام مقابلہ میں ان دو امریکی بہنوں کو شکست دینے والی دوسری کھلاڑی بن جائیں۔ واضح رہے کہ کم کلسٹرس 2009 ء کے یو ایس اوپنس میں ان دونوں بہنوں کو شکست دی تھیں۔ ومبلڈن میں سرینا کو شکست دینے کی صورت میں کربر 1996 ء میں انھیں شکست دینے والی اسٹیفی گراف کے بعد دوسری جرمن کھلاڑی بھی بن سکتی ہیں اور عالمی ٹینس اسوسی ایشن کی رینکنگ میں انھیں عالمی نمبر دو کا مقام حاصل ہوسکتا ہے ۔ آل انگلینڈ کلب کے سیمی فائنل مقابلے میں کامیابی کیلئے وینس گزشتہ 15 دن سے شائقین کی پسند تھیں جو سوجن اور جوڑوں میں درد کے عارضہ سے صحتیابی کے ساتھ چھ سال میں پہلی مرتبہ کسی گرینڈ سلام کے چار ابتدائی مقابلوں میں کامیابی حاصل کی تھی ۔ وینس نے گزشتہ 16 سال کے دوران ومبلڈن کے تمام آٹھ سیمی فائنلس میں کامیابی حاصل کی تھی ۔

TOPPOPULARRECENT